کرناٹک انتخابات :گورنر نے آج مدعو نہیں کیا تو عدالت کا دروازہ کھٹکھٹائے گی کانگریس ۔جے ڈی ایس

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th May 2018, 12:05 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،16؍مئی ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا )کرناٹک میں اسمبلی انتخابات کے نتائج کے بعد اب وہاں کے سیاسی حالات کافی دلچسپ بنتے ہوئے نظر آرہے ہیں۔سبھی پارٹیاں حکومت سازی کی کوششوں میں مصروف ہیں اور اپنی اپنی حکومت بنانے کا دعوی کررہی ہیں ۔ ایک طرف جہاں یدی یورپا نے گورنر سے ملاقات کرتے اپنی حکومت سازی کا دعوی پیش کیا ہے تو وہیں کانگریس کا کہنا ہے کہ اگر بدھ تک اسے حکومت سازی کی دعوت نہیں دی جاتی ہے تووہ عدالت کا دروازہ کھٹکھٹائے گی ۔

ادھر خبروں کے مطابق کانگریس کے صدر راہل گاندھی نے پارٹی کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد سے گفتگو کی ہے اور انہیں حکومت کی تشکیل کیلئے پورا زور لگانے کیلئے کہا ہے۔ پارٹی نے یہ بھی کہا ہے کہ اگر گورنر نے پہلے بی جے پی کو حکومت سازی کیلئے مدعو کیا تو وہ عدالت جائے گی۔

دریں اثنا غلام نبی آزاد کا کہنا ہے کہ بی جے پی جمہوریت میں یقین نہیں رکھتی ہے۔ بنگلورو میں پارٹی دفتر کے باہر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے غلام نبی آزاد نے کہا کہ بی جے پی اور اس کی مرکزی قیادت جمہوریت میں یقین نہیں رکھتی ہے، صرف وہ دوسری پارٹی کو توڑنا چاہتی ہے ۔ لیکن ہمیں اپنے سبھی ممبران اسمبلیوں پر پورا یقین ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کے والک آوٹ اور کافی ہنگامہ آرائی کے درمیان کرناٹکا کے وزیراعلیٰ کماراسوامی نے اپنی اکثریت ثابت کرتے ہوئے فلور ٹیسٹ میں پائی کامیابی

کرناٹک ودھان سبھا میں فلورٹیسٹ کے دوران  کافی ہنگامہ آرائی اور بی جے پی اراکین کے والک آوٹ کے درمیان  کرناٹک کے نو منتخب وزیراعلیٰ کماراسوامی نے  فلور ٹیسٹ میں اپنی اکثریت ثابت کردی۔  کانگریس۔جے ڈی ایس گٹھ بندھن کو 117 ووٹ پڑے۔اس کے ساتھ ہی اب کرناٹک میں سیاسی ڈرامے بازی ...

گوا میں اتحادی جز گووا فارورڈ پارٹی کی دھمکی

بی جے پی کی قیادت والی گووا حکومت کا ایک جز گووا فارورڈ پارٹی نے آج کہا ہے کہ اگر ریاست میں جاری موجودہ کان کنی کے بحران کا حل نہیں ہوا تو وہ اگلے لوک سبھا انتخابات میں زعفرانی پارٹی کی حمایت نہیں کرے گی۔