سعودی عرب:قطیف کے دہشت گردکی تصویرمیں حزب اللہ کا پرچم

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th July 2017, 10:12 AM | خلیجی خبریں |

ریاض12جولائی(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا)سعودی عرب میں سزائے موت پانے والے 4دہشت گردوں میں سے ایک تخریب کار کی تصویر سامنے آئی ہے جس میں وہ لبنانی ملیشیا حزب اللہ کاپرچم اپنے گلے میں ڈالاہوانظرآرہاہے۔ سعودی عرب نے منگل کے روز قطیف سے تعلق رکھنے والے چار دہشت گردوں کے خلاف قصاص کی سزا پر عمل درآمدکیا۔ ان افراد نے سعودی سکیورٹی فورسز پر دوران گشت فائرنگ کر کے امن و امان کی صورت حال خراب کرنے کی کوشش کی تھی۔ موت کے گھاٹ اتارے جانے والے چاروں افراد کے نام یہ ہیں زاہر عبد الرحیم حسین البصری ، یوسف علی عبداللہ المشیخص ، مہدی محمد حسن الصایغ اور امجد ناجی حسن آل امعیبد اور ان تمام کا تعلق سعودی عرب سے ہے۔دہشت گردی اور شدت پسند تنظیموں کے امور کے ماہر حمود الزیادی نے ٹوئیٹر پر ایک دہشت گرد کی تصویر نشر کی ہے جس نے لبنانی تنظیم حزب اللہ کے نام کا پٹکا اپنی گردی میں ڈال رکھا ہے۔ الزیادی نے لبنانی حزب اللہ کے اُن جماعتوں کے ساتھ رابطوں سے متعلق معلومات کا بھی ذکر کیا جو سعودی عرب یا بحرین میں سرگرم رہتی ہیں۔العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے الزیادی نے بتایا کہ قطیف میں سرگرم گروپوں کو سعودی عرب اور بحرین میں دہشت گردی پھیلانے کے واسطے تربیت فراہم کی گئی۔ یہ گروپ انتظامی اور عملی طور پر حزب اللہ اور اسی طرح عراقی حزب اللہ بریگیڈز کے ساتھ مربوط ہیں۔ ان کے عناصر نے مذہبی زیارت اور دوروں کے نام پر گزشتہ تین برسوں کے دوران تربیت حاصل کی اور پھر سعودی عرب اور بحرین میں فرقہ واریت کی بنیاد پر فتنہ فساد بھڑکانے ، اشتعال انگیزی پھیلانے اور اغوا اور قتل کی کارروائیاں کرنے کے واسطے سرگرم ہوگئے۔قطیف یا بحرین میں ان شدت پسند تنظیموں کے قطر کے ساتھ تعلق کے حوالے سے الزیادی کا کہنا ہے کہ قطری حکام کا خطے میں سنی اور شیعہ دہشت گرد تنظیموں کے ساتھ بہت قریبی تعلق ہے۔ الزیادی نے باور کرایا کہ قطر کے ریاستی حکام کا حزب اللہ کے ساتھ تعلق خصوصی نوعیت کا ہے جو تمام شیعہ شدت پسند جماعتوں کو حرکت میں لاتی ہے اور وہ ہی خطے میں تمام دہشت گرد گروپوں کو چلا رہی ہے۔الزیادی کے مطابق ماضی کے عرصے میں یہ بات سامنے آ گئی کہ عراق کی حکومت نے کس طرح اُن کروڑوں کی رقم کا انکشاف کیا جو اُس کو مطلع کیے بغیر طیارے کے ذریعے لائی گئی۔ یہ اُن شدت پسند جماعتوں کے لیے فنڈنگ کا ایک حصہ ہے جو سعودی عرب اور بحرین میں دہشت گرد ٹولیوں کو سپورٹ فراہم کر رہی ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

شارجہ میں ابناء علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی خوبصورت تقریب؛ یونیورسٹی میں میڈیکل تعلیم صرف 60 ہزار میں ممکن!

علی گڈھ مسلم یونیورسٹی جسے بابائے قوم مرحوم سر سید احمد خان نے دو سو سال قبل قائم کیا تھا آج تناور درخت کی شکل میں ملک میں تعلیم کی روشنی عام کررہا ہے۔اس یونیورسٹی میں میڈیکل کے طلبا کے لئے پانچ سال کی تعلیمی فیس صرف 60,000 روپئے ہے، حالانکہ دوسری یونیورسیٹیوں میں میڈیکل کے طلبا ...

متحدہ عرب امارات میں حفظ قرآن جرم، حکومت کی منظوری کے بغیر کوئی شخص قرآن حفظ نہیں کرسکتا، مساجد میں مذہبی تعلیم اور اجتماع پر بھی پابندی

مشرقی وسطیٰ کے مختلف ممالک میں داخل اندازی اور عرب کی اسلامی تنظیموں کو دہشت گرد قرار دینے کے بعد متحدہ عرب امارات قانون کے ایسے مسودہ پر کام کررہا ہے جس کی رو سے حکومت کی منظوری کے بغیر قرآن شریف کا حفظ بھی غیرقانونی ہوگا۔

سعودیہ میں مقیم غیر قانونی تارکین وطن میں سب سے زیادہ تعداد پاکستانیوں کی نکلی

سعودی عرب کی وزارت داخلہ کے ترجمان میجر جنرل منصور الترکی نے واضح کیا ہے کہ اقامہ و محنت قوانین اور سرحدی سلامتی کے ضوابط کی خلاف ورزی کرنے والے 140 مما لک کے 758570 غیر ملکیوں نے شاہی مہلت سے فائدہ اٹھایا۔