بھٹکل میں زائد منافع کالالچ دے کر 100کروڑ سے زائد رقم کی دھوکہ دہی کا الزام : کمپنی مالکان کے گھروں کا گھیراؤ اور احتجاج

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 14th October 2018, 11:15 PM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بھٹکل:14/اکتوبر(ایس اؤ نیوز) شہر کے آزاد نگر میں واقع فلالیس نامی کمپنی کے مالکان  پر سو کروڑ سے زائد رقم لے کر فرار ہونے کا الزام عائد کرتے ہوئے  سینکڑوں لوگوں نے آج اُن  کے مکانوں  کا گھیراو کیا اور اپنی رقم واپس دینے کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاج کیا۔  احتجاجیوں کا کہنا تھا کہ   فلالیس نامی جعلی کمپنی کی شروعات کرکے اللہ کےنام پر بڑی بڑی باتیں کرتے ہوئے عوام کا اعتماد حاصل کیا گیا پھر  100کروڑ  سے زائد رقم لے کر کمپنی کے مالکان فرار ہوگئے۔

احتجاجیوں نے اخبارنویسوں کو بتایا کہ وثیق ، عمران  ، غفران، انضمام اور عبداللہ نامی افراد نے ’نیو فلالیس ٹریڈ لنک (فیس کریم ) کمپنی کا افتتاح کیا تھا، پھر  زائد منافع کا لالچ دے کر عوام کو شراکت داری کی ترغیب دی گئی  جس پر بھروسہ کرتے ہوئے عوام نے اپنی سخت محنت کی کمائی  اس میں لگا دی تھی ۔گھر کے سامنے جمع بھیڑ نے  ان لوگوں پر الزامات کی بوچھاڑ کرتے ہوئے  بتایا کہ ان لوگوں نے  غریب  عوام  کی رقم لے کر فرار ہوگئے ہیں ۔

عوام نے بتایا کہ  سودی کاروبار سے مکمل اجتناب کرنے والے مسلمانوں سے ملاقات کرتے ہوئے کمپنی مالکان نے انہیں اعتماد دلایا تھا کہ ہم نے جماعت کی منظوری لے کر ہی کمپنی کی شروعات کی ہے۔ 12سے 17فی صد منافع کی تقسیم کرنے کااللہ کے نام پر وعدہ کیا  جس پر بھروسہ کرتے ہوئے ہم نے  گھرمیں جتنی بھی رقومات تھیں سب  کمپنی میں جمع کرادیں۔ احتجاجیوں کے مطابق بھٹکل میں عوام کی طرف سے 100کروڑ سے بھی زائد رقم جمع کی گئی ہیں۔

احتجاجیوں نے بتایا کہ شروعات میں ایک دومہینے تھوڑی رقومات عوام میں تقسیم کی گئی تھی مگر بعد  میں کمپنی مالکان اچانک  غائب ہوگئے۔ احتجاجیوں نے بتایا کہ سوشیل میڈیا کے ذریعے  ان کی جانب سے پیغامات آرہے تھے کہ اُنہیں   آج نہیں تو کل ، کل نہیں تو پرسوں تمام لوگوں کی رقومات واپس دی جائے گی، مگر آج اور کل کا  بھروسہ دلاتے دلاتے آج  7مہینے گزرگئے ہیں ۔ بعض  احتجاجیوں  نے یہ بھی بتایا کہ انہیں اب مالکان نے صاف طور پر بتادیا ہے کہ  پولس بھی ان کےساتھ ہے، اس لئے رقم اب واپس نہیں لوٹائی جائے گی۔ وہ ہمیں اب دھمکی دے  رہے ہیں کہ  تم کو جو کرنا ہے، کرو، اب رقم واپس نہیں کی جائے گی۔

احتجاجیوں نے بتایا کہ ہم لوگ اب سخت  مشکلات میں گھر گئے ہیں ، لہٰذا ہمیں ہماری رقم واپس لوٹائی جائے۔ حالات بدلتے دیکھ کرسرکل پولس انسپکٹر گنیش اپنے عملے کے ساتھ جائے وقوع پر پہنچے اور  حالات کو قابومیں کیا۔ اس سلسلے میں سی پی آئی گنیش نے بتایا کہ کمپنی کے  رجسٹریشن کی ابھی تک تصدیق نہیں ہوئی ہے۔اگرعوام رقم ادا کرنے کے  دستاویزات کے ساتھ پولس تھانہ میں شکایت درج کرتے ہیں  تو ہم کیس درج کرنے تیار ہیں۔

ایک طرف عوام فلالیس نامی کمپنی کے مالکان  کے خلاف اپنے غصے کا اظہار کرتے ہوئے اُن کے مکان میں گھس رہے تھے، تو وہیں گھر پر موجود خواتین بے حد پریشان تھیں، خواتین نے احتجاجیوں کو سمجھانے بجھانے کی کافی کوشش کی، مگر احتجاجیوں کے ریلے کو وہ روکنے میں ناکام رہیں، مگر بعد میں پولس کی مداخلت کے بعد احتجاجیوں کو  وہاں سے ہٹادیا گیا۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے  گھر کی ایک خاتون نے ساحل آن لائن کو بتایا کہ   ہم نے کبھی کسی کو یہ نہیں بتایا کہ ہم لوگ اُن کی رقم واپس نہیں لوٹائیں گے،  خاتون نے یقین دلایا کہ جب تک اُن کے بھائی زندہ ہیں، وہ خوب محنت کرکے عوام کی رقومات کو واپس لوٹائیں گے، لیکن احتجاج کرنے والی   خواتین ہمارے گھر میں آکر ہم پر ٹارچر کریں گی  تو ہم کہاں سے اُن کی رقم واپس لاکر دیں گے۔خاتون نے مزید بتایا کہ ہم یہ بات جانتے ہیں کہ غریب ، مجبوراور محنت کش لوگوں نے   اپنی کمائی اس کمپنی میں  انویسٹ کیا ہے، ہمارے بھائیوں کا ارادہ کسی کو دھوکہ دینے کا نہیں تھا، مگر اُن کی  ٹیم میں شامل  ایک شخص  کے دھوکہ دینے سے   وہ  مشکلات میں گھر گئے ہیں البتہ  ہمارے بھائی برابر اُس شخص کے پیچھے لگے ہوئے ہیں اور رقم واپس حاصل کرنے اپنا  پورا زور لگارہے ہیں۔ خاتون نے عوام سے اپیل کی کہ وہ  برائے کرم اُن کے گھروں میں آکر ہنگامہ نہ مچائیں، ہم خود آپ کی مشکلات سے واقف ہیں، مگر ہم خواتین چونکہ کمانہیں سکتی، آپ   لوگوں کی مدد کرنے سے قاصر ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

کاروار: لاپتہ ماہی گیروں کا معاملہ۔ ڈپٹی کمشنر کے دفتر میں خصوصی اجلاس؛ بنگلہ دیشیوں کو ملازم نہ رکھنے ڈپٹی کمشنر کی تاکید

کشتی سمیت لاپتہ ماہی گیروں کے مسئلے پر ایک خصوصی جائزاتی میٹنگ ضلع شمالی کینرا کے ڈپٹی کمشنر ایس ایس نکول کے دفتر میں منعقد کی گئی، جس میں ماہی گیروں کے لیڈر، پولیس افسران اورتحقیقاتی ٹیم کے افسران شریک ہوئے۔ اس اجلاس میں ساحلی علاقے میں تحفظ اور سیکیوریٹی کے مسئلے پر بھی غور ...

ملیناڈو کراولی ریلوے لائن منصوبے پر جلد عمل درآمد کے لئے ریاستی وزیر اعلیٰ کمار اسوامی کا مرکزی حکومت سے تقاضہ

شیموگہ، شرنگیری، منگلورو جیسے علاقوں سے گزرنے والی ملیناڈو کراولی ریلوے لائن منصوبے پر جلد عمل درآمد کے لئے ریاستی وزیر اعلیٰ کمار ا سوامی نے مرکزی حکومت سے تقاضہ کیا ہے۔

ہبلی۔انکولہ ریلوے منصوبہ:سڑکوں پر احتجاج کرنے سے ریل آنے والی نہیں ہے۔ سپریم کورٹ کے فیصلے کا انتظار کیا جارہا ہے۔ اننت کمار ہیگڈے کا بیان

مرکزی وزیر اننت کمار ہیگڈے نے ہبلی۔انکولہ ریلوے منصوبے میں ہورہی تاخیر کے سلسلے میں کہا کہ اس میں کوئی سیاسی کھیل نہیں ہورہا ہے، بلکہ سپریم کورٹ نے اس منصوبے پر اسٹے لگا رکھاہے اس لئے عدالت کے فیصلے کا انتظار کیا جارہا ہے۔ اس تاخیر کے خلاف راستہ روکویا احتجاجی مظاہرے کرنے سے ...

بھٹکل میں ویلفئیر پارٹی آف انڈیا کے زیراہتمام قومی صدر کی آمد پر خطاب عام : مسلمان  جب تک حکمرانی میں شامل نہیں ہونگے کوئی مسائل حل نہیں ہونگے : قاسم رسول الیاس

آزادی کے 70سالوں بعد بھی مسلمان  سیاسی طور پر بے وزن ، بے وقعت اور پسماندگی کا شکار ہیں۔ جو کل تک اقتدار کے مالک تھےآج ملکی سیاست میں ان کاکوئی کردار نہیں ہے، اس کے برعکس پچھڑے طبقات، دلت، اچھوت ، او بی سی ایک سیاسی قوت کے طورپر ابھر کر اپنی طاقت منوانے میں کامیاب ہیں ان کی ایک ...

کاروار: بوٹ سمیت لاپتہ ہونے والے ماہی گیروں کے اہل خانہ کو گزربسر کے لئے ریاستی حکومت کی طرف سے فی کس ایک لاکھ روپے کی امداد

ضلع شمالی کینرا کے ایڈیشنل ڈی سی ڈاکٹر سریش ایٹنال نے بتایا ہے کہ ملپے بندرگاہ سے ماہی گیری کے لئے نکلنے کے بعد مہاراشٹرا کے حدودمیں لاپتہ ہونے والی سوورنا تریبھوجا ماہی گیر کشتی پر موجود 7مچھیروں کے اہل خانہ کو گزربسر کے لئے ریاستی حکومت کی جانب سے عبوری راحت کے طورپر فی کس ...

ملیناڈو کراولی ریلوے لائن منصوبے پر جلد عمل درآمد کے لئے ریاستی وزیر اعلیٰ کمار اسوامی کا مرکزی حکومت سے تقاضہ

شیموگہ، شرنگیری، منگلورو جیسے علاقوں سے گزرنے والی ملیناڈو کراولی ریلوے لائن منصوبے پر جلد عمل درآمد کے لئے ریاستی وزیر اعلیٰ کمار ا سوامی نے مرکزی حکومت سے تقاضہ کیا ہے۔

چیتے کی کھال فروخت کرنے کے دوران کنداپور میں بھٹکل کے پانچ افراد سمیت دس گرفتار

یہاں شاستری سرکل کے قریب غیر قانونی طورپر چیتے کی کھال فروخت کرنے کے الزام میں بینگلور کی سی آئی ڈی فوریسٹ یونٹ  نے دس افراد کو گرفتار کرلیا ہے جس میں پانچ کا تعلق بھٹکل، تین کا تعلق بیندور اور ایک ایک کا تعلق ، منڈگوڈ اور  ہوناورسے ہے۔ گرفتاری کی یہ واردات جمعہ کی دوپہر کو ...