راہل ذات او رمذہب کے نام پر ملک کو تقسیم نہ کریں:شہنواز

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 12th July 2018, 1:55 AM | ملکی خبریں |

پٹنہ،11/جولائی(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)بھارتیہ جنتا پارٹی کے قومی ترجمان سید شہنواز حسین نے آج کہا کہ کانگریس صدر راہل گاندھی ووٹ کے لئے فرضی سیکولرزم کا لبادہ اوڑھ کر ذات اور مذہب کے نام پر ملک کو تقسیم نہ کریں۔مسٹر حسین نے یہاں پارٹی کے ریاستی دفتر میں نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ جب جب الیکشن آتا ہے تب مسٹر گاندھی کو مسلمانوں کی یاد آتی ہے۔ سپریم کورٹ نے مذہب اور ذات کی بنیاد پر سیاست نہیں کرنے کا حکم دیا تھا لیکن فرضی سیکولرزم کا لبادہ اوڑھے مسٹر گاندھی آج مسلم دانشوروں کو خطاب کریں گے۔ انہوں نے سوالیہ لہجے میں کہا کہ مسٹر گاندھی کو یہ واضح کرنا چاہئے کہ دانشوروں کی بھی کوئی ذات ہوتی ہے کیا؟ بی جے پی ترجمان نے الزام لگایا کہ مسٹر گاندھی ووٹ کے لئے مذہب اور ذات کے نام پر ملک کو تقسیم کرنے کی کوشش کررہے ہیں۔ کرناٹک میں کانگریس کوٹے کے ایک وزیر نے ملک کے ہر ضلع میں شرعی عدالت قائم کرنے کی وکالت کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس صدر مسٹر گاندھی اور یو پی اے کی چیئرپرسن سونیا گاندھی کو یہ واضح کرنا چاہئے کہ شرعی عدالت پر ان کی اور کانگریس پارٹی کا موقف کیا ہے۔؟مسٹر حسین نے کہا کہ ملک میں کانگریس کے ساٹھ سال برس تک حکومت کرنے کے بعد بھی مسلمان پسماندہ ہیں۔ بنکروں کے یہاں بجلی ابھی تک نہیں پہنچ سکی تھی لیکن وزیر اعظم نریندر مودی نے اپنے چار سال کے دور میں ہی انہیں بجلی فراہم کرادی ہے۔ اگر ساٹھ سال پہلے بنکروں اور دست کاروں کے گھروں میں بجلی پہونچ گئی ہوتی تو آج ان کی حالت کچھ اور ہی ہوتی۔انہوں نے کہاکہ بی جے پی کا یہ عہد ہے کہ ملک کو مذہب کے نام پر تقسیم نہیں ہونے دیں گے۔

ایک نظر اس پر بھی

لوک سبھا انتخابات میں نہ اتار کر وزیر اعظم نے اڈوانی ،جوشی کی توہین کی : کیجریوال

عام آدمی پارٹی کے سربراہ اروند کیجریوال نے منگل کو کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے لال کرشن اڈوانی اور مرلی منوہر جوشی جیسے سینئر رہنماؤں کو آئندہ لوک سبھا انتخابات میں نہیں اتار کر انکی توہین کی ہے۔