ؓبابابڈھن گری درگاہ پر حملہ کرنے والے بجرنگ دل کارکنوں اور ریاستی کانگریس حکومت کی لاپرواہی کی مذمت کرتے ہوئے بنگلور ومیں ایس ڈی پی آئی کا احتجاجی مظاہرہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 5th December 2017, 7:03 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،5؍دسمبر (ایس او نیوز؍ پریس ریلیز)بابا بڈھن گردی درگاہ پر حملے کرنے اورمقبروں کی بے حرمتی کرنے والے بجرنگ دل کے فرقہ پرست عناصر کے خلاف ایس ڈی پی آئی کی جانب سے ریاست گیر سطح پر احتجاجی مظاہروں کا انعقاد کیا ،اسی احتجاجی مظاہرے کے ایک حصہ کے طور پر بنگلور ، پنپا پارک میں بنگلور ضلعی ایس ڈی پی آئی کی جانب سے احتجاجی مظاہرے کا انعقاد کیا گیا ۔ اس احتجاجی مظاہرے میں مقررین نے اپنے خطاب میں کانگریس حکومت پر الزام لگایا کہ وہ ریاستی حکومت ریاست کے لاء اینڈ آرڈر کو قابو کرنے میں بری طرح ناکام ہوئی ہے۔ جس سے ان فرقہ پرستوں کی حوصلہ افزائی ہوئی ہے اور انہوں نے با با بڈھن گری درگاہ کی بے حرمتی کرنے اور دو مقبروں کی توڑ پھوڑ کرنے کی جرات کی ہے۔ ایس ڈی پی آئی مقررین نے ریاستی حکومت کی لاپرواہی پر سخت اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ ریاست کرناٹک میں فرقہ پرست عناصر کئی عرصے سے سر گرم ہیں اور ریاست میں مذہبی منافرت پھیلا کر عوام کو تقسیم کرکے اپنی سیاسی فائدہ حاصل کرنا چاہتی ہیں۔ ایسے میں اپنے آپ کو سیکولر اور مسلمانوں کی ہمددرد بتانے والی کانگریس حکومت اس معاملے میں غیر فعال کیوں ہوئی ۔ حکومت، انتظامیہ اور انٹلی جنس کو پہلے ہی پتہ تھا کہ با با بڈھن گری درگاہ میں اس طرح کے واقعات پیش آنے والے ہیں لیکن حکومت اس سے لاپرواہی برتنے کی وجہ سے آج ریاست کرناٹک کا ماحول خراب ہوا ہے اور مسلمانوں اور سیکولر پسند عوام کے جذبات مجروح ہوئے ہیں۔ اس احتجاجی مظاہرے میں بنگلورو ضلعی جنرل سکریٹری محمد شریف ، ضلعی ورکنگ کمیٹی اراکین اور بنگلور ضلعی میڈیا انچارج مزمل پاشاہ سمیت سینکڑوں کارکنان رہے۔ 
 

ایک نظر اس پر بھی

کانگریس چھتیس گڑھ میں طویل عرصے کے بعد اقتدار میں لوٹے گی: ویرپا موئلی 

سینئر کانگریس لیڈر ویرپا موئلی کہا کہ چھتیس گڑھ میں 15 سال بعد ان کی پارٹی اقتدار مخالف لہر پر سوار ہوکر اقتدار میں لوٹے گی۔ انہوں نے یہ بھی دعوی کیا کہ کانگریس ریاست کے نکسل متاثرہ علاقوں میں 18 سیٹوں میں اپنی سیٹیں12 سے بڑھا کر 15 کرے گی۔سابق مرکزی وزیر نے یہاں کہاکہ چھتیس گڑھ میں ...

گوا میں بیرونی مچھلیوں کی درآمد پر لگی پابندی سے کاروار، ملپے میں مچھلیاں سستی تو منگلورو میں ہوگئیں مہنگی !

جب سے گوا کی حکومت نے فارمولین کے مسئلے پر بیرونی ریاستوں سے مچھلیوں کی درآمد پر پابندی رکھی ہے اور کچھ قانونی شرائط لاگو کی ہیں، تب سے ساحلی کرناٹکا کے شہروں میں اس کا کچھ ملا جلا اثر دکھائی دے رہا ہے۔

بیلگاوی میں احتجاج کے دوران کسان سورنا سودھا میں گھس گئے، وزیر اعلیٰ کی مداخلت کے بعد گرفتار شدہ افراد کی رہائی ، 20؍نومبر کو بنگلورو میں میٹنگ

شمالی کرناٹک کے بیلگاوی ضلع میں  گناہ اگانے والے کسانوں نے احتجاج کیا اور سوورنا سودھا کے احاطہ میں گنا سے لدی لاریوں کو زبردستی گھسا کر حکومت کے خلاف نعرے لگائے ۔ پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے 10؍ کسان لیڈروں کو گرفتار کر لیا ہے اور ان کےخلاف ایف آئی آر درج کردیا ۔

سنجے دت کے ہاتھوں19نومبرکواڈاپٹ فٹنس کا افتتاح، بنگلورو کا بین الاقوامی معیار پر مشتمل سب سے بڑا فٹنس سنٹر عوام کے لئے دستیاب

شہر کے فریزر ٹاؤن میں صحت اور فٹنس کو عام کرنے کے لئے عالمی معیار کی سہولتوں سے لیس ہندوستان کی سب سے بڑی اور خوبصورت جم اڈاپٹ فٹنس کا افتتاح 19نومبر کی شام منعقد کیا گیا ہے۔