ہوناور میں بھٹکل کے دو لوگوں پر حملہ کا معاملہ؛ دھرم رکشھنا ویدیکے کی پولس کو دھمکی؛ گرفتاریاں نہیں روکی گئیں تو ہوگا زبردست احتجاج

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 13th March 2018, 9:09 PM | ساحلی خبریں |

ہوناور 13؍مارچ (ایس او نیوز)کچھ روز قبل ہوناور کے کرکی ناکہ پر نام نہاد گؤ رکھشکوں کی بھیڑ نے بھٹکل کے دو نوجوانوں پر حملہ کیا تھا اور دونوں کو بری طرح زخمی کردیا تھا، جس پر کاروائی کرتے ہوئے پولس نے 150 لوگوں کے خلاف معاملات درج کئے تھے اور چار لوگوں کو گرفتار کیا تھا، اس ضمن میں پولیس کی کارروائیوں کے خلاف دھرم رکھشنا ویدیکے نے آواز اٹھائی ہے اور حملہ کے ملزمین کو گرفتار نہ کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر گرفتاریوں کا سلسلہ نہیں رُکا تو  عوام کی طرف سے زبردست احتجاج کیا جائے گا۔

خیال رہے کہ مذکورہ قاتلانہ حملے کے تعلق سے  پولیس مزید ملزمین کو تلاش کررہی ہے جو پولس کی گرفتاریوں سے بچنے کے لئے ہوناور سے فرار ہوگئے ہیں۔ مگر دھرم رکھشنا ویدیکے نامی تنظیم نے تحصیلدار کو میمورنڈم دیتے ہوئے  انتباہ دیا ہے کہ اگر اس حملے کے ملزمین کو گرفتار کرنے کا سلسلہ نہیں روکا گیا تو پھر زبردست عوامی احتجاج کیا جائے گا۔
میمورنڈم میں کہا گیا ہے کہ مادنگیری اور شیرالی میں چیک پوسٹ ہونے کے باوجودغیر قانونی طور پر یہاں سے گائیں اسمگل کی جارہی ہیں، جس سے شکوک و شبہات پیدا ہورہے ہیں۔ گائیں اسمگل کرنے والے شرپسندوں کے خلاف کارروائی کرنے کے بجائے اس واقعے سے تعلق نہ رکھنے والے بے قصور ہندو نوجوانوں پر سنگین الزامات کے ساتھ کیس داخل کرکے جیل میں بند کردیا گیا ہے۔اب اس کے خلاف عوام کے احتجاج کی طاقت کا مظاہرہ کرنا ضروری ہوگیا ہے۔

میمورنڈم میں یہ بھی درج ہے کہ گزشتہ کئی برسوں سے چلنے والا گائیں اسمگل کرنے کے   کاروبار  میں پچھلے کچھ عرصے سے ہندوؤں کی مخالفت کی وجہ سے  کچھ کمی آئی ہے۔ لیکن اب اس غیر قانونی سرگرمیوں  میں دوبارہ تیزی نظر آرہی ہے۔اس کے خلاف متعلقہ محکمہ جات کی طرف سے ان دیکھی کرنے پرکچھ نوجوان گائے کی رکھشا کے لئے آگے آتے ہیں۔ میمورنڈم میں ویدیکے کا کہنا ہے کہ عوام کی حفاظت پر مامور پولیس نے اپنا اعتبار کھو دیا ہے۔گزشتہ تین مہینوں سے معصوم لوگوں پر اس طرح کے مقدمات درج کرنا واقعی دہشت کا سبب بن گیا ہے۔جس کی پر زور مذمت کی جاتی ہے۔میمورنڈم میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ گرفتار معصوموں کو فوراً رہا کردینا چاہیے۔غیر قانونی  گایوں کی اسمگلنگ روکنے کے لئے پولیس کو سخت قدم اٹھانے چاہئیں۔

اس موقع پرہندوحامی تنظیموں کے قائدین جے ٹی پائی، ایم ایس ہیگڈے، رگھو پائی، وینکٹ رمن ہیگڈے، شری کلا شاستری(ضلع پنچایت رکن)، سبرامنیا شاستری، شیوراج میستا، ایس ٹی نائک، سنجیو شیٹھ، امیش سارنگ،لوکیش میستا، امیش میستا،گؤ پریوار کے کرشنا مورتی بھٹ شیوانی، وشویشورا بھٹ وغیرہ موجود تھے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل میں گائیوں سے بھری دو لاریوں پر حملے کے الزام میں گیارہ افراد گرفتار؛ کیاجانوروں کو بی جے پی لیڈر کے ڈیری فارم لےجایا جارہا تھا ؟

  تعلقہ کے مرڈیشور نیشنل ہائی وے پر کل رات ہوئی ہندو شدت پسند تنظیموں کے کارکنوں کی غنڈہ گردی کے واقعے کے بعد پولس متحرک ہوکر اب تک گیارہ لوگوں کو گرفتار کرنے میں کامیاب ہوگئی ہے، جبکہ دیگر حملہ آوروں کی تلاش جاری ہے۔

بھٹکل کے مرڈیشور میں جانوروں سے بھری دو لاریوں پر نام نہاد گئو رکھشکوں کا حملہ ؛ لاری ڈرائیور اور کلینر کی بری طرح پیٹائی

یہاں مرڈیشور نیشنل ہائی وے پر جانوروں سے بھری دو لاریوں کو روک کر  لاری ڈرائیور اور کلینر کی بری طرح پیٹائی کرتے ہوئے دونوں لاریوں میں زبردست  توڑ پھوڑ کرنے کی واردات پیش آئی ہے، جس کے بعد لاریوں پر موجود  جانوروں کو راستے پر ہی آزاد چھوڑ کر  اُنہیں بھگائے جانے کی بھی اطلاع ...

بی جے پی نے جھوٹ اور غلط بیانی سے ہم کو شکست دی ہے: پرمود مادھو راج

غیر متوقع طور پر اپنے ہم جماعت اور بی جے پی امیدوار رگھو پتی بھٹ سے شکست کھانے کے بعد سابق کانگریسی ایم ایل اے پرمود مادھو راج نے کانگریسی کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی نے منصوبہ بند طریقے سے جھوٹ اور غلط بیانی کے سہارے انہیں شکست دی ہے۔

بنٹوال میں ٹپر ٹرک کی ٹکر سے موٹر بائک سوار ہلاک۔ دوسراشدید زخمی

نیشنل ہائی وے 75پر ٹول ناکے کے قریب پیش آنے والے حادثے میں ایک ٹپر ٹرک نے موٹر بائک کو ٹکر ماردی جس کے نتیجے میں بائک سوار موقع پر ہی ہلاک ہوگیا جبکہ بائک کی پچھلی سیٹ پر سوار شخص شدیدزخمی ہوگیا اور اس کی حالت بہت ہی نازک بتائی جارہی ہے۔