سی آر زیڈ 3کے تحت آنے والے علاقوں میں نئی تعمیرات پر پابندی۔ نئے نقشے میں ضلع شمالی کینرا کے200سے زائددیہات شامل

Source: S.O. News Service | By Staff Correspondent | Published on 6th November 2018, 8:23 PM | ساحلی خبریں |

کاروار6؍نومبر (ایس او نیوز) ساحلی علاقے میں ماحولیات اور آبی پیداوار کے تحفظ کے لئے جو ’کوسٹل ریگولیشن زون‘(سی آر زیڈ) کا قانون بنایا گیاہے اس کے تحت آنے والے علاقوں کا ازسر نو نقشہ سنٹرل گرین ٹربیونل کے حکم کے مطابق تیار کیاگیا ہے اور کچھ قوانین میں ترمیم کی گئی ہے۔ جس کی وجہ سے ایک طرف کچھ علاقوں کے لوگوں کو اس سے راحت ملی ہے تو کچھ دیگر مقامات پر مزید دشواریاں پیدا ہوگئی ہیں۔

سی آر زیڈ میں آنے والے علاقوں کو ایک تا پانچ نمبر زمروں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ اس میں جو علاقے سی آر زیڈ 3میں شامل کیے گئے ہیں وہاں پر اب کسی بھی قسم کی نئی تعمیرات کی اجازت نہیں ملے گی۔یہ وہ زمرہ ہے جوسمندر، ندی، دریا اوربیک واٹرس والے مقامات پر ہائی ٹائیڈ لائن(جوار،پانی کا چڑھاؤ)سے 200میٹرسے 500 تک کے علاقے پر لاگو ہوتا ہے اوریہاں کوئی بھی نئے مکان یا دوسری نئی تعمیرات کے لئے اجازت نہیں ملے گی۔ البتہ فی الحال یہاں پر جو بھی تعمیرات موجود ہیں انہیں باقی رہنے دیا جائے گا۔اس زمرے والے علاقے میں مچھلیاں پکڑنے کی اجازت تو رہے گی لیکن ریت نکالنے کی اجازت نہیں رہے گی۔

جبکہ سی آر زیڈ 5کا جو زمرہ ہوتا ہے اسے قانون کے مطابق زیر آب حیاتیات کے لحاظ سے بہت ہی زیادہ حسّاس علاقہ قراردیا گیا ہے۔اور یہاں ہر قسم کی تعمیراتی یا ماحول پر اثر اندز ہونے والی سرگرمیوں پرمکمل پابندی رہے گی، جس میں ندیوں سے ریت نکالنا بھی شامل ہے۔

نئے نقشے کے تحت سی آر زیڈ زمرہ2میںآنے والے علاقے کی مزید توسیع کی گئی ہے اور اس میں ضلع شمالی کینرا کے 200سے زائد دیہاتوں کو شامل کیا گیا ہے۔ اس زمرے کی توسیع کی وجہ سے ترقی اور تعمیرات میں آسانی ہونے کی بات تو کہی جارہی ہے مگر کچھ قانونی پیچیدگیاں ایسی ہیں جس سے عوام کو مزید مشکلات کا سامنا بھی کرنا پڑے گا۔سی آر زیڈ 2کے احاطے میں آنے والے مقامات پر عام لوگوں کو تعمیرات کے لئے آسانی ہوگی۔

ایک نظر اس پر بھی

چیتے کی کھال فروخت کرنے کے دوران کنداپور میں بھٹکل کے پانچ افراد سمیت دس گرفتار

یہاں شاستری سرکل کے قریب غیر قانونی طورپر چیتے کی کھال فروخت کرنے کے الزام میں بینگلور کی سی آئی ڈی فوریسٹ یونٹ  نے دس افراد کو گرفتار کرلیا ہے جس میں پانچ کا تعلق بھٹکل، تین کا تعلق بیندور اور ایک ایک کا تعلق ، منڈگوڈ اور  ہوناورسے ہے۔ گرفتاری کی یہ واردات جمعہ کی دوپہر کو ...

مینگلور کے قریب پڈیل ہائی وے پر گیس ٹینکر اُلٹ گئی؛ گیس رسنے کی اطلاع کے بعد نیشنل ہائی وے بند

یہاں پڈیل۔ مرولی ہائی وے پر ایک گیس سے بھری ٹینکر اُلٹ جانے سے  گیس رسنا شروع ہوجانے  سے نیشنل  ہائی وے کو پولس نے بند کردیا ہے جس کے نتیجے میں  سڑک کے دونوں کنارے  ٹریفک نظام درہم برہم ہوگیا ۔ بتایا گیا ہے کہ پولس نے حفاظتی اقدامات کے تحت آس پاس کے سبھی علاقوں کے مکینوں کو ...

کاروار:انکولہ ۔ہبلی ریلوے لائن کی سدراہ بنے ماحولیاتی این جی اوز کو ملنے والی مالی امداد کی جانچ کریں : رکن اسمبلی روپالی نائک کامرکزی ریلوے وزیر سے مطالبہ

ریاست کے ساحلی علاقے سے شمالی کرناٹک  کو جوڑنے والی ’قسمت کی ریکھا‘ انکولہ ۔ ہبلی ریلوے لائن کی تعمیرمیں جو ماحولیاتی اداروں ، این جی اوزاور ماہرین سدراہ بنے ہوئے ہیں دراصل یہ تمام  بیرونی ممالک کی  کروڑوں دولت کے تعاون سے بےبنیاد چیخ وپکار کررہے ہیں کاروار انکولہ کی رکن ...

کاروار میں انکولہ ۔ہبلی ریلوے لائن منصوبےکو جاری کرنےعوامی احتجاج : قومی شاہراہ بند کرنے پر احتجاجی پولس کی تحویل میں

انکولہ۔ ہبلی ریلوے لائن منصوبہ، سرحد علاقہ کاروار میں صنعتوں کا قیام سمیت مختلف مانگوں کو لے کر لندن برج پر قومی شاہراہ کو بند کرتے ہوئے احتجاج کی تیاری میں مصروف کنڑا چلولی واٹال پارٹی کے واٹال ناگراج سمیت 21جہدکاروں کو پولس نے گرفتار کرنے کے بعد رہاکردیا۔