پیرس میں مظاہرے، ’ہنگامی حالت نافذ کی جا سکتی ہے‘

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 3rd December 2018, 12:36 AM | عالمی خبریں |

پیرس: 2/دسمبر (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)  فرانسیسی صدر ایمانوئل ماکروں نے ارجنٹائن سے وطن واپسی کے فوری بعد اتوار کے دن پیرس میں واقع تاریخی آرک دے ٹریومف کا دورہ کیا اور وہاں ہفتے کے دن ہوئے پرتشدد مظاہروں کی وجہ سے ہونے والے نقصان کا براہ راست معائنہ کیا۔خبر رساں ادارے روئٹرز نے بتایا ہے کہ فرانسیسی صدر ایمانوئل ماکروں نے اتوار کے دن پیرس میں تاریخی آرک دے ٹریومف( Arc de Triomphe) کا دورہ کیا۔ارجنٹائن کے دارالحکومت بیونس آئرس میں منعقد ہوئی جی ٹوئنٹی کانفرنس میں شرکت کے بعد وطن واپس پہنچنے پر ماکروں آرک دے ٹریومف گئے اور وہاں مظاہروں کی وجہ سے ہونے والے نقصانات کا مشاہدہ کیا۔ہفتے کے دن کئی ہزار مظاہرین نے اس مقام پر پرتشدد مظاہرے کیے جبکہ ساتھ ہی لوٹ مار اور املاک کو نقصان پہنچانے کے واقعات بھی رونما ہوئے۔ پیلے رنگ کی جیکٹوں میں ملبوس ان مظاہرین نے ایندھن کی قیمتوں میں ہونے والے اضافے کے خلاف مظاہرے شروع کر رکھے ہیں۔فرانسیسی ٹیلی وڑن چینلز پر نشر کیے گئے مناظر میں دیکھا جا سکتا ہے کہ مشتعل مظاہرین نے آرک دے ٹریومف کو نقصان پہنچایا اور کئی جگہوں پر نعرے بھی لکھ دیے۔ان مظاہروں کے بعد فرانسیسی حکومت نے ہنگامی حالت نافذ کرنے کو خارج از امکان قرار نہیں دے دیا ہے۔ تجویز دی گئی ہیکہ مستقبل میں ایسے مظاہروں کی روک تھام کی خاطر ایمرجنسی لگا دی جائے۔حکومتی ترجمان بینجاماں گریوَو نے کہا کہ ایسا لازمی نہیں کہ ہر ہفتے ہی اس طرح پرتشدد مظاہرے ہوں۔ تاہم انہوں نے کہا، ’’پبلک آرڈر اور سلامتی کو یقینی بنانے کی خاطر تمام آپشنز پر غور کیا جانا چاہیے۔‘‘بینجاماں گریوَو نے صحافیوں سے گفتگو میں کہا ہے کہ صدر ایمانوئل ماکروں اتوار کی شام اعلیٰ حکومتی عہدیداروں سے ملاقاتیں کریں گے۔ اس دوران حکومت اس طرح کے مظاہرین سے نمٹنے کی خاطر اپنی حکمت عملی کو طے کرنے کی کوشش کرے گی۔فرانسیسی حکومت کی طرف سے بتایا گیا ہے کہ ہفتے کے دن کم ازکم پانچ ہزار افراد نے مظاہرے کیے، جو پرتشدد رنگ اختیار کر گئے۔ اس دوران سکیورٹی فورسز نے مشتعل مظاہرین کو منشتر کرنے کی خاطر آنسو گیس کے شیل برسائے اور تیز دھار پانی برسایا۔سکیورٹی فورسز اور مظاہرین کے مابین تصادم کی وجہ سے متعدد پولیس اہلکار زخمی بھی ہوئے۔ اس دوران سو کے قریب مظاہرین کو گرفتار بھی کیا گیا۔

ایک نظر اس پر بھی

سری لنکا: مسلم مخالف فسادات میں ایک شخص ہلاک، مساجد کو نقصان

حکومتی وزیر رؤف حکیم کے مطابق مسلم مخالف فسادات میں ایک مسلمان ہلاک ہو گیا ہے جبکہ مسلمانوں کی املاک کو بھی نذر آتش کرنے کے واقعات سامنے آئے ہیں۔ رؤف حکیم کا تعلق مسلم کانگریس نامی سیاسی جماعت سے ہے۔ یہ سیاسی پارٹی حکومتی اتحاد میں شامل ہے۔ حکیم کے مطابق مشتعل افراد نے پیر تیرہ ...