گاندھی کے قاتلوں کو پھانسی دی اور بابری مسجد سانحہ کے ملزمان کو وزیر بنایا:اویسی 

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 21st April 2017, 3:14 AM | ملکی خبریں |

حیدرآباد:20/اپریل (اہس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)اے آئی ایم آئی ایم کے صدراور ممبر پارلیمنٹ اسد الدین اویسی نے بابری مسجد کی شہادت کے معاملے کو مہاتما گاندھی کے قتل سے زیادہ سنگین بتاتے ہوئے سماعت مکمل ہونے میں تاخیر کی مذمت کی۔انہوں نے کہا کہ 1992میں قومی شرم کے لیے ذمہ دار لوگ آج ملک چلا رہے ہیں۔اویسی نے ٹوئٹ کیا کہ مہاتما گاندھی کے قتل کی سماعت دو سال میں مکمل ہوئی اور بابری مسجد کی شہادت کا واقعہ جو مہاتماگاندھی کے قتل سے زیادہ سنگین ہے، اس میں اب تک فیصلہ نہیں آیا ہے۔گاندھی جی کے قاتلوں کو مجرم ٹھہرا کر پھانسی پر لٹکایا گیا اور بابری مسجد کی شہادت کے ملزمان کو مرکزی وزیر بنایا گیا، پدم وبھوشن سے نوازا گیا، انصاف کا نظام آہستہ چلتا ہے۔انہوں نے یہ تبصرہ ایسے وقت کیا ہے، جب سپریم کورٹ نے بابری مسجد شہادت معاملے میں بی جے پی کے سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی، مرلی منوہر جوشی اور اوما بھارتی کے خلاف مجرمانہ سازش کے الزام کو بحال کرنے کے سی بی آئی کی درخواست کو قبول کرلیا ہے۔حالانکہ عدالت عظمی نے کہا کہ راجستھان کے گورنر کلیان سنگھ کو آئینی رعایت ملی ہوئی ہے اور ان کے خلاف عہدے سے ہٹنے کے بعد سماعت ہو سکتی ہے۔قابل غورہے کہ کلیان سنگھ 1992میں اتر پردیش کے وزیر اعلی تھے۔ اویسی نے کہا کہ اس میں 24سال کی تاخیر ہوئی ہے، 24-25سال گزر چکے ہیں، لیکن آخر کار سپریم کورٹ نے فیصلہ کیا کہ سازش کا الزام ہونا چاہیے، لیکن مجھے امید ہے کہ سپریم کورٹ (1992سے زیر التوا)توہین عدالت کی درخواست پر بھی فیصلہ کرے گا۔انہوں نے اپنے کئی ٹوئٹ میں کہا کہ کیا کلیان سنگھ استعفی دے کر سماعت کا سامنا کریں گے یا گورنر کے پردے کے پیچھے چھپیں گے؟ کیا مودی حکومت انصاف کے مفاد میں انہیں ہٹائے گی؟ مجھے شک ہے۔اویسی نے کہا کہ ان کے خیال میں اگر سپریم کورٹ نے کارسیوا کی اجازت نہیں دی ہوتی، تو بابری مسجد کی شہادت نہیں ہوتی اور سپریم کورٹ کو اب بھی توہین عدالت کی عرضی پر سماعت کرنا باقی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

تسلیم الدین کی سیاسی ضد کوجنتادل راشٹر وادی سلام کرتی ہے؛اپنی شرطوں پر ہی سیاست کر مسلم قیادت کو ابھارا جا سکتا ہے:اشفاق رحمن

جنتادل راشٹر وادی نے ایم پی محمد تسلیم الدین کے انتقال پر گہرے صدمے کا اظہار کیا ہے۔ پارٹی کے کنوینر اور جواں سال مسلم رہنماء اشفاق رحمن نے کہا ہے کہ تسلیم الدین جیسی شخصیت ہندوستانی سیاست میں صدیوں میں پیدا ہوتی ہے،

بٹلہ ہاؤس فرضی انکاؤنٹر کی منصفانہ جانچ کی مانگ کو لے کر سماجی تنظیموں کا کینڈل مارچ

بٹلہ ہاؤس فرضی انکاؤنٹر کی مخالفت میں اور اس منصفانہ جانچ اور کارروائی کی مانگ کو لے کر کئی سماجی تنظیموں نے مل کرراشٹریہ ساماجک کاریہ کرتا سنگٹھن کے صدر محمدآفاق کی قیادت میں حضرت گنج ناویلٹی سنیما چوراہے سے جی پی او واقع گاندھی مجسمہ تک کینڈل مارچ نکالا ۔

بہار سیلاب متاثرین کی بازآباد کاری کے لئے دل کھول کر تعاون کریں :قاری عبد الرشید حمیدی

جمعیۃ علماء ہند کے صدر مولانا سید ارشد مدنی دامت برکاتہم کی دعوت پر لبیک کہتے ہوئے صوبہ مہاراشٹر میں جمعیہ علماء کی تمام اکائیوں نے منظم انداز میں بہار سیلاب متاثرین کے لئے راحت رسانی اور ریلیف کاکام سرگرمی کے ساتھ جاری رکھا ہے ۔