کشمیر میں زبردست برف باری،چوتھے دن بھی جموں -سرینگر ہائی وے بند 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 24th January 2019, 12:22 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،24جنوری(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) جموں و کشمیر میں بھاری برفباری کے باعث چار روزسے مستقل جموں سرینگر نیشنل ہائی وے بند ہے۔اس کی وجہ سے سینکڑوں ٹرک شاہراہ پر کھڑے ہوئے ہیں۔ہائی وے کی بندش کی وجہ سے کچھ سیاح بہت پریشان تھے، جبکہ کچھ لوگوں نے سرنگ کے قریب برفباری سے لطف اندوز ہوکر موقع فائدہ اٹھایا۔دریں اثنا ٹرانسپورٹ ڈیپارٹمنٹ نے اپنی ٹیم کو صورتحال کا اندازہ کرنے کے لئے بھیجا ہے۔ٹرانسمیشن کے حکام کے حکام نے کہا کہ راؤنڈ ضلع میں دیہیڈ، پانٹال، مگروٹ اورکھونی نالا سمیت کچھ جگہوں پر لینڈسلائڈنگ کی وجہ سے ہائی ویز کو روک دیا گیا ہے۔وہیں ایک اور نقل و حمل کے افسر نے کہاکہ بنالل سیکٹر میں تازہ برفباری ہوئی ہے۔ہائی وے کے دیگر حصوں میں مسلسل بارش جاری ہے۔ایک ٹریفک کے اہلکار نے کہا کہ ہائی وے پر کسی قسم کی گاڑیوں کی نقل و حرکت کی اجازت نہیں ہوگی۔موسم میں بہتری کے بعد زمین سے برف کو ہٹا دیا جائے گا۔جموں و کشمیر کے جموں ڈویژن میں بارش ہوئی۔وہیں وادی میں کئی مقامات پر برفباری ہوئی۔موسمیاتی شعبہ کے مطابق بدھ شام سے موسم میں بہتری کا امکان ہے۔موسمیات کے شعبے کے ایک اہلکار نے کہا کہ جموں کے علاقے میں فعال مغربی افواج کے باعث جموں اور کشمیر میں، بارش اور برفباری گزشتہ 24گھنٹوں میں جموں کے ڈویژن میں ہوئی۔سرکاری افسر نے کہاکہ مغرب کی خرابی کا اثر منگل کو شام سے جمع ہونا شروع ہو گا اور کل سے موسم میں بہتری آسکتی ہے۔سرینگر وادی میں کم از کم درجہ حرارت 0.2ڈگری سینٹی میٹر میں ریکارڈ کیا گیا تھا۔وہیں پہالگام اور گل مگر میں صفر سے نیچے 0.2ڈگری اندازہ کیاگیا۔

ایک نظر اس پر بھی

سیلاب اور بارش سے کیرالہ، کرناٹک، مہاراشٹر وغیرہ بے حال، اَب دہلی پر منڈلایا خطرہ

ہریانہ کے ہتھنی كنڈ بیراج سے گزشتہ 40 برسوں میں سب سے زیادہ آٹھ لاکھ سے زیادہ کیوسک پانی جمنا میں چھوڑے جانے کے بعد دہلی اور ہریانہ میں دریاکے کنارے کے آس پاس کے علاقوں میں سیلاب کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے اور اگلے 24 گھنٹے انتہائی سنگین بتائے جا رہے ہیں۔