وسیم رضوی کی نئی پارٹی بنانے پر بولے۔اقبال انصاری ،نہیں جڑے گا ایک بھی مسلمان

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 15th May 2018, 11:00 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،15؍مئی ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا ) شیعہ وقف بورڈ کے چیئرمین سید وسیم رضوی کی نئی پارٹی بنانے کے معاملے میں منگل کو بابری مسجد معاملے کے مدعی اقبال انصاری نے کہا کہ بابری مسجد معاملے میں ان کے بیانوں کو لیکر مسلمان اب پہچان چکا ہے۔مسلمان وسیم رضوی کی پارٹی سے نہیں جڑے گا اور نہ ہی شیعہ قوم ہی ان کی پارٹی سے جڑے گی۔اقبال انصاری نے وسیم رضوی کو چیلنج کرتے ہوئے کہا کہ ان کی نئی پارٹی انڈین عوامی لیگ ایک چیئرمین بھی بنادیں تو وہ سیاست چھوڑ دیں گے۔

اقبال انصاری نے وسیم رضوی پر الزام لگاتے ہوئے کہا کہ وہ قوم کے غدار ہیں۔ہم قوم کے غدار نہیں ہیں۔ہندستان میں ہندو ہے مسلمان ساتھ۔ساتھ رہتا ہے اور ساتھ جیتا ہے لیکن وسیم رضوی جیسے لوگ بابری مسجد پر سیاست کرتے ہیں۔

بتادیں کہ شیعہ مسلمانوں کی الگ نیشنل پارٹی بننے سے طے ہے کہ مسلمانوں میں بھی اب دو الگ گروپوں کی ووٹوں کی تقسیم ہوگی۔دہلی کے اسلامک کلچرل سینٹر میں پارٹی کا رسمی اعلان کرتے ہوئے وسیم رضوی نے بتایا تھا کہ اپنی ہی قوم میں دوئم درجے کے اخلاق مایس ہو کر انہوں نے اس پارٹی کی شروعات کی ہے۔اس سے پارٹی کے ذریعے شیعہ مسلمانوں کے حق کی لڑائی لڑی جائے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

پروٹوکول توڑنے میں مودی نے عمران سے مقابلہ کیا، سفارتی ناکامی پر جواب دیں: کانگریس

کانگریس نے سعودی عرب کے شہزادہ (ولی عہد) محمد بن سلمان کا پروٹوکول سے الگ جاکرخوش آمدید کئے جانے کو لے کر بدھ کو وزیر اعظم نریندر مودی پر حملہ بولا اور الزام لگایا کہ پروٹوکول توڑنے میں مودی تو گویا پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کے ساتھ، جیسے مقابلہ کر رہے ہیں۔

پلوامہ حملہ: اب آندھرا پردیش کے وزیراعلیٰ چندرا بابو نائیڈو نے مودی حکومت کو گھیرا، کہا، قومی سلامتی خطرے میں ہے

پلوامہ دہشت گردانہ حملے کو لے کر پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کے بیان پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے آندھرا پردیش کے وزیراعلیٰ این چندرا بابو نائیڈو نے مرکز کی مودی حکومت پر نشانہ لگایا ہے۔

این سی ڈی آرسی نے آپریشن کے دوران لاپرواہی برتنے والے ڈاکٹر متاثرہ خاندان کو 2.7 لاکھ روپے ادا کرنے کا حکم دیا

قومی صارفین تنازعہ سراغ رساں کمیشن(این سی ڈی آرسی) نے آپریشن کے دوران لاپرواہی کی وجہ سے ایک خاتون کی موت کے معاملے میں تین ڈاکٹروں کو متاثر خاندان کو پر 2.7 لاکھ روپے ادا کرنے کا حکم دیا ہے۔