اُترکنڑا میں بلدی اداروں کے انتخابات میں جیت درج کرنا، کانگریس، جے ڈی ایس اور بی جے پی کے لئے بن گیا ہے ناک کا سوال

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 7th August 2018, 10:50 PM | ساحلی خبریں |

کاروار 7؍اگست (ایس او نیوز) چند مہینے قبل ہی اسمبلی الیکشن میں اپنی اپنی پارٹی کو جیت دلانے کے لئے دن رات بھاگ دوڑ کرنے کے بعد اب جو بلدی اداروں کے لئے انتخابات کا اعلان ہوا ہے تو کانگریس ، جے ڈی ایس اور بی جے پی جیسی تینوں سیاسی پارٹیوں کے لیڈروں کے پسینے چھوٹنے لگے ہیں ، کیونکہ ان انتخابات میں بہتر کارکردگی دکھانا ہرایک پارٹی کے لئے اپنی عزت اور ناک کا سوال بن گیا ہے۔

کانگریس اور جے ڈی ایس ریاستی حکومت میں اختلاط اور شراکت میں پھنسے ہوئے ہیں اس کے ساتھ ہی انہیں مختلف بلدی اداروں میں اپنے امیدواروں کو نہ صرف کامیاب کروانا ہے بلکہ ان اداروں پر اپنی پارٹی کا اقتدار بنانے کے لئے جان توڑ کوشش کرنی ہے ، اس لحاظ سے ان دونوں   پارٹیوں کو ایک دوسرے کے آمنے سامنے ہوکر مقابلہ کرنے کی بھی نوبت آگئی ہے۔ دوسری طرف بی جے پی ہے۔ جس نے گزشتہ اسمبلی انتخابات میں عمدہ کارکردگی دکھاتے ہوئے 104 سیٹیں حاصل کی ہیں۔ اب اس کے لئے ضروری ہے کہ اپنی سابقہ کارکردگی کو اور زیادہ بہتر بنائے یا پھر کم از کم اس سے خراب تو ہونے ہر گز نہ دے۔

اس پس منظر میں اس مرتبہ کے بلدی اداروں کے انتخابات تینوں پارٹیوں کے لئے ان کے اپنے استحکام کا پیمانہ ثابت ہونے والے ہیں ، کیونکہ پھر کچھ مہینوں بعد انہیں پارلیمانی انتخابات کا بھی سامنا کرنا ہے۔ اس لئے بلدی انتخابات کو سامنے رکھ کر مقامی سیاسی لیڈران اپنا اپنا حساب و کتاب جوڑنے میں مصروف ہیں۔

کاروارسٹی میونسپل کاونسل اور انکولہ ٹاؤن میونسپل کاونسل، کاروار اسمبلی حلقے میں آتے ہیں۔ یہاں پرجے ڈی ایس کے آنند اسنوٹیکر کو پارٹی کے اندر اپنا مقام و مرتبہ بلند کرنے کے لئے جنتا دل کے امیدواروں کوزیادہ سے زیادہ تعداد میں جیت دلانا اور ان دونوں اداروں پر پارٹی کی گرفت کرنا ضروری ہوگیا ہے۔ جبکہ گزشتہ اسمبلی انتخاب میں شکست کا منھ دیکھنے والے رکن اسمبلی ستیش سائیل کے لئے اپنا کھویا ہوا وقار دوبارہ حاصل کرنا اور کانگریس کودونوں بلدی اداروں میں سے کم ازکم انکولہ میں تو سیاسی برتری دلانا ایک مشن کی حیثیت رکھتا ہے۔ تیسری طرف اس حلقے سے جیت درج کرنے والی بی جے پی کی رکن اسمبلی روپالی نائک ہے۔ اس کے لئے اپنی پوزیشن محفوظ رکھنا اور بی جے پی کو بلدی اداروں کے انتخاب میں بھی آگے لے جانا انتہائی ضروری ہوگیا ہے۔

کچھ ایسا ہی حال کمٹہ ، یلاپور اور دوسرے علاقوں کا ہے جہاں پر تینوں سیاسی پارٹیوں کے مقامی لیڈروں کا عزت اور وقار ان بلدی اداروں کے انتخابات میں داؤ پر لگا ہوا ہے۔ اور ہر لیڈر اپنی اپنی جگہ پر اپنی پارٹی کے امیدواروں کی جیت یقینی بنانے کے سرگرم دکھائی دے رہا ہے تاکہ پارٹی ہائی کمان کے پاس اس کی اہمیت بڑھ جائے اور آئندہ پارلیمانی انتخاب کے موقع پر بھی پارٹی ان پر اعتماد کرسکے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ ضلع کے عوام نے کیا سوچ رکھا ہے اور وہ کس کا مان سمان کرتے ہیں اور کس کو شکست کی ذلت سے دوچار کرتے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

#می ٹو لہر کی زد میں آگئے بی جے پی کے مرکزی وزیر سدانندگوڈا اورسابق وزیر شیوانند نائک 

ملک میں بھر میں کام یا پیشے سے متعلقہ مقامات پر مرد ساتھیوں کی طرف سے خواتین کی جنسی ہراسانی کے معاملات کو عام کرنے کی جو لہر’’ #می ٹو‘‘ (میرے ساتھ بھی ۔۔یا میں بھی)کے نام سے چل پڑی ہے اس کی زد میں فلمی اداکاروں کے بعد اب صحافی اور سیاست دان بھی آگئے ہیں۔

دبئی کے قریب عجمان میں شروع ہورہا ہے نوائط پرئمیر لیگ کا شاندار کرکٹ ٹورنامنٹ؛ پہلے نام درج کرنے والی چھ ٹیموں کو ملے گا ٹورنامنٹ میں موقع

متحدہ عرب امارات کے شہر عجمان میں جنوری 2019 کو نوائط پرئمیر لیگ (این پی ایل) کاشاندار کرکٹ ٹورنامنٹ منعقد کیا جارہا ہے ، جس  میں دبئی یا متحدہ عرب امارات کے شہروں میں مقیم  بھٹکل، شرالی، مرڈیشور اور منکی کے کھلاڑی اپنے جوہر دکھلا سکیں گے۔ اس بات کی اطلاع  این پی ایل کے کنوینر ...

ہوناور:پریش میستاکی پراسرار موت کے معاملے میں نیا خلاصہ۔ واردات سے پہلے بند کردیا گیا تھا سی سی کیمرہ !

ہوناور میں فرقہ وارانہ کشیدگی کے دوران پریش میستانامی نوجوان کی پراسرار موت کو سنگھ پریوار کی طرف سے فرقہ وارانہ قتل قرار دیا جارہا تھا۔لیکن سی بی آئی کی تحقیقات دوران اس معاملے نے اب ایک نیا رخ لے لیا ہے۔