بھٹکل میں برسات کی آمد آمد ہے۔ کچرے سے بھرے نالے ،سیلاب کا خطرہ سرپر ۔پوچھنے والا کوئی نہیں

Source: S.O. News Service | By Vasanth Devadig | Published on 27th May 2018, 3:04 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل 27؍مئی (ایس او نیوز)ابھی ایک ہفتے کے اندر مانسون کا موسم ریاست میں شروع ہونے والا ہے۔ بھٹکل سمیت ساحلی علاقوں میں مانسون سے پہلے والی برسات بھی ہونے لگی ہے۔ گرمی کی شدت سے تنگ آئے ہوئے لوگ برسات کی رم جھم کے انتظار میں ہیں کہ اس سے بڑی راحت ملنے والی ہے۔اسی کے ساتھ بھٹکل کے مضافاتی اور دیہی علاقوں میں ندیوں میں سیلاب آنے کاخدشہ ایک طرف ہے تو شہری علاقوں میں برساتی نالوں کے ابلنے اور سڑکوں پر سیلابی کیفیت پیدا ہونے کا خطرہ پوری طرح ابھر کر سامنے آرہا ہے۔

بھٹکل شہر میں برساتی پانی کی نکاسی کے لئے بنائے گئے نالے ہی اب ایک بڑا مسئلہ بن گئے ہیں۔ سیکڑوں کروڑ روپے کا بجٹ رکھنے والے بلدی اداروں کی طرف سے ان نالوں کی صفائی اور ان کو درست کرنے کی طرف پوری طرح دھیان نہیں دیا جارہا ہے۔بھٹکل بلدیہ کی طرف سے بڑے بڑے منصوبوں کی باتیں تو کی جاتی ہیں، لیکن بنیادی سہولتیں فراہم کرنے کی طرف کم ہی توجہ دی جاتی ہے۔اس بات کو سمجھنے کے لئے ہمیں برساتی نالوں اور گٹر کی صورتحال دیکھنا ہوگا۔ اکثر مقامات پر ان نالوں میں مٹی ، پتھر اور کچرا بھرا پڑا ہے۔بعض جگہوں پر یہ نالے گندے پانی سے بھرے ہوئے ہیں۔ابھی تھوڑی سی برسات ہوئی تو دیکھا گیا کہ اکثر نالے پانی سے بھر کر ابلنے لگے۔ایسا لگتا ہے کہ اب کے بارش ہونے لگی تو پھر لوگوں کو نالوں سے سڑک پر بہتے ہوئے پانی کی وجہ سے چلنے کے لئے راستہ تلاش کرنے کی ضرورت پیش آسکتی ہے۔

بھٹکل کے نالوں کی حالت دیکھ کر ایسا محسوس ہوتا ہے کہ ہر سال کی طرح امسال بھی سڑکوں پر سیلاب کی صورتحال پید اہوگی اور لوگوں کو ایک طرف اپنی موٹر گاڑیاں ندیوں اور تالابوں جیسے پانی میں دوڑانے کی ضرورت پیش آئے گی تو دوسری طرف پیدل چلنے والوں کو ایک ہاتھ میں چھتری اور دوسرے ہاتھ میں دکانوں سے خریدے گئے سامان کی تھیلیاں سنبھالے پانی سے بچتے بچاتے گزرنے کی مشکل برداشت کرنی پڑے گی۔پھر طلبہ کو اپنے کپڑے اور بستے سنبھال کر برستی بارش اور سیلابی راستوں سے گزرتے ہوئے دیکھنا پڑے گا۔

قلب شہر بھٹکل پر ہی نظر دوڑائی جائے تو شمس الدین سرکل کے قریب ساگر روڈ پر برساتی نالوں کی کیا حالت ہے، اُس کا اندازہ تصاویر سے ہی لگایا جاسکتا ہے۔ نالوں کی صفائی نہ ہونے کی وجہ سے سرکل پر ہرسال بارش ہوتے ہی  بارش کا پانی بھاری مقدار میں جمع ہوجاتا ہے، مگر اتنا سب کچھ معلوم ہونے کے بائوجود مانسون شروع ہونے سے پہلے ان نالوں کی صفائی نہیں کی جاتی۔ 

اس تعلق سے جب بھٹکل بلدیہ کے چیف آفیسر وینکٹیش ناؤڈا سے سوال کیا گیا توا انہوں نے بتایا  کہ بلدیہ کے حدود میں ضروری مقامات پرنالوں کو درست کیا گیا ہے۔ مزید کچھ کام باقی ہے جس کے لئے ٹینڈر حاصل کیے جاچکے ہیں۔ اب وہاں پر بھی جلد ہی  کام شروع ہونے والاہے۔

یہاں پر برساتی نالوں اور گٹرکی ابتر حالت کا مسئلہ بہت پرانا ہونے کے باوجود کوئی بھی ا س کو صحیح ڈھنگ سے حل کرنے کی کوشش کرتا نظر نہیں آرہا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ انتخابی بخار سے ابھی تک پوری طرح صحت یاب نہ ہونے والے عوامی نمائندوں کو نالوں کی بری حالت نظر ہی نہیں آرہی ہے۔اور عوام کے مقدر میں پھر ایک بار برسات کا موسم اور ا س کے ساتھ پھر ایک بار سیلاب کی دشواریاں رکھی ہوئی ہیں۔

بھٹکل کے مضافاتی علاقوں میں حالت کچھ اس سے مختلف نہیں ہے۔کچھ گرام پنچایت میں افسروں کو شاید معلوم ہی نہیں ہے کہ برسات کا موسم سر پر آگیا ہے۔یہاں پر بھی نالوں کو برساتی پانی کی نکاسی کے لئے صاف نہیں کیا گیا ہے۔کچرے اور گندے پانی سے بھرے ہوئے یہ نالے عوام اور افسران کا منھ چڑاتے نظر آتے ہیں۔نالوں کے اندر اورآس پاس جھاڑ جھنکار اور پودے اُگ آئے ہیں۔ جانوروں نے اپنا ٹھکانہ بنالیا ہے۔سڑکوں پر گڈھے الگ سے مسائل پیدا کررہے ہیں۔کام کرنے والے سستی اورکاہلی کا شکار ہیں تو کام کروانے والے نہ جانے کونسی جنتوں میں رہتے ہیں کہ انہیں یہاں زمین کی حقیقت کا پتہ نہیں چلتا۔

عوام کا حال یہ ہے کہ انہیں اس بات کی خبر ہی نہیں کہ کس سے شکایت کریں اور اگر شکایت کریں گے بھی تو ا س کا نتیجہ صفر ہی ہے ۔ تو پھر یونہی ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھ کرکیوں نہ برسات اور سیلاب کا انتظار کیا جائے!

ایک نظر اس پر بھی

کاروار: بارش ہونے پر پہاڑ کھسکنے کا خدشہ : عوام خوف زدہ

ریاست کے ضلع کورگ اور ریاست کیرلا  میں بارش کی وجہ سے جو سنگین حالات پیدا ہونے سے وہاں جو آفت بپا ہوئی ہے وہ تو سب کے سامنے ہے ، یہاں کاروار تعلقہ کے ارگا ، سنکروباگ میں  ایک پہاڑ جیسے تیسے کھود کر   ادھورہ چھوڑ دینے سے خطرے کی گھنٹی بجارہاہے، اب پہاڑ کو نکال باہر کرنے کے دوران ...

کاروارساحل پر بیرونی ریاستوں کی ماہی گیر کشتیاں : ہفتہ بھر سے لنگر ڈالے تمل ناڈو، کیرلا وغیرہ کی بوٹس

بحرہ عرب میں چلنے والی طوفانی موجوں کی تاب نہ لاکر گذشتہ ایک ہفتہ سے پڑوسی ریاستوں کی ماہی گیر کشتیاں کاروار ساحل پر ڈیرہ ڈالے ہوئے ہیں۔ جہاں انہیں کھانے پینے کا انتظام کیاجارہاہے، اسی طرح کاروار بندر گاہ سے پڑوسی ریاستوں کے ماہی گیر اناج وغیرہ خرید کر لے جارہے ہیں۔ کیرلا اور ...

بھٹکل کے قریب منکی میں زمین کو لے کر ایک شخص کاقتل، بیوی زخمی؛ ملزم گرفتار

پڑوسی تعلقہ ہوناور کے منکی میں زمین کے معاملے کو لے کر ایک بھائی نے دوسرے بھائی کا قتل کردیا جبکہ اُس کی بیوی جو بیچ بچائو کرنے کی کوشش کررہی تھی،  زخمی ہوگئی، واردات آج پیر دوپہر کو منکی کے  تالمکّی میں  پیش آئی ۔

بھٹکل میں یوم آزادی کے موقع پر ویژن انڈیا مشن فاؤنڈیشن کے زیراہتمام تحریری مقابلہ؛ جیتنے والوں کو انعامات کی تقسیم

ویژن انڈیا مشن فاؤنڈیشن کے ذریعے ہائی اسکو ل طلبہ کے لئے جو تحریری مقابلہ منعقد کیاگیا تھااس میں اول دوم اور سوم مقام پانے والے طلبہ کو جشن آزادی کے موقع پرمنکولی میں واقع فاؤنڈیشن کے دفتر میں منعقدہ پروگرام کے دوران انعامات تقسیم کیے گئے۔

مرحوم حضرت مولانا محمد سالم قاسمی کے کمالات و اوصاف ۔۔۔۔۔۔۔۔ بہ قلم: خورشید عالم داؤد قاسمی

دار العلوم، دیوبند کے بانی امام محمد قاسم نانوتویؒ (1832-1880) کے پڑپوتے، ریاست دکن (حیدرآباد) کی عدالتِ عالیہ کے قاضی اور مفتی اعظم مولانا حافظ محمد احمد صاحبؒ (1862-1928) کے پوتے اور بیسویں صدی میں برّ صغیر کےعالم فرید اور ملت اسلامیہ کی آبرو حکیم الاسلام قاری محمد طیب صاحب قاسمیؒ ...

اردو میڈیم اسکولوں میں نصابی  کتب فراہم نہ ہونے  سے طلبا تعلیم سے محروم ؛ کیا یہ اُردو کو ختم کرنے کی کوشش ہے ؟

اسکولوں اور ہائی اسکولوں کی شروعات ہوکر دو مہینے بیت رہے ہیں، ریاست کرناٹک کے 559سرکاری ، امدادی اور غیر امدادی اردو میڈیم اسکولوں اور ہائی اسکولوں کے لئے کتابیں فراہم نہ  ہونے سے پڑھائی نہیں ہوپارہی ہے۔ طلبا ، اساتذہ اور والدین و سرپرستان تعلیمی صورت حال سے پریشان ہیں۔

بھٹکل کڑوین کٹّا ڈیم کی تہہ میں کیچڑ اور کچرے کا ڈھیر۔گھٹتی جارہی ہے پانی ذخیرہ کی گنجائش

امسال ریاست میں کسی بھی مقام پر برسات کم ہونے کی خبرسنائی نہیں دے رہی ہے۔ عوام کے دلوں کو خوش کرنے والی بات یہ ہے کہ بہت برسوں کے بعد ہر جگی ڈیم پانی سے لبالب ہوگئے ہیں۔لیکن اکثریہ دیکھا جاتا ہے کہ جب برسات کم ہوتی ہے اور پانی کا قحط پڑ جاتا ہے تو حیران اور پریشان ہونے والے لوگ ...

سعودی عربیہ سے واپس لوٹنے والوں کو راحت دلانے کا وعدہ ؛ کیا وزیر اعلیٰ کمارا سوامی کو کسانوں کا وعدہ یاد رہا، اقلیتوں کا وعدہ بھول گئے ؟

انتخابات کے بعد سیاسی پارٹیوں کو اقتدار ملنے کی صورت میں کیے گئے وعدوں کو پورا کرنا بہت اہم ہوتا ہے۔ جنتادل (ایس) کے سکریٹری کمارا سوامی نے بھی مخلوط حکومت میں وزیرا علیٰ کا منصب سنبھالتے ہی کسانوں کا قرضہ معاف کرنے کا انتخابی وعدہ پورا کردیااور عوام کی امیدوں پر پورا اترنے کا ...