اسٹیو فوربس کی نظر میں نوٹ بندی عوام کی جائیداد پر غیر اخلاقی ڈاکہ ہے

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 24th December 2016, 3:29 AM | ملکی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

نئی دہلی 23/دسمبر (ایس او نیوز/ ایجنسی)نوٹ بندی کو غیر اخلاقی مہم قرار دیتے ہوئے مشہور ومعروف انگریزی میگرئین فوربس کے چیف ایڈیٹر اسٹیو فوربس نے اسے عوامی جائیداد پرڈاکہ قرار دیا ہے۔ ان کے مطابق  نہ انسانی فطرت کبھی بدلی ہے، نہ بدلے گی، اور غلط کام کرنے والے لوگ غلط کام کرنے کے لئے راستہ ڈھونڈ ہی لیتے ہیں، اس لئے بھارت کی حکومت کی طرف سے کرپشن، کالے دھن اور دہشت گردی کے سائے سے نجات حاصل کرنے کے لئے اٹھائے گئے نوٹ بندی کے قدم سے کچھ حاصل نہیں ہو پائے گا.انہوں نے اپنے اداریہ میں لکھا ہے کہ سیارے کے آباد ہونے کے وقت سے ہی انسانی فطرت نہیں بدلی ہے. غلط کام کرنے والے کوئی نہ کوئی راستہ نکال ہی لیتے ہیں. دہشت گرد صرف کرنسی بدل دینے کی وجہ سے اپنی بری حرکتیں بند نہیں کر دیں گے، اور دولت کا ڈیجیٹائیزیشن ہونے میں کافی وقت لگنے والا ہے، وہ بھی اس صورت حال میں، جب مفت مارکیٹ کی اجازت دے دی جائے گی.

اسٹیو فوربس کے مطابق ٹیکس چوری سے بچنے کا سب سے آسان حل یہ ہے کہ عوام پر یکساں ٹیکس شرح، یا کم از کم بالکل سادہ اور کم شرح والی ٹیکس نظام نافذ کی جائے، جس کے نتیجے میں عوام کو ٹیکس چوری کرنا ہی بیکار لگنے لگے. سٹیو کے مطابق قانونی طور پر کاروبار کرنے میں آسانی اور عوام کو سہولت دی جائے تو بیشتر لوگ صحیح کاروبار کریں گے.

اسٹیو فوربس کا کہنا ہے کہ بھارت اس وقت نقدی کے خلاف حکومتوں کے دماغ میں چڑھی خواہشات کی سب سے زیادہ انتہائی مثال ہے. بہت سے ملک بڑی رقم کے نوٹوں کو بند کرنے کی سمت میں آگے بڑھ رہے ہیں، اور وہی دلیل دے رہے ہیں جو ہندوستان کی حکومت نے دیئے ہیں، لیکن یہ سمجھنے میں کوئی چوک نہیں ہونی چاہئے کہ اس کا حقیقی مقصد کیا ہے - آپ کی پرائیویسی پر حملہ کرنا اور آپ کی زندگی پر حکومت کا زیادہ سے زیادہ کنٹرول مسلط کرنا ہے۔

اسٹیو فوربس کے مطابق، ہندوستانی حکومت کی یہ سخت کارروائی غیر اخلاقی بھی ہے، کیونکہ کرنسی وہ چیز ہے جو لوگوں کی طرف سے پیدا ہوتی اشیاء کی نمائندگی کرتی ہے. کرنسی بالکل ویسا ہی وعدہ ہوتی ہے، جیسا کوئی سینما یا پروگرام میں شامل ٹکٹ ہوتی ہے، جو آپ کو سیٹ ملنے کی ضمانت دیتی ہے. اس طرح کے وسائل حکومتیں نہیں، لوگ پیدا کرتے ہیں. جو بھارت نے کیا ہے، وہ لوگوں کی جائیداد کی بہت بڑے پیمانے پر چوری ہے جو جمہوری طریقے سے منتخب حکومت کی طرف سے کئے گئے ہونے کی وجہ سے زیادہ چونکاتی ہے. ایسا کچھ وینیزوئیلا جیسے ملک میں ہوتا تو شاید اتنی حیرانی نہیں ہوتی. اور اس سے بھی کوئی حیرانی نہیں ہوتی کہ حکومت اس حقیقت کو چھپا رہی ہے کہ اس ایک قدم سے ایک ہی جھٹکے میں دسیوں ارب ڈالر کا نقصان ہونے جا رہا ہے.

اب بھارت کو گلوبل پائور ہائوس بننے کے لئے جو کام یقینی طور پر  کرنا ہے وہ   یہ ہے کہ حکومت انکم اور بزنس ٹیکس کی شرح کو کم کرے، اور پورے ٹیکس ڈھانچے کو آسان بنائے، روپے کو سوئس فرینک کی طرح طاقتور کرنسی میں تبدیل کرے اور قوانین کو کم سے کم کرے، تاکہ عوام کو بغیر کسی لاگت کےکچھ ہی منٹوں میں نیا کاروبار شروع کرنے میں آسانی ہو۔

خیال رہے کہ فوربس ایک ہفتہ وار‘ امریکی بزنس میگزین ہے-اس کے مضامین عمو ما صنعت اورتجارت سے متعلق ہو تے ہیں- فوربس اپنی رینکنگز کی وجہ سے خاصا مشہور ہے-اس کا ہیڈ کوارٹر نیو یارک میں ہےاور اس کا موجودہ مدیر اسٹیو فوربس ہے

ایک نظر اس پر بھی

منی شنکر ایئر کی رکنیت دوبارہ بحال ،مودی کیخلاف منفی تبصرہ پرکیا گیا تھا معطل 

گجرات اسمبلی انتخابات مودی کے لیے نیچ آدمی لفظ کا استعمال کرنے پر معطل منی شنکر ایئر کی کانگریس میں بنیادی رکنیت ایک بار پھر بحال کر دی گئی ہے ۔یہ فیصلہ پارٹی کی انتظامی کمیٹی کی سفارش کے بعد لیا گیا ہے۔

سیلاب متاثرہ کیرالہ کی مدد کے لیے اکھلیش یادونے کی جذباتی اپیل 

کیرالہ اب صدی کی سب سے بڑی تباہی کا شکار ہے۔گزشتہ 100 سالوں میں کیرل نے ایسی تباہی نہیں دیکھی تھی، جس کی مار ابھی وہ جھیل رہا ہے۔ سیلاب سے تباہ کیرالہ اور وہاں کے لوگوں کے لئے چاروں طرف سے مدد کے ہاتھ اٹھ رہے ہیں۔

مظفر پورشیلٹرہوم: منجو ورماکے خلاف آرمس ایکٹ کے تحت مقدمہ درج

مظفر پورشیلٹرہوم جنسی تشدد معاملے میں بہار کی سابق سماجی فلاح وبہبودکی وزیر منجو ورما کی رہائش گاہ پر ہوئے سی بی آئی کے چھاپے کے دوران 50کارتوس ملنے کے بعد ورما اور ان کے شوہر کے خلاف ایف آئی آر درج کر لی گئی ہے۔

مرحوم حضرت مولانا محمد سالم قاسمی کے کمالات و اوصاف ۔۔۔۔۔۔۔۔ بہ قلم: خورشید عالم داؤد قاسمی

دار العلوم، دیوبند کے بانی امام محمد قاسم نانوتویؒ (1832-1880) کے پڑپوتے، ریاست دکن (حیدرآباد) کی عدالتِ عالیہ کے قاضی اور مفتی اعظم مولانا حافظ محمد احمد صاحبؒ (1862-1928) کے پوتے اور بیسویں صدی میں برّ صغیر کےعالم فرید اور ملت اسلامیہ کی آبرو حکیم الاسلام قاری محمد طیب صاحب قاسمیؒ ...

اردو میڈیم اسکولوں میں نصابی  کتب فراہم نہ ہونے  سے طلبا تعلیم سے محروم ؛ کیا یہ اُردو کو ختم کرنے کی کوشش ہے ؟

اسکولوں اور ہائی اسکولوں کی شروعات ہوکر دو مہینے بیت رہے ہیں، ریاست کرناٹک کے 559سرکاری ، امدادی اور غیر امدادی اردو میڈیم اسکولوں اور ہائی اسکولوں کے لئے کتابیں فراہم نہ  ہونے سے پڑھائی نہیں ہوپارہی ہے۔ طلبا ، اساتذہ اور والدین و سرپرستان تعلیمی صورت حال سے پریشان ہیں۔

بھٹکل کڑوین کٹّا ڈیم کی تہہ میں کیچڑ اور کچرے کا ڈھیر۔گھٹتی جارہی ہے پانی ذخیرہ کی گنجائش

امسال ریاست میں کسی بھی مقام پر برسات کم ہونے کی خبرسنائی نہیں دے رہی ہے۔ عوام کے دلوں کو خوش کرنے والی بات یہ ہے کہ بہت برسوں کے بعد ہر جگی ڈیم پانی سے لبالب ہوگئے ہیں۔لیکن اکثریہ دیکھا جاتا ہے کہ جب برسات کم ہوتی ہے اور پانی کا قحط پڑ جاتا ہے تو حیران اور پریشان ہونے والے لوگ ...

سعودی عربیہ سے واپس لوٹنے والوں کو راحت دلانے کا وعدہ ؛ کیا وزیر اعلیٰ کمارا سوامی کو کسانوں کا وعدہ یاد رہا، اقلیتوں کا وعدہ بھول گئے ؟

انتخابات کے بعد سیاسی پارٹیوں کو اقتدار ملنے کی صورت میں کیے گئے وعدوں کو پورا کرنا بہت اہم ہوتا ہے۔ جنتادل (ایس) کے سکریٹری کمارا سوامی نے بھی مخلوط حکومت میں وزیرا علیٰ کا منصب سنبھالتے ہی کسانوں کا قرضہ معاف کرنے کا انتخابی وعدہ پورا کردیااور عوام کی امیدوں پر پورا اترنے کا ...