پرتگال کے جنگل میں خوفناک آتشزدگی، ہلاکتوں کی تعداد 43تک جا پہنچی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 19th June 2017, 1:34 PM | عالمی خبریں |

پرتگال،18؍جون(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا)پرتگال کے جنگل میں لگنے والی آگ خطرناک صورتحال اختیار کر گئی ہے اور اس سے مرنے والوں کی تعداد 43ہو گئی جب کہ 50سے زائد افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات بھی ہیں۔حکام کا کہنا ہے کہ پیدروگاو گرانڈے کے علاقے میں لگنے والی اس آگ کو بجھانے کے لیے سیکڑوں کارکنان مصروف ہیں جب کہ اسپین کے امدادی کارکان بھی معاونت فراہم کر رہے ہیں۔وزیراعظم انتونیو کوسٹا کا کہنا تھا کہ بدقسمتی سے جنگلاتی آگ کے حوالے سے یہ بظاہر حالیہ برسوں میں سب سے بڑا سانحہ ہے۔" ان کے بقول ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔داخلہ کے وزیر مملکت جارج گومز کا کہنا ہے کہ آگ کے شعلے بہت تیزی سے تباہی مچا رہے ہیں۔حکام کے مطابق زیادہ تر ہلاکتیں ان افراد کی ہوئیں جو اپنی گاڑیوں میں متاثرہ علاقے سے نقل مکانی کر رہے تھے کہ دھوئیں کے باعث دم گھٹنے کی وجہ سے موت کا شکار ہوئے۔

سولہ افراد اس وقت ہلاک ہوئے جب ان کی گاڑیاں آگ کی زد میں آئیں اور وہ ان میں سے باہر نکلنے میں کامیاب نہ ہو سکے۔پرتگال کو ہفتہ کو شدید گرم لہر کا سامنا کرنا پڑا اور یہاں درجہ حرارت 40درجے سینیٹی گریڈ سے بھی تجاوز کر گیا۔حکام کے بقول رات گئے ملک کے مختلف جنگلوں میں 60مقامات پر آگ بھڑی اٹھی جنہیں بجھانے کے لیے 1700کے لگ بھگ کارکنان حصہ لے رہے ہیں۔وزیر اعظم کوسٹا کا کہنا تھا کہ تیز گرم ہواوں کی وجہ سے آگ مزید تیزی سے پھیلی اور متعدد متاثرہ دیہاتوں سے لوگوں کی نقل مکانی میں معاونت فراہم کی جا رہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کابل:حسّاس سفارتی زون میں راکٹ حملہ

افغانستان میں پولیس نے بتایا ہے کہ پیر کی شام افغان دارالحکومت کابل میں ایک راکٹ سخت پہرے والے سفارتی زون میں آ کر گرا۔یہ واقعہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے افغانستان کے حوالے سے اپنی حکمت عملی کے بارے میں متوقع اعلان سے چند گھنٹے قبل پیش آیا۔

ISنے کیا شفیع ارمارکے شام میں مارے جانے کا اعلان؛ پہلے بھی عام ہوئی تھی مرنےکی خبر

کچھ عرصے پہلے میڈیا میں یہ خبر عام ہوئی تھی کہ بھٹکل سے تعلق رکھنے والے شفیع ارمار کو شام میں سرگرم دہشت گرد تنظیم اسلامک اسٹیٹ کا اہم ترین ایجنٹ ہونے کی وجہ سے امریکہ نے اسے دنیا کامطلوب ترین دہشت گرد global terrorist قرار دیا ہے۔