پیرس میں دہشت گردی، داعش نے ذمہ داری قبول کرلی;مسلح شخص کی فائرنگ سے پولیس اہلکار ہلاک سمیت دو زخمی

Source: S.O. News Service | Published on 21st April 2017, 5:05 PM | عالمی خبریں |

پیرس،21اپریل(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)فرانس کے دارالحکومت پیرس میں حکام کے مطابق مسلح حملہ آور کی فائرنگ سے پولیس کا ایک اہلکار ہلاک اور دو زخمی ہو گئے ہیں۔ شدت پسند گروہ ’داعش‘ نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔پیرس کے مقبول تفریحی وکاروباری مقام شانزے لیزے میں فائرنگ کرنے والا مشتبہ حملہ آور بھی مارا گیا ہے۔شانزے لیزے کے کاروبای مرکز میں ہونے والی یہ فائرنگ، جس میں حملہ آور بھی ہلاک ہوا، فرانس کے صدارتی انتخابات سے محض چند روز پہلے ہوئی ہے۔فرانس کی پولیس اور وزارت داخلہ نے کہا ہے کہ جمعرات کی شام مرکزی پیرس میں فائرنگ کے واقعہ میں ایک پولیس اہل کار ہلاک اور دو افراد زخمی ہو گئے۔داعش کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ فرانس میں حملہ اس کے ایک بیلجین سے تعلق رکھنے والے جنگجو نے کیا ہے جس کا نام ابو یوسف بیلی جینی بتایا گیا ہے۔عینی شاہدین نے بتایا کہ ایک شخص نے کار سے نکلنے کے بعد اچانک مشین گن سے فائرنگ شروع کر دی۔پولیس کے ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ اس مقام کے قریب واقع ایک اور جگہ پر بھی حملہ آور نے گولیاں چلائیں۔فرانس کی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ یہ کہنا بہت قبل از وقت ہوگا کہ اس حملے کا مقصد کیا تھا لیکن یہ واضح ہے کہ پولیس اہل کاروں کو دیدہ دانستہ نشانہ بنایا گیا۔فرانس کے پراسیکیوٹرز کا کہنا ہے کہ انسداد دہشت گردی فورس کا ایک اہل کار زخمی ہوا ہے۔
 

ایک نظر اس پر بھی

جرمنی: میونخ میں چاقو سے حملہ، 4 افراد زخمی

جرمنی میں پولیس نے ہفتے کے روز اعلان کیا ہے کہ میونخ شہر میں چاقو سے وار کر کے چار افرد کو زخمی کر دیا گیا۔پولیس کا کہنا ہے کہ نامعلوم شخص کی جانب سے کیے جانے والے حملے کی وجوہات ابھی تک معلوم نہیں ہو سکیں۔

کرکوک پر کنٹرول کے باوجود متنازع علاقوں کی حیثیت تبدیل نہیں ہوئی: امریکا

امریکی وزارت خارجہ نے شمالی عراق میں پرشدد واقعات پر اپنی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے عراقی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ کرکوک کے نزدیک اپنی نقل و حرکت پر روک لگائے جو بغداد اور عراقی کردستان کی حکومتوں کے درمیان متنازع علاقہ ہے۔

نئی امریکی پابندیاں ایران اور حزب اللہ کی راہ دیکھ رہی ہیں

امریکی ایوانِ نمائندگان میں ریپبلکن رہ نماؤں نے انکشاف کیا ہے کہ آئندہ چند روز میں ایوان میں ایرانی بیلسٹک میزائل پروگرام اور تہران نواز لبنانی ملیشیا حزب اللہ پر نئی پابندیاں عائد کرنے کے لیے رائے شماری ہو گی۔