سڑکوں گڑھوں کے باعث موت ناقابل قبول، سرحد پرہوئی اموات سے زیادہ یہ اعدادوشمارہیں:سپریم کورٹ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 6th December 2018, 10:13 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،6دسمبر(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) سپریم کورٹ نے سڑکوں پر گڑھوں کی وجہ سے گزشتہ پانچ سال کے دوران ہوئے حادثات میں 14926لوگوں کی موت پر جمعرات کو تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے ناقابل قبول قرار دیا۔جسٹس مدن بی لوکور، جسٹس دیپک گپتا اور جسٹس ہیمنت گپتا کی بنچ نے کہا کہ سڑکوں پر گڑھوں کی وجہ سے اموات کے اعداد و شمارشاید سر حد پر یا دہشت گردوں کی طرف کئے گئے قتل سے زیادہ ہے۔بینچ نے کہا کہ 2013-2017کے درمیان سڑک پر گڑھوں کی وجہ سے موت کے اعداد و شمار صرف یہ ظاہر کرتے ہیں کہ متعلقہ حکام سڑکوں کی مناسب دیکھ بھال نہیں کررہے ہیں۔ہندوستان میں سڑکوں پرگڑھوں کی وجہ سے موت کے معاملے میں سپریم کورٹ کے سابق جج کی عدالت ایس رادھاکرشن کی سربراہی والی سپریم کورٹ کے روڈ سیفٹی کمیٹی کی رپورٹ پرمرکزسے جواب طلب کیا ہے۔عدالت نے اس معاملے کو جنوری میں سننے کیلئے درج کیا ہے۔سپریم کورٹ نے 20جولائی کو موت کے واقعات پر تشویش ظاہر کی کہ ایسے حادثات میں موت کے اعداد و شمار دہشت گردی کے حملوں میں ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد سے زیادہ ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

پروٹوکول توڑنے میں مودی نے عمران سے مقابلہ کیا، سفارتی ناکامی پر جواب دیں: کانگریس

کانگریس نے سعودی عرب کے شہزادہ (ولی عہد) محمد بن سلمان کا پروٹوکول سے الگ جاکرخوش آمدید کئے جانے کو لے کر بدھ کو وزیر اعظم نریندر مودی پر حملہ بولا اور الزام لگایا کہ پروٹوکول توڑنے میں مودی تو گویا پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کے ساتھ، جیسے مقابلہ کر رہے ہیں۔

پلوامہ حملہ: اب آندھرا پردیش کے وزیراعلیٰ چندرا بابو نائیڈو نے مودی حکومت کو گھیرا، کہا، قومی سلامتی خطرے میں ہے

پلوامہ دہشت گردانہ حملے کو لے کر پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کے بیان پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے آندھرا پردیش کے وزیراعلیٰ این چندرا بابو نائیڈو نے مرکز کی مودی حکومت پر نشانہ لگایا ہے۔

این سی ڈی آرسی نے آپریشن کے دوران لاپرواہی برتنے والے ڈاکٹر متاثرہ خاندان کو 2.7 لاکھ روپے ادا کرنے کا حکم دیا

قومی صارفین تنازعہ سراغ رساں کمیشن(این سی ڈی آرسی) نے آپریشن کے دوران لاپرواہی کی وجہ سے ایک خاتون کی موت کے معاملے میں تین ڈاکٹروں کو متاثر خاندان کو پر 2.7 لاکھ روپے ادا کرنے کا حکم دیا ہے۔