نامور ادیب اور عوامی مصنف دودھناتھ سنگھ کا انتقال

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 12th January 2018, 10:36 PM | ملکی خبریں |

لکھنؤ / الہ آباد،12؍جنوری ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا ) مشہور کہانی نگار دودھناتھ سنگھ کا جمعرات دیر رات انتقال ہو گیا۔ گزشتہ کئی دنوں سے وہ الہ آباد کے فینکس ہسپتال میں داخل تھے۔ کینسر کے عارضہ میں مبتلا دودھناتھ سنگھ کو بدھ کی رات دل کا دورہ پڑا تھا۔ انہیں وینٹی لیٹر پر شفٹ کر دیا گیا تھا جہاں انہوں نے جمعرات دیر رات 12 بجے آخری سانس لی۔ ان کے اہل خانہ کے مطابق گزشتہ سال اکتوبر ماہ میں تکلیف بڑھنے پر دودھناتھ سنگھ کو نئی دہلی آل انڈیا انسٹیٹیوٹ میں دکھایا گیا۔ طبی معائنہ میں غدودی کینسر کی تصدیق ہونے پر ان کا وہیں علاج چلا ، 26 دسمبر کو انہیں الہ آباد لایا گیا۔ دو تین دن بعد طبیعت بگڑنے پر انہیں فینکس ہسپتال میں داخل کرایا گیا تھا ، اس کے بعد سے ان کا وہیں علاج چل رہا تھا۔دو سال پہلے ان کی بیوی نرملا ٹھاکر کا انتقال ہو گیا تھا۔ دودھناتھ سنگھ اپنے پیچھے دو بیٹے بہو، بیٹی۔داماد اور نواسوں سے بھرا پُرا خاندان چھوڑ گئے ہیں۔ ۔غور طلب ہے کہ بنیادی طور پر بلیا کے رہنے والے دودھناتھ سنگھ نے الہ آباد یونیورسٹی سے ایم اے کیا اور یہیں وہ ہندی کے استاد بھی مقرر ہوئے۔ 1994 میں ریٹائرمنٹ کے بعد سے لکھنے اورادبی تنظیم کے ساتھ وہ فعال رہنے لگے ۔ انہیں کئی ایوارڈ بھی ملے ہیں ، ان کی تخلیقات میں ’’ سپاٹ چہرے والا آدمی ‘‘ جیسی تخلیق کافی مقبول ہوئی ۔ انہیں کئی سرکاری و غیر سرکاری اعزاز و ایوارڈ بھی مل چکا ہے ۔ 

ایک نظر اس پر بھی

جے پی سی سے جانچ کرانے کا راستہ ا بھی کھلا ہے، عام آدمی پارٹی نے کہا،عوام کی عدالت اورپارلیمنٹ میں جواب دیناہوگا،بدعنوانی کے الزام پرقائم

آپ کے راجیہ سبھا رکن سنجے سنگھ نے کہا ہے کہ رافیل معاملے میں جمعہ کو آئے سپریم کورٹ کے فیصلے کے باوجود متحدہ پارلیمانی کمیٹی (جے پی سی) سے اس معاملے کی جانچ پڑتال کرنے کا اراستہ اب بھی کھلا ہے۔

رافیل پر سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ، راہل گاندھی معافی مانگیں: بی جے پی

فرانس سے 36 لڑاکا طیارے کی خریداری کے معاملے میں بدعنوانی کے الزامات پر سپریم کورٹ کی کلین چٹ ملنے کے بعد کانگریس پر نشانہ لگاتے ہوئے بی جے پی نے جمعہ کو کہا کہ کانگریس پارٹی اور اس کے چیئرمین راہل گاندھی ملک کو گمراہ کرنے کیلئے معافی مانگیں۔