کشمیر 2002 کا گجرات بن سکتا ہے

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 24th June 2018, 8:58 PM | ملکی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

آخر کشمیر میں گونر راج نافذ ہو ہی گیا۔ کشمیر کے لئے یہ کوئی نئی بات نہیں ہے۔ وہاں اب ساتویں بار گونر راج نافذ ہوا ہے ، ویسے بھی کشمیر کے حالات نا گفتہ بہہ ہیں۔ وادی کشمیر پر جب سے بی جے پی کا سایہ پڑا ہے تب ہی سے وہاں قتل و غارت کا سلسلہ جاری ہے ۔ پہلے تو مفتی سعید اور محبوبہ مفتی نے کشمیریوں کو دھوکا دیا۔ کشمیریوں نے جو ووٹ مفتی سعید کی پارٹی کو بی جے پی کو روکنے کے لئے دیئے تھے ،مفتی صاحب نے اس ووٹ کا استعمال بی جے پی کے ساتھ ہاتھ ملاکر حکومت بنانے میں کیا۔ پھر کشمیریوں کو سبق یہ پڑھایا کہ کشمیر میں باڑھ سے جو نقصان ہوا اس کی مدد کے لئے مرکز کی مدد چاہیے اس لئے بی جے پی کے ساتھ ہاتھ ملانا ضروری ہے۔ لیکن کشمیریوں کو ملا کیا! گولیاں اور پیلٹ گن سے آنکھوں کا اندھا پن ! پھر برہان وانی کی موت کے بعد سے تو مرکزی سیکورٹی فورسیز کا قہر ٹوٹ پڑا۔ کبھی کشمیری انتہا پسند وں نے سیکورٹی کو مارا تو کبھی سیکورٹی نے نوجوان کشمیریوں کی جان لی۔ اس لامتناہی سلسلے نے کشمیر کو جہنم بنا دیا اور آخر مرکزکی جانب سے گورنر راج نافذ ہوگیا۔

لیکن کشمیر میں یہ نوبت آئی کیوں! پہلی ذمہ داری تو پاکستان کی ہے۔ پاکستان نے کشمیرکو جان بوجھ کر اپنا میدان جنگ بنا لیا ۔ دراصل سن 1971 میں بنگلا دیش کی جنگ ہار کر پاکستانی فوج کو یہ بات باخوبی سمجھ میں آگئی کہ وہ ہندوستان سے جنگ نہیں جیت سکتا ہے اس لئے 1980 کی دہائی میں کشمیریوں کے ہاتھوں میں بندوقیں تھمادی۔ مرکزی حکومت سے ناراض کشمیری یہ سمجھ بیٹھا کہ بس اس کا مسئلہ حل ہوتا چلا جائے گا۔ ادھر ہندوستانی فوج کشمیر میں الجھ گئی ادھر کشمیریوں کے ہاتھوں میں موت آگئی۔ جس کا سلسلہ اب تک جاری ہے اور کسی طرح حل ہونے کا نام نہیں لے رہا ہے۔ ہماری مختلف مرکزی حکومتوں نے اس مسئلہ کو حل کرنے کے نام پر اس قدر غلطیاں کی کہ مسئلہ حل ہونے کے بجائے پیچیدہ ہوتا چلا گیا اور اب جو صورت حال ہے وہ جگ ظاہر ہے۔

لیکن مودی حکومت کے بر سر اقتدار آنے کے کچھ عرصے بعد مسئلہ کشمیر نے ایک نیا موڑ لے لیاہے جو انتہائی سنگین رخ اختیار کرتا جارہا ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے بر سراقتدار آتے ہی پاکستان کی طرف دوستی کا ہاتھ بڑھایا تھا ۔ انہوں نے حلف لیتے وقت اس وقت کے پاکستانی وزیر اعظم نواز شریف کو دہلی بلایا، پھر وہ ایک بار خود چند گھنٹوں کے لئے پاکستان گئے۔ لیکن اس کا جواب پاکستان نے پٹھان کوٹ ہوائی اڈے پر دہشت گردانہ حملے سے دیا۔ مودی نے اس کا جواب دہشت گردوں کے اڈوں پر حملے سے دیا اور بس پھر اس کے بعد سے حالات ناگفتہ بہہ ہوتے چلے گئے۔

اب کشمیر نہ صرف ایک ٹیڑھی کھیر ہے بلکہ آثار یہ ہیں کہ سنگھ مودی کی قیادت میں بی جےپی کشمیر کو ایشو بنا کر 2019 کا لوک سبھا چناؤ جیتنے کے لئے کمر بستہ ہو رہی ہے۔ وہ کیسے! یاد رکھیے کہ مودی ’’ہم بنام تم‘‘ کی چناوی حکمت عملی پر چناؤ جیتنےمیں بادشاہ ہیں ۔اس حکمت عملی میں’ ہم ہندو اور تم مسلمان‘ ہوتا ہے۔یعنی مودی بہت خوبصورتی سے چناوی کمپین کو’ ہندو-مسلم ‘ فرضی جنگ میں بدل دیتے ہیں ۔ مثلاً ، گجرات فسادات کا مودی نے چناؤ کے لئے جو فائدہ اٹھایا اس سے سب واقف ہیں ۔ گجرات میں مسلم نسل کشی کے بعد مودی’ ہندو ہیرو ‘ہی نہیں بلکہ ہندو محافظ کے روپ میں ابھر ے جس نے گجرات میں مسلمانوں کا سر کچل کر ہندوؤں کی ’رکشا‘ کی اور اسی لئے ’ہندو انگ رکشک‘کے لقب سے خود کو نواز لیا اور اس طرح اس ہندو ہیرو نے گجرات میں تین اسمبلی چناؤ جیتے۔

کشمیر کارڈ سن 2019 کے لوک سبھا چناؤ میں مودی کے لئے وہی کام کر سکتا ہے۔ مودی سن 2014 کے چناؤ ترقی کے کارڈ پر لڑے تھے جبکہ سنگھ زمین پر ہندوؤں کو یہ باور کروارہی تھی کہ ’’دبنگ ‘‘ مودی ہی مسلمانوں کو سبق سیکھا سکتے ہیں،اب مودی کا ترقی کا کارڈ بالکل دھوکا ثابت ہوا ہے۔ کسان خودکشی کررہا ہے ، دلت ہر جگہ پٹ رہا ہے، نوجوان کونوکری نصیب نہیں، تاجر کو نوٹ بندی نے تباہ کر دیا۔ اس لئے اب مودی کے پاس محض ’ہندو-مسلم ‘ کارڈ ہی بچا ہے یعنی عام انتخاب میں ہندو کو کچھ ایسا سبق پڑھایا جائے کہ وہ اپنی تمام مصیبتیں بھول جائے اور مسلم منافرت میں آنکھ بند کر مودی کو پھر اپنا ’انگ رکشک‘ سمجھ کر ووٹ دےدے۔

کشمیر اس حکمت عملی کے لئے بہترین آمجگاہ ہے۔ کشمیر میں اس وقت بغاوت ہے ، روز سیکڑوں لوگ حکومت ہند کے خلاف سڑکوں پر نکل کر آزادی کے نعرے لگاتے ہیں، ادھر سرحد پار سے پاکستان آئے دن گولی باری کرتا ہے، ہمارے فوجی مارے جارہے ہیں اس پورے تناظر میں ’ کشمیری مسلمان‘ مرکزی کرادر ہے ۔ ادھر اسلامی ریاست پاکستان ہمارے فوجی یعنی’ ہندو‘ ہندوستان پر حملہ کر رہاہے۔ بس کشمیر میں جس قدر مارکاٹ ہوگی ، اس طرح باقی ہندوستان میں مودی اور سنگھ اس کو ہندو-مسلم کا رنگ دیں گے۔ آخر سیکڑوں کیا ہزاروں کی موت کے بعدیہ نعرہ چلے گا کہ مودی نے سرکش مسلمانوں کا سر کچل دیا اور اس طرح مودی ’ہندو انگ رکشک‘ بن جائیں گے۔ اس طرح سن 2002 کا گجرات اب کشمیر میں دہرایا جائے گا تاکہ کسان، دلت ،نوجوان اور تاجر سب اپنے اپنے مسائل بھول کر مودی ’ہندو انگ رکشک‘ کے نام پر ووٹ ڈال دیں ، ساتھ میں رام مندر کی تعمیر شروع کرواکر اس حکمت عملی پربگھار لگا دی جائے گی۔

یہ ہے اس وقت مسئلہ کشمیر کا حل جو مودی کو دوبارہ اقتدار میں لانے کے لئے استعمال کرنے کے کام آسکتاہے۔ میری دعا ہے کہ میرا مضمون غلط ثابت ہو ، کیونکہ اس آڑ میں بے حد خون بہے گااور سارا ہندوستان منافرت کی آگ میں جھلس اٹھے گا۔ مگر آثار پرخطر ہیں اور کشمیر جنت سے جہنم کی کگار پر ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

شمالی کینرا پارلیمانی حلقہ میں کانگریس اور جے ڈی ایس کی کسرت : کیا ہیگڈے کو شکست دینا آسان ہوگا ؟

ضلع اترکنڑا  میں   کانگریسی لیڈران کی موجودہ حالت کچھ ایسی ہے جیسے بغیر رنگ روپ والے فن کار کی ہوتی ہے۔ لوک سبھا انتخابات سے بالکل ایک دو دن پہلے تک الگ الگ تین گروہوں میں تقسیم ہوکر  من موجی میں مصروف ضلع کانگریسی لیڈران  مرتا کیا نہ کرتا کے مصداق  ان کی بھاگم بھاگ کو دیکھیں ...

شمالی کینرا پارلیمانی سیٹ کو جے ڈی ایس کے حوالے کرنے پر کانگریسی لیڈران ناراض؛ کیا دیش پانڈے کا دائو اُلٹا پڑ گیا ؟

ایک طرف کانگریس اور جنتا دل ایس کی مخلوط حکومت نے ساجھے داری کے منصوبے پر عمل کرکے سیٹوں کے تقسیم کے فارمولے پر رضامند ہونے کا اعلان کیا ہے تو دوسری طرف کچھ اضلاع سے کانگریس پارٹی کے کارکنان اور مقامی لیڈران میں بے اطمینانی کی ہوا چل پڑی ہے۔ جس میں ضلع اڈپی کے علاوہ شمالی کینرا ...

پاکستان پر فضائی حملے سے بی جے پی کے لئے پارلیمانی الیکشن کا راستہ ہوگیا آسان !  

پاکستان کے بہت ہی اندرونی علاقے میں موجود دہشت گردی کے اڈے پر ہندوستانی فضائی حملے سے بی جے پی کو راحت کی سانس لینے کا موقع ملا ہے اور آئندہ پارلیمانی انتخابات جیتنے کی راہ آسان ہوگئی۔اور اب وہ سال2017میں یو پی کے اسمبلی انتخابات جیتنے کی طرز پر درپیش لوک سبھا انتخابات جیتنے کے ...

ہندوستان میں اردو زبان کی موجودہ صورتحال، عدم دلچسپی کے اسباب اوران کا حل ۔۔۔۔ آز: ڈاکٹر سید ابوذر کمال الدین

یہ آفتاب کی طرح روشن حقیقت ہے کہ اردو بھی ہندی، بنگلہ، تلگو، گجراتی، مراٹھی اور دیگر ہندوستانی زبانوں کی طرح آزاد ہندوستان کی قومی اور دستوری زبان ہے جو دستورِ ہند کی آٹھویں شیڈول میں موجود ہے۔ لہٰذا یہ کوئی نہیں کہہ سکتا کہ اردو ہندوستان کی زبان نہیں ہے۔ جو ایسا کہتا ہے اور ...

آننت کمار ہیگڈے۔ جو صرف ہندووادی ہونے کی اداکاری کرتا ہے ’کراولی منجاؤ‘کے چیف ایڈیٹر گنگا دھر ہیرے گُتّی کے قلم سے

اُترکنڑا کے رکن پارلیمان آننت کمار ہیگڈے جو عین انتخابات کے موقعوں پر متنازعہ بیانات دے کر اخبارات کی سُرخیاں بٹورتے ہوئے انتخابات جیتنے میں کامیاب ہوتا ہے، اُس کے تعلق سے کاروار سے شائع ہونے والے معروف کنڑا روزنامہ کراولی منجاو کے ایڈیٹر نے  اپنے اتوار کے ایڈیشن میں اپنے ...

کیا جے ڈی نائک کی جلد ہوگی کانگریس میں واپسی؟!۔دیشپانڈے کی طرف سے ہری جھنڈی۔ کانگریس کر رہی ہے انتخابی تیاری

ایسا لگتا ہے کہ حالیہ اسمبلی انتخابات سے چند مہینے پہلے کانگریس سے روٹھ کر بی جے پی کا دامن تھامنے اور بی جے پی کے امیدوار کے طور پر فہرست میں شامل ہونے والے سابق رکن اسمبلی جے ڈی نائک کی جلد ہی دوبارہ کانگریس میں واپسی تقریباً یقینی ہوگئی ہے۔ اہم ذرائع کے مطابق اس کے لئے ضلع ...