ہندوستان کو مسلم آبادی کی قدر کرنی چاہئے اور ان کا پورا خیال رکھنا چاہئے :اوباما

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 1st December 2017, 11:55 PM | ملکی خبریں | عالمی خبریں |

نئی دہلی ،یکم ؍دسمبر (ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا)امریکہ کے سابق صدر براک اوباما نے کہا ہے کہ ہندوستان کو اپنی مسلم آبادی کی قدر کرنی چاہئے اور ان کا پورا خیال رکھنا چاہئے جو خود کو ملک سے وابستہ ہندوستانی مانتی ہے۔ اوباما نے یہ باتیں ایچ ٹی لیڈر شپ سمٹ میں کہیں ۔ انہوں نے کہا کہ سال 2015 میں بطور صدر ہندوستان کے آخری دورے پر بھی انہوں نے وزیر اعظم مودی کے ساتھ بند کمرے میں ہوئی میٹنگ میں مذہبی رواداری کی ضرورت اور کسی بھی مذہب کو ماننے کے حق پر زور دیا تھا۔سال 2009 سے 2017 تک امریکہ کے صدر رہے اوباما نے اپنے دورہ کے آخری دن بھی اسی طرح کا تبصرہ کیا تھا ۔ ہندوستان سے جڑے ایک سوال کے جواب میں اوباما نے ملک کی بڑی مسلم آبادی کا ذکر کیا ، جو کامیاب ، جڑا ہوا اور خود کو ہندوستانی مانتی ہے۔سابق امریکی صدر نے کہا کہ بدقسمی سے کچھ دیگر ممالک کے ساتھ ایسا نہیں ہے ۔ پاکستان سے دہشت گردی کے فروغ سے وابستہ ایک سوال کے جواب میں اوباما نے کہا کہ ہمیں اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ملا کہ پاکستان کو اوسامہ بن لادن کی موجودگی کے بارے میں کچھ بھی معلوم تھا ، لیکن ہم نے اس معاملہ پر یقینی طو رپر غور کیا تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کوپاکستان جیسے بیانات دینے پربہارمیں نقصان ہوچکاہے:اسدالدین اویسی

حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ و صدر کل ہند مجلس اتحاد المسلمین بیرسڑاسد الدین اویسی نے کہا ہے کہ گجرات کے انتخابی جلسوں میں جس طرح کی زبان وزیراعظم نریندر مودی استعمال کر رہے ہیں، اس پر ان کو کوئی تعجب نہیں ہوا ہے۔

’’بھگوا غنڈہ گردی ملک کی سلامتی کے لیے سب سے بڑا خطرہ ‘‘: آل انڈیا امامس کونسل

ہندوتواوادی اور فسطائی غنڈے نے پھر سے ملک کو شرمسار کر دیا۔ ایک نہتے اور بے قصور مزدور افراز الاسلام کو مزدوری دینے کے بہانے بلاکر پھاوڑے سے قتل کر دینا اور پھر پٹرول چھڑک کر آگ لگا کر جلا دینا ملک کے لیے ایک انتہائی شرمناک معاملہ ہے۔

تبدیلی کی صورت میں سعودی عرب سے بہتر تعلقات ممکن:حسن روحانی

ایران کے صدر حسن روحانی کا کہنا ہے کہ سعودی عرب کے ساتھ تعلقات استوار کیے جا سکتے ہیں۔ ایرانی صدر نے آج نشر کی جانے والی اپنی تقریر میں کہا کہ اگر یمن پر بمباری کا سلسلہ ترک کرنے کے ساتھ ساتھ اسرائیل کے ساتھ اپنے مبینہ تعلقات کو ختم کر دے،