سنت پرعمل دنیاوآخرت میں کامیابی کاذریعہ از:اسرارالحق قاسمی

Source: S.O. News Service | By Safwan Motiya | Published on 29th August 2016, 6:31 PM | اسلام | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

علمی اصطلاح میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے قول و عمل دونوں پرسنت کا اطلاق ہوتاہے،سنت کا لغوی معنی بھی طریقہ ہے اورسیدھے طورپریہ کہا جا سکتا ہے کہ جوعمل آپؐ کے قول سے یاعمل سے ثابت ہووہ سنت ہے۔شریعت میں سنت کی غیر معمولی اہمیت ہے اور مسلمانوں کایہ امتیازہے کہ اللہ کے نبیﷺنے اپنی امت کی اجتماعی و انفرادی زندگی کے تقریباً تمام شعبوں میں رہنمائی کی ہے۔خانگی زندگی سے لے کرمعاشرے میں رہنے کے طور طریقوں سے بھی آپؐ نے آگاہ فرمایاہے،سونے سے لے کر جاگنے تک اور کھانے پینے سے لے کر اٹھنے بیٹھنے تک کا طریقہ بتایاہے،لوگوں سے کس طرح بات کرناہے اور ان کے ساتھ کیسا برتاؤکرناہے،یہ بھی ہمارے نبیﷺنے بتایاہے،مختصریہ کہ اللہ کے نبیﷺنے قدم قدم پر اپنی امت کے ہر فردکی رہبری و راہنمائی فرمائی ہے ۔اوریہ ایک حقیقت ہے کہ اگر کوئی انسان نبی اکرمﷺکے بتائے ہوئے طورطریقوں کواپنی عملی زندگی میں برپاکرتاہے اور اسی طرح اپنی زندگی گزارتاہے جیسے کہ آپؐ نے ہدایت فرمائی ہے تویقیناً ایسا انسان کامیاب ہے،حضورپاکﷺکی سنتوں پرعمل کرنادراصل اللہ کے احکام کی پابندی ہے، اﷲ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ’’جو رسول کی اطاعت کرتاہے، اس نے اﷲ کی اطاعت کی‘‘(سورۂ نساء:80)اس کی وجہ یہ ہے کہ نبی پاکﷺجوبھی عمل کرتے ہیں یاجوبھی ہدایت فرماتے ہیں وہ دراصل اللہ کی جانب سے ہی تلقین کیاجاتاہے،دوسری جگہ اﷲ تعالیٰ نے اس کی مزید وضاحت فرمائی ہے:’’ اور رسول تم کو جو کچھ دے اس کو لے لو اور جس چیز سے تم کو منع کرے اس سے رُک جاؤ‘‘۔ (سورۂ حشر:7)اس سے واضح ہوگیاکہ اللہ کے رسول کے بتائے ہوئے طریقے میں ہی مکمل کامیابی ہے اورآپؐ کے احکام پرعمل کرنا اور منہیات سے رکناشرعی تقاضاہے۔پھریہ کہ اتباعِ رسول دراصل اللہ اور اس کے رسول سے محبت کی علامت ہے،جیساکہ ارشاد ہے: ’’کہہ دو اگر تم اﷲ سے محبت کرتے ہوتو میری اتباع کرواﷲ تم سے محبت کرے گا اور تمہارے گناہوں کو بخش دے گا، اور اﷲ بہت زیادہ معاف کرنے والااور رحم کرنے والا ہے، کہہ دو اﷲ اور رسول کی اطاعت کرو ، اگر تم رو گردانی اختیار کرتے ہو تو اﷲ کافروں کو پسند نہیں کرتا ہے‘‘۔(سورۂ آل عمران : 31-32)نبی پاکﷺجوکچھ بیان کرتے ہیں اور اپنی امت کوجوہدایت فرماتے ہیں،وہ سب اللہ کی جانب سے ہوتاہے اور اللہ کی طرف سے دیے گئے احکام کی تشریح ہوتاہے،جیساکہ فرمایاگیاہے :’’ہم نے تم پر قرآن نازل کیاہے تاکہ لوگوں کے سامنے اس کو کھول کھول کر بیان کرو جو ان کی طرف نازل کیا گیا ہے‘‘۔(سورۂ نحل :44)
احادیث میں بھی متعددمقامات پرنبی اکرمﷺنے صحابہ کواورصحابہ کے واسطے سے تمام امت کوسنت پر عمل کرنے اور اس کولازم پکڑنے کی تلقین کی ہے، حضرت عرباض بن ساریہؓ نبی کریم ﷺ سے روایت کرتے ہیں کہ آپ ؐ نے ارشاد فرمایا:’’میری سنت کو لازم پکڑو‘‘۔ (سنن أبو داؤد:4604) حضرت مقدام بن معدی کربؓ سے روایت ہے کہ نبی اکرم ﷺ نے ارشاد فرمایا:’’ بلاشبہ مجھے کتاب عطاکی گئی ہے اور اس کے ساتھ اسی کے مثل دوسری چیز بھی‘‘۔ (سنن أبو داؤد: 4607)اس حدیث میں دوسری چیزسے مراد سنت ہی ہے۔
قرآن اور حدیث کے مذکورہ نصوص و دلائل سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ سنت نبویہؐ شریعتِ اسلامیہ کے مصادر و مآخذ میں ایک اہم مصدر اور حجت کی حیثیت رکھتی ہے، وہ قرآن کریم کے بعد دوسرے ماخذکا مقام رکھتی ہے، اس پر تمام مسلمانو ں کا اجماع ہے۔بلاشبہ اﷲ تعالیٰ نے تمام مسلمانو ں پر رسول اﷲ ﷺ کی اطاعت فرض کی ہے اور ان پر تمام اوامر و نواہی اور احکام و تشر یع میں آپ ؐ کی اتباع کو ضروری قرار دیا ہے، اﷲ تعالیٰ نے نبی کریم ﷺ کی اطاعت کو اپنی اطاعت کے ساتھ وابستہ کیا ہے، اور اپنے رسول کی اطاعت کو اپنی اطاعت قرار دیا ہے ، اﷲ تعالیٰ کا ارشاد ہے :’’ جو رسول کی اطاعت کرتاہے اس نے اﷲ کی اطاعت کی‘‘۔ لہذا جس نے رسول ﷺ کی اطاعت اس حیثیت سے کی کہ آپ ؐ رسول اور مبلغ ہیں تو وہ فی الحقیقت اﷲ ہی کی اطاعت کرتا ہے۔
نبی کریم ﷺ نے سنتِ نبویہؐ کو مضبوطی سے تھامنے کی باربارتاکید فرمائی ہے اور واضح طور پر فرمایا ہے کہ وہ تشریعی احکام میں سے ایک اہم دلیل ہے، آپ ؐ نے اس بات سے ڈرایا ہے کہ کوئی قرآن و سنت میں تفریق کرے، صرف قرآنی احکام پر اکتفاء کرے اور سنت پر عمل کرنا ترک کر دے، آپ ؐ کا ارشاد ہے:’’میں تم میں سے کسی کو اس حال میں ہرگز نہ پاؤں کہ وہ اپنی مسند پر ٹیک لگائے بیٹھا ہو، اس کے پاس میری کوئی حدیث پہنچے جس میں کسی چیز کا میں نے حکم دیا ہو یا کسی چیز سے روکا ہو تو وہ یہ کہے:ہم نہیں جانتے ہیں ،ہم جو کچھ کتاب اﷲمیں پائیں گے اسی کی ہم اتباع کریں گے‘‘۔(سنن أبو داؤد:4605)
سنت نبویہؐ مطہرہ یا تو قرآنِ کریم میں وارد احکام کی تاکید کرتی ہے یا اس کے مجمل کی تفصیل بیان کرتی ہے یا اس کے عام کو خاص کرتی ہے، یا اس کے مطلق کو مقید کرتی ہے یا اس کے کسی حکم کو منسوخ کرتی ہے، یا قرآنِ کریم میں غیر موجود کسی حکم کو بیان کرتی ہے۔یعنی آپؐ کے ذریعے دیاگیاہرحکم دراصل اللہ تعالیٰ کی طرف سے دیاگیاحکم ہے اور اس پر عمل کرنا ضروری ہے۔جب آپؐاپنی زندگی کے آخری ایام گزاررہے تھے،اس موقعے پر آپ نے اپنی امت کوکامیابی و کامرانی کاایک عظیم نسخہ عنایت فرمایاتھا،آپ نے فرمایاتھاکہ میں تمھارے درمیان دوایسی چیزیں چھوڑکر جارہاہوں،کہ جب تک تم ان کوتھامے رہوگے ، گمراہ نہیں ہوسکتے اور وہ دوچیزیں کتاب اللہ اور میری سنت ہے۔اسی طرح آپؐ نے اپنے بعداپنے صحابہ کی اتباع کی بھی تلقین فرمائی اور یہ فرمایاکہ’میرے صحابہ ہدایت کے ستارے ہیں،تم ان میں سے جس کی بھی اتباع کروگے ہدایت پاجاؤگے‘۔ آپؐنے بطورِخاص خلفائے راشدین کی اتباع کی بھی ہدایت فرمائی،کیوں کہ جہاں فضیلت اور مرتبے میں خلفائے راشدین حضرت ابوبکرصدیقؓ،عمرفاروقؓ،عثمان غنیؓ اور علی کرم اللہ وجہہ دیگر صحابہ اور مسلمانوں سے آگے ہیں،وہیں انھیں یہ فضیلت بھی حاصل ہے کہ انھوں نے نبی پاکﷺکے قول و عمل کودل و جان سے قبول کیااوراپنی زندگی کومکمل طورپرسنتِ نبوی کے سانچے میں ڈھال لیاتھا۔
لہٰذاہردورکے مسلمانوں کی کامیابی اور کامرانی اسی میں ہے کہ وہ اپنے نبیﷺاورآپؐکے معززصحابہ کی زندگیوں کو اپنے لیے مشعلِ راہ بنائے اورزندگی کے ہر موڑاور ہر شعبے میں ان کے قول و عمل کومضبوطی سے تھامے۔آج جوبظاہر ہر چہارجانب مسلمان خسارے میں ہیں اورانھیں ہرشعبۂ حیات میں ناکامیوں کاسامناہے،اجتماعی و انفرادی طورپرمصائب اور شکست و ہزیمت ان کا مقدربن چکی ہے،اس کی دیگر وجوہ کے ساتھ ایک اہم ترین وجہ یہ بھی ہے کہ ہم اپنے نبیﷺکی سیرت و سنت سے کوسوں دورہوچکے ہیں،دنیاکی ظاہری چمک دمک اور مادیت پرستی ہمارے معاشرے اور گھروں میں سرایت کرچکی ہے اورہم دین سے دوررہ کردنیاکی آسایشیں حاصل کرنا چاہتے ہیں،اسی کا نتیجہ ہے کہ ہرقدم پر ہمیں نقصان اور خسارے سے دوچارہوناپڑرہاہے۔جب کوئی مصیبت آن پڑتی ہے تو ہم خداورسول اور قرآن و سنت کی دہائیاں دیتے ہیں،لیکن جب خوشحالی میں ہوتے ہیں تودیگر اقوام کی طرح غفلت او رعیش پرستی کی زندگی گزارنے کو ترجیح دیتے ہیں،حالاں کہ ہمارے نبیﷺکی سنت یہ ہے کہ اگرخوشحالی ہوتواللہ کی نعمتوں کاشکراداکریں اوراگرمصیبت میں ہوں توصبرکریں اورہرموڑپرصرف اللہ سے مددونصرت طلب کریں۔اعتدال اور توازن سنتِ نبویﷺکا خاص وصف اور امتیازہے جوہماری زندگیوں سے ناپیدہے اور ہم عملی دنیامیں افراط و تفریط کے شکارہیں۔اس لیے اگرہمیں واقعی پرسکون زندگی مطلوب ہے توہرحال میں سنتوں کوزندہ کرنے کی جدوجہد کرنی ہوگی اور سیرتِ نبویﷺاورصحابہؓکی مثالی زندگیوں کواپنے لیے مشعلِ راہ بناناہوگا۔دعاہے کہ اللہ تعالیٰ ہمیں اس کی توفیق عطافرمائے۔(آمین)(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)

ایک نظر اس پر بھی

مٹھی بھر شر پسند عناصر ملک میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی اور قومی یکجہتی کی فضا کو خراب کرنا چاہتے ہیں : مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی

مرکزی جمعیت اہل حدیث( ہند) سے جاری ایک اخباری بیان کے مطابق مرکزی جمعیت اہلحدیث ہند کے امیر مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی نے امرتسر میں نرنکاری ست سنگ ڈیرہ پر ہوئے گرینیڈ حملہ جس میں تین افراد ہلاک اور پندرہ افراد زخمی ہوئے، کی پر زور مذمت کی ہے اور اسے بزدلانہ اورغیر انسانی ...

ماہ صفر مظفر اور بد شگونی ......... بقلم: محمد حارث اکرمی ندوی

فَإِذَا جَاءَتْهُمُ الْحَسَنَةُ قَالُوا لَنَا هَٰذِهِ ۖ وَإِن تُصِبْهُمْ سَيِّئَةٌ يَطَّيَّرُوا بِمُوسَىٰ وَمَن مَّعَهُ ۗ أَلَا إِنَّمَا طَائِرُهُمْ عِندَ اللَّهِ وَلَٰكِنَّ أَكْثَرَهُمْ لَا يَعْلَمُونَ ( الأعراف 131) ...

ملک کے موجودہ حالات اور دینی سرحدوں کی حفاظت ....... بقلم : محمد حارث اکرمی ندوی

   ملک کے موجودہ حالات ملت اسلامیہ ھندیہ کےلیے کچھ نئے حالات نہیں ہیں بلکہ اس سے بھی زیادہ صبر آزما حالات اس ملک اور خاص کر ملت اسلامیہ ھندیہ پر آچکے ہیں . افسوس اس بات پر ہے اتنے سنگین حالات کے باوجود ہم کچھ سبق حاصل نہیں کر رہے ہیں یہ سوچنے کی بات ہے. آج ہمارے سامنے اسلام کی بقا ...

اسلام میں عورت کے حقوق ...............آز: گل افشاں تحسین

صدیوں سے انسانی سماج اور معاشرہ میں عورت کے مقام ومرتبہ کو لیکر گفتگو ہوتی آئی ہے ان کے حقوق کے نام پر بحثیں ہوتی آئی ہیں لیکن گذشتہ چند دہائیوں سے عورت کے حقوق کے نام پرمختلف تحریکیں اور تنظیمیں وجود میں آئی ہیں اور صنف نازک کے مقام ومرتبہ کی بحثوں نے سنجیدہ رخ اختیار کیا ...

انقلابی سیرت سے ہم کیوں محروم ہیں؟ .................آز: مولانا سید احمد ومیض ندوی

سیرتِ رسول آج کے مسلمانوں کے پاس بھی پوری طرح محفوظ ہے، لیکن ان کی زندگیوں میں کسی طرح کے انقلابی اثرات نظر نہیں آتے، آخر وجہ کیا ہے؟ موجودہ دور کے ہم مسلمان صرف سیرت کے سننے اور جاننے پر اکتفاء کرتے ہیں، سیرتِ رسول سے ہمارا تعلق ظاہری اور بیرنی نوعیت کا ہے۔حالانکہ س سیرت کی ...

مینگلور: پولیس کے خوف سے سائڈلیتے وقت ٹرک الٹ گیا۔ کلینر کی موت۔ برہم عوام نے کیا راستہ روک کر احتجاج

منگلورو شہر کے مضافات تھوکٹو میں پولیس نے گاڑی روکنے کے لئے کہاتوکیرالہ کی طرف جانے والے ایک ٹرک کے ڈرائیور نے اپنی گاڑی سائڈ میں لے جانے کی کوشش کی جس کے دوران گاڑی الٹ گئی اوراس کے نتیجے میں وسنت کمار (25سال) نامی کلینر ہلاک ہوگیا، جو کہ شکاری پور کا رہنے والا تھا۔ 

چامراج نگر مندر حادثے کے ذمہ داروں کو بخشا نہ جائے: جی پرمیشور

باگلکوٹ ضلع کے ایک نجی شکر کے کارخانے میں بائلر پھٹنے کی وجہ سے ہلاک افراد کے ورثاء کو ریاستی حکومت کی طرف سے پانچ لاکھ روپیوں کا معاوضہ دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ یہ بات آج ریاستی اسمبلی میں نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر جی پرمیشور نے بتائی۔

سکھ فسادات: میرے خلاف نہ کوئی ایف آئی آر اور نہ ہی چارج شیٹ، کمل ناتھ نے کہا،بی جے پی جھوٹ پھیلارہی ہے

مدھیہ پردیش کے وزیراعلیٰ کمل ناتھ نے 1984 کے سکھ فسادات پر اٹھ رہے سوالوں پر جواب دیاہے۔کمل ناتھ نے کہاہے کہ 1984 کے سکھ فسادات میں ان کے خلاف کوئی بھی ایف آئی آر یا چارج شیٹ نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ اب اس مسئلے کواٹھانے کے پیچھے صرف سیاست ہے۔انہوں نے کہاکہ جس وقت میں کانگریس کا جنرل ...

ممبئی کے اندھیری اسپتال میں زبردست آگ؛ چھ لوگ زندہ جھلس گئے؛ پچاس سے زائد زخمی

 ممبئی کے ESIC کامگار  ہسپتال میں آگ لگنے سے  سے چھ لوگوں کی موت واقع ہوگئی وہیں پیر کی شام کو ہوئے اس حادثے میں 50 سے زائد لوگ  زخمی ہوگئے  ہیں.جائے وقوع پر فائر بریگیڈ پہنچ گئی ہے اور بچاؤ کا کام تیزی سے چل رہا ہے. گراونڈ فلور سے بھڑکی آگ تیزی سے اوپر کی طرف  پھیلتی چلی  گئی. آگ پر ...

ہندوسماج اتسوا کے بعد کاسرگوڈ میں فرقہ وارانہ تشدد۔ پولیس نے کیا لاٹھی چارج

اتوار کے دن یہاں منعقدہ ہندوسماج اتسوا میں شرکت کے بعدواپس لوٹنے والوں پر سنگ باری کا الزام لگاتے ہوئے شرپسندوں نے مختلف مقامات پرموٹر گاڑیوں پر پتھراؤ شروع کیا جس کے بعد پولیس نے مداخلت کرتے ہوئے لاٹھی چارج کیااور صورتحال پر قابو پالیا۔