ہندوستان نے مسلسل نویں سیریز جیتی، عالمی ریکارڈ کی برابری کی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 7th December 2017, 12:42 AM | اسپورٹس |

نئی دہلی، 7؍دسمبر(ایجنسی)سری لنکا نے دھننجے ڈيسلوا (119 ریٹائرڈ ہرٹ) کی ذمہ دارانہ اننگز کی بدولت ہندوستان کے خلاف دوسرا اور آخری کرکٹ ٹسٹ بدھ کو یہاں ڈرا کرا لیا جبکہ دنیا کی نمبر ایک ٹیم ہندوستان نے مسلسل نویں ٹسٹ سیریز جیتنے کے ساتھ عالمی ریکارڈ کی برابری کر لی۔ ہندوستان نے تین میچوں کی یہ سیریز ایک۔صفر سے اپنے نام کی۔ کولکتہ میں پہلا اور دہلی میں تیسرا ٹیسٹ ڈرا رہا ہے جبکہ ہندوستان نے ناگپور میں دوسرا ٹیسٹ اننگز اور 239 رنز سے جیتا تھا۔ ہندوستان نے اس کے ساتھ ہی مسلسل نویں ٹسٹ سیریز جیت لی اور آسٹریلیا کے 2005 سے 2008 تک مسلسل نو یں سیریز جیتنے کے عالمی ریکارڈ کی برابری بھی کر لی۔ ہندوستان کا یہ سفر ۲۰۱۵ میں سری لنکا کو اسی کی سرزمین پر دو۔ایک سے شکست دینے کے ساتھ شروع ہوا تھا۔ ہندوستان نے اس کے بعد جنوبی افریقہ کو تین۔صفر، ویسٹ انڈیز کو دو۔صفر نیوزی لینڈ کو تین ۔صفر ، انگلینڈ کو چار۔صفر ، بنگلہ دیش کو ایک ۔صفر ، آسٹریلیا کو دو۔ایک اور سری لنکا کو تین ۔صفر سے شکست دی۔ہندوستان نے اپنی موجودہ سیریز میں ایک ۔صفر سے جیت حاصل کی۔ ہندوستان کے پاس اب جنوری سے شروع ہونے والے جنوبی افریقہ کے چیلنجنگ دورہ میں نیا عالمی ریکارڈ بنانے کا موقع رہے گا۔

ہندوستان نے سری لنکا کے سامنے جیت کے لئے 410 رن کا ہدف رکھا تھا۔ سری لنکا نے کل کے تین وکٹ پر 31 رن سے آگے کھیلنا شروع کیا تھا اورڈي سلوا کی قابل تعریف اننگز کی بدولت ٹیم نے میچ کو ڈرا کرا یا۔ سری لنکا نے میچ کے ڈرا پر ختم ہونے تک 103 اوور میں پانچ وکٹ پر 299 رن بنائے۔ سری لنکا کی جانب سے ڈيسلوا نے عمدہ کرکٹ کھیلتے ہوئے 119 رنز کی یادگار اننگز کھیلی۔ حالانکہ اس کے بعد كریمپ کی وجہ سے انہیں میدان سے باہر جانا پڑا. لیکن اس وقت تک وہ اپنی ٹیم کو محفوظ پوزیشن میں پہنچا چکے تھے۔ ڈيسلوا نے 219 گیندوں پر ناٹ آوٹ 119 رن میں 15 چوکے اور ایک چھکا لگایا۔ کپتان دنیش چنڈیمل (36) کے ساتھ پانچویں وکٹ کے لیے 112 رنز کی اہم شراکت کی۔ اپنا پہلا ٹیسٹ کھیل رہے روشن سلوا نے ناٹ آؤٹ 77 اور نروشن ڈكلویلا نے ناٹ آؤٹ 44 رنز کی شاندار اننگز کھیلی۔ دونوں نے چھٹے وکٹ کی ناٹ آوٹ شراکت میں 27 اوور میں 94 رن جوڑے۔

کل سری لنکا کے تین وکٹ جلد حاصل کرنے والے ہندوستانی گیند بازوں کو آخری دن مایوسی ہاتھ لگی اور پورے دن میں وہ صرف دو وکٹ ہی حاصل کرسکے ۔ناٹ آؤٹ بلے باز اینجلو میتھیوز (ایک) کو لیفٹ آرم اسپنر رویندر جڈیجہ نے آؤٹ کیا جبکہ چنڈیمل (36) کو اشون نے بولڈ کیا۔ ہندوستان نے چائے کے وقفہ سے ٹھیک پہلے 81 ویں اوور میں دوسری نئی گیند لی لیکن اس کا سری لنکائی بلے بازوں روشن سلوا اور نروشن ڈكویلا پر کوئی خاص اثر نہیں ہوا۔ اپنا ڈیبو میچ کھیل رہے روشن سلوا نے جو پہلی اننگز میں اپنا کھاتہ بھی نہیں کھول سکے تھے ، دوسری اننگز میں نصف سنچری مکمل کی۔ وہ ڈیبو میچ میں صفر اور نصف سنچری بنانے والے چوتھے کھلاڑی بنے۔سری لنکا نے صبح تین وکٹ پر 31 رن سے آگے کھیلتے ہوئے لنچ تک اپنا اسکور چار وکٹ پر 119 رنز، چائے کے وقفہ تک پانچ وکٹ پر 226 رن اور میچ ختم ہونے تک پانچ وکٹ پر 299 رن پر پہنچایا۔ اس ڈرا میچ کے ساتھ ہندوستان کی فیروز شاہ کوٹلہ میدان پر گزشتہ 30 سال کی ناقابل تسخیر مہم برقرار رہی۔ ڈرا ہونے والے اس ٹیسٹ میچ کو آلودگی کے سبب سری لنکا کے کھلاڑیوں کے ماسک پہن کر میدان پر کھیلنے کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔ ہندوستان نے صبح کے سیشن میں میتھیوز کو جڈیجہ نے جلد ہی اپنا شکار بناکر انہیں اجنکیا رہانے کے ہاتھوں کیچ کرا یا۔سری لنکا کا چوتھا وکٹ 35 کے اسکور پر گرا۔ اگرچہ بعد میں پتہ لگا کہ یہ گیند نو بال تھی جسے امپائر نہیں دیکھ پائے۔ ۴۴ویں اوور میں جب جڈیجہ نے چوتھی گیند پر چنڈیمل کو بولڈ کیا لیکن امپائر نے نو بال چیک کی اور گیند نو بال نکلی۔ اس وقت سری لنکا کا اسکور 13 رن اور چنڈیمل کا اسکور 24 رنز تھا۔ لنچ کے بعد اشون نے چنڈیمل کو بولڈ کرکے اس شراکت کو توڑا۔چنڈیمل نے 90 گیندوں پر 36 رن میں دو چوکے لگائے۔ سری لنکا کا پانچواں وکٹ 147 کے اسکور پر گرا۔ اس وقت ہندوستان کو جیت کی امید نظر آنے لگی تھی لیکن ڈيسلوا کی بہترین اننگز نے ہندوستانی امیدوں پر پانی پھیر دیا۔ ڈي سلوا نے اپنی تیسری ٹیسٹ سنچری مکمل کی جس کی ہندوستانی کپتان وراٹ کوہلی اور روہت شرما نے بھی تعریف کی۔

گزشتہ 10 سال میں یہ پہلا موقع ہے جب کسی سری لنکائی بلے باز نے باہری ٹیسٹ کی چوتھی اننگز میں سنچری بنائی ہے۔ اس سے پہلے 2007 میں کمار سنگاکارا نے ہوبارٹ میں 192 رن بنائے تھے۔ ڈيسلوا نے اشون کو ان کی ہی گیند پر ایک موقع دیا تھا لیکن گیند ان کے ہاتھ سے چھوٹ گئی۔ اس وقت ڈيسلوا کا اسکور 110 رنز اور سری لنکا کا اسکور 175 رنز تھا۔نئی گیند کا وقت نزدیک آتے دیکھ گیند بازوں کو آرام دینے کے لیے مرلی وجے نے 75 واں اور کپتان وراٹ نے 76 واں اوور بھی کیا۔ جب ٹیم کا اسکور 205 رنز تھا تب ڈيسلوا كریمپ کی وجہ سےمیدان سے باہر چلے گئے۔ ہندوستان نے 81 ویں اوور میں دوسری نئی گیند لی۔ چائے کے وقفہ کے وقت سری لنکا 226 رنز بنا چکا تھا اور روشن 38 اور ڈكویلا 11 رن پر ناٹ آؤٹ تھے۔ دونوں نے آخری سیشن میں ہندوستانی گیند بازوں کو کوئی موقع نہیں دیا اور سری لنکا کوعزت افزا ڈرا دلایا۔ روشن سلوا نے 154 گیندوں پر ناٹ آوٹ 74 رن میں 11 چوکے لگائے جبکہ ڈكویلا نے 72 گیندوں پر ناٹ آوٹ 44 رن میں چھ چوکے لگائے۔ میچ میں سری لنکا کا آخری اسکور پانچ وکٹ پر 299 رنز رہا۔ ہندوستانی گیند بازوں میں جڈیجہ 38 اوور میں 81 رن پر تین وکٹ لے کر سب سے کامیاب رہے۔ محمد سمیع کو 15 اوور میں 50 رن پر ایک وکٹ اور اشون کو 35 اوور میں 126 رن پر ایک وکٹ ملا۔

انڈین ٹیم کے کپتان وراٹ کوہلی سری لنکا کے خلاف بدھ کو یہاں فیروز شاہ کوٹلہ میدان میں ڈرا ہوئے تیسرے میچ میں مین آف دی میچ کے ساتھ ساتھ مین آف دی سیریز بھی بن گئے ہیں۔ انڈین کرکٹ کنٹرول بورڈ (بی سی سی آئی) کے قائم مقام صدر سی کے کھنہ نے وراٹ کو سیریز جیتنے پر فاتح ٹرافی پیش کی۔ وراٹ نے تیسرے ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں 243 رن اور دوسری اننگز میں 50 رن بنائے تھے۔ وراٹ نے سیریز میں تین سنچریوں سمیت کل 615 رن بنائے جس کے لئے انہیں مین آف دی سیریز کا ایوارڈ ملا۔ ان تینوں سنچریوں میں دو ڈبل سنچریاں بھی شامل ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

فخر زمان ڈبل سنچری بنانے والے پہلے پاکستانی بلے باز بن گئے

زمبابوے کے خلاف چوتھے ون ڈے میچ میں فخر زمان نے 200 رنز کی اننگ کھیل کر شاندار کارنامہ انجام دے دیا ہے اور ڈبل سینچری بنانے والے پاکستان کے پہلے کھلاڑی بن گئے ہیں، تاہم اس کے علاوہ پاکستان نے ون ڈے کرکٹ میں زمبابوے کو 400 رنز کا ہدف دے کر اپنا اب تک کا سب سے بڑا ٹوٹل بھی بنا ڈالا ہے۔

فرانس کے سرپر فیفا ورلڈ کپ کا تاج

ورلڈ کپ 2018ء کا خطاب فرانس نے آج یہاں لیزینگی اسٹیڈیم میں کھیلے گئے مقابلے میں کروشیا کو 4-2گول سے ہراکر جیت لیا۔ فائنل میں سنسنی خیز مقابلے کے بعد فرانس پر ولڈ کپ کا تاج سجا جبکہ تاریخ میں پہلی بار فائنل کھیلنے والی کروشین ٹیم کو شکست ہوئی تاہم گراؤنڈ میں کھیل کے شائقین کی جانب ...

سچن ، سہواگ کو پیچھے چھوڑ دیتا یہ پاکستانی کرکٹر، لیکن اب لگنے والی ہے پابندی

پاکستان کے سابق آل راونڈرعبد الرزاق نے ابھی حال ہی میں بیان دیا تھا کہ سلامی بلے باز احمد شہزاد بہت باصلاحیت ہیں اوروہ سہواگ اور سچن تندولکر جیسے عظیم بلے بازوں کو بھی پیچھے چھوڑنے کی صلاحیت رکھتے ہیں،