کوئی صورت نظر نہیں آتی !

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 16th November 2016, 4:05 PM | مہمان اداریہ |

کوئی اور بحران ہوتا تو ممکن تھا کہ عوام پر اتنا اثر انداز نہ ہوتا جتنا کہ نوٹوں کا بحران اثر انداز ہورہا ہے۔ جب عوام کے ہاتھوں میں پیسہ ہی نہیں ہوگا تو کس بازار میں رونق رہے گی اور کون سی انڈسٹری چلے گی ؟ ہمارے خیال میں مودی حکومت نے اثرات اور نتائج پر غور کئے بغیر اس منصوبے کو نافذ کردیا ہے۔ لیکن اب جبکہ عوامی پریشانیاں اظہر من الشتمس ہیں، وزیر اعظم ، عوامی مسائل اور مصائب اور ان سے پیدا شدہ بے چینی کو سمجھے بغیر بیانات دے رہے ہیں۔ 

اطلاعات کے مطابق وزیر اعظم نے اپنی حکومت اور پارٹی کے اراکین سے کہا ہے کہ وہ اپنے دفاع کی کوشش نہ کریں بلکہ خود کو اس اعتماد کے ساتھ پیش کریں کہ ’’نوٹ بندی ‘‘ بہتری مستقبل کیلئے ہے ۔ بہتر مستقبل کی اُمید کس برتے پر کی جائے یہ اُنہوں نے نہیں بتایا لیکن اظہار اعتماد کا حربہ وہ خود بھی آز مارہے ہیں۔ اُن کا یہ جملہ کہ ’’غریب چین کی نیند سورہا ہے او امیر پریشان ہے، نیند کی گولیاں کھانے پر مجبور ہے‘‘ زمینی حقائق کو خاطر میں لائے بغیر خالی خولی اعتماد ظاہر کرنے کے مترادف ہے۔ اس وقت ملک میں کوئی غریب یا عام آدمی ایسا نہیں جو چین کی نیند سورہا ہو۔ دکاندار پریشان گاہک پریشان، بینک ملازمین پریشان بینک صارفین پریشان ، مریض پریشان اسپتال کا عملہ پریشان وغیرہ کسی کو راحت نہیں ہے۔ ہر شخص حکومت کے فیصلے کی مذمت ہی کررہا ہے۔ اس کے باوجود وزیر اعظم نجانے کس رپورٹ کی بنیاد پر غریب آدمی کو مطمئن اور امیر کو فکر مندر قرار دے رہے ہیں۔ ’’کڑک چائے‘‘ غریبوں کو پسند ضرور ہے لیکن نوٹ بندی کا ’’کڑک ‘‘ فیصلہ ان کے گلے کے نیچے نہیں اُتر رہا ہے۔ ایسا لگتا ہے وزیر اعظم کسی اور ملک کی کہانی سنارہے ہوں۔ ہندوستان کی کہانی تو ایسی نہیں ہے۔ یہاں تو اے ٹی ایم اور بینکوں کی طویل قطاریں ، جو پانچوں چھٹے دن بھی کم ہونے کا نام نہیں لے رہی ہیں، اُس داستان غم کی طرح ہے جس میں نئے نئے موڑ روزانہ آرہے ہیں اور جو ختم ہونے کے قریب بھی نہیں پہنچی ہے۔ 

پریشانی اور فکر مندی میں اضافہ اس لئے بھی ہورہا ہے کہ نوٹ بحران سے پیدا شدہ مسائل کے ختم ہونے کے آثار بھی دکھائی نہیں دے رہے ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ اے ٹی ایم کی قطاریں ابھی کئی ہفتے معمول بنی رہیں گی کیونکہ جاری شدہ نئے نوٹوں کیلئے اے ٹی ایم مشینوں میں تبدیلی ناگزیر ہے ۔ ملک بھر میں 2؍ لاکھ 2؍ ہزار اے ٹی ایم ہیں جہاں کے 4؍ لاکھ ٹرے اور کیسیٹ بدلنے ضروری ہیں کیونکہ 5؍ سو اور 2؍ ہزار کے نئے نوٹ سائز میں سابقہ نوٹوں سے مختلف ہیں۔ اے ٹی ایم میں نصب مشینوں میں وہ ٹرے اور کیسیٹ نہیں ہیں جو نئے نوٹوں کے مواقف ہوں۔ کب ان مشینوں میں یہ انتظام ہوگا یہ کہنا مشکل ہے کیونکہ اس عمل کی انجام دی کیلئے صرف 3؍ ہزار انجینئر ہیں۔ ہرانجینئر رات دن مصروف کار رہے تب بھی آئندہ کئی ماہ تک اے ٹی ایم مشینوں کا نئی نوٹوں کے موافق ہوجانا ممکن نہیں۔ یہ مشینیں کسی فیکٹری میں رکھی ہوئی نہیں بلکہ پورے ملک میں پھیلی ہوئی ہیں۔ انجینئروں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ ، ایک گاؤں سے دوسرے گاؤں اور ایک شہر سے دوسرے شہر سفر کرنا پڑیگا۔ مختصر یہ کہ پریشانی کے دن محدود نہیں لا محدود ہیں ۔ اس دوران عام آدمی تو ہلکان ہوگا ہی، مارکیٹس کا چہرا بھی اُترا ہوا ملے گا ، فیکٹریوں کی نبض بھی سست ہوجائیگی ، لین دین اور خرید و فروخت کی محفلیں بھی ویران رہیں گی ، سماجی تقریبات کی رونقیں بھی ماند پڑ جائینگی اور یہ سب کچھ محض اس لئے ہوگا کہ نوٹ بندی کا فیصلہ عوامی دشواریوں کو سمجھے بغیر قطعی یک رُخے انداز میں کیا گیا ہے۔ ضرورت ہے کہ حکومت کو اس کی غلطی کا احساس دلایا جائے۔ دیکھنا ہوگا کہ آج پارلیمنٹ میں اپوزیشن کتنے دم خم کا مظاہر ہ کرتی ہے ۔

ایک نظر اس پر بھی

گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس کے بعد مرکزی حکومت کو دھمکی ۔۔۔۔۔ اعتماد کا اداریہ

گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس میں مرکزی حکومت کو دھمکی دی گئی ہے کہ اگر وہ 2023تک ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر نہیں کروائے گی تو ہندو تنظیمیں خود وہاں مندر تعمیر کرلیں گے کوئی قانون یا عدالت کا پاس و لحاظ نہیں رکھا جائے گا

جانوروں کی فروخت پر پابندی کے نام پر تنازعہ کھڑاکرنے کی ضرورت نہیں تھی (پرجا وانی کا اداریہ۔۔۔کنڑا سے ترجمہ)

ذبح کرنے کے مقصد سے گائے، بیل، سانڈ، بھینس ، چھوٹے بچھڑے اور اونٹوں کو جانوروں کے میلے اور مارکیٹ میں بیچنے پرمرکزی حکومت کی طرف سے لگائی گئی  پابندی سے ایک بڑا تنازعہ کھڑا ہوگیا ہے۔یہ پابندی اصل میں کوئی مناسب تدبیر ہی نہیں ہے۔ بی جے پی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کو گؤ ...

ہوشیار، خبردار۔۔۔۔۔۔۔از قلم : مدثر احمد

جب ہندوستان کی سرزمین پر مغل ، نواب اور نظام حکومت کررہے تھے اس وقت انکے پاس جو مال و دولت اور خزانے تھے انہیں اگر وہ صحیح طریقے سے استعمال کرتے تو آج کے مسلمان کسی کی مدد کے طلبگار نہ ہوتے اور مسلمان قوم ایک عزت دار قوم بن کر اس ملک میں دوسروں پر حکومت کرتی یا کم از کم حکومتیں ...

طلاق: مسلمانوں کا ایجنڈ ا کیا ہو؟ کنڑا ہفتہ وار’’ سنمارگہ‘‘ میں ایڈیٹر عبدالقادر کوکیلا کی تحریر

ملک بھر میں جاری طلاق کی بحث کا سدباب دوطریقوں سےکرسکتےہیں۔ پہلا یہ ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی مرکزی حکومت پر پورا الزام دھر کر خاموش ہوجائیں۔ دوسرا انہی موضوعات کو بنیاد مان کر مسلم ملت کی داخلی ترقی کے لئے حکمت عملی ترتیب دیں ۔ طلاق کے گرد گھومنے والی ٹی وی ...

جاسوسی اپنے ملک کے لئے؟ .... از : ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز

پاکستان کی فوجی عدالت نے ہندوستان کے سابق نیوی کمانڈر کلبھوشن سدھیر یادو کو سزائے موت سنائی ہے۔ جس پر ہندوستان کا شدید ردعمل فطری ہے۔ خود پاکستانی میڈیا نے فوجی عدالت کے اس فیصلے کو بعید از قیاس اور ہند۔پاک کشیدگی میں مزید اضافے کا سبب قرار دیا۔ کلبھوشن کی سزا پر عمل آوری کب ...