کرناٹک انتخابات :گورنر نے آج مدعو نہیں کیا تو عدالت کا دروازہ کھٹکھٹائے گی کانگریس ۔جے ڈی ایس

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th May 2018, 12:05 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،16؍مئی ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا )کرناٹک میں اسمبلی انتخابات کے نتائج کے بعد اب وہاں کے سیاسی حالات کافی دلچسپ بنتے ہوئے نظر آرہے ہیں۔سبھی پارٹیاں حکومت سازی کی کوششوں میں مصروف ہیں اور اپنی اپنی حکومت بنانے کا دعوی کررہی ہیں ۔ ایک طرف جہاں یدی یورپا نے گورنر سے ملاقات کرتے اپنی حکومت سازی کا دعوی پیش کیا ہے تو وہیں کانگریس کا کہنا ہے کہ اگر بدھ تک اسے حکومت سازی کی دعوت نہیں دی جاتی ہے تووہ عدالت کا دروازہ کھٹکھٹائے گی ۔

ادھر خبروں کے مطابق کانگریس کے صدر راہل گاندھی نے پارٹی کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد سے گفتگو کی ہے اور انہیں حکومت کی تشکیل کیلئے پورا زور لگانے کیلئے کہا ہے۔ پارٹی نے یہ بھی کہا ہے کہ اگر گورنر نے پہلے بی جے پی کو حکومت سازی کیلئے مدعو کیا تو وہ عدالت جائے گی۔

دریں اثنا غلام نبی آزاد کا کہنا ہے کہ بی جے پی جمہوریت میں یقین نہیں رکھتی ہے۔ بنگلورو میں پارٹی دفتر کے باہر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے غلام نبی آزاد نے کہا کہ بی جے پی اور اس کی مرکزی قیادت جمہوریت میں یقین نہیں رکھتی ہے، صرف وہ دوسری پارٹی کو توڑنا چاہتی ہے ۔ لیکن ہمیں اپنے سبھی ممبران اسمبلیوں پر پورا یقین ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کانگریس تشہیری کمیٹی کے نئے صدر ایچ کے پاٹل نے عہدہ کا جائزہ لے لیا ملک کواچھے دن کا وعدہ کرکے اقتدار پرآئی بی جے پی کے لیڈروں نے ملک کوبے روزگاروں کا مرکز بنا دیاہے:وینو گوپال

سابق ریاستی وزیر ایچ کے پاٹل نے آج کرناٹک پردیش کانگریس تشہیری کمیٹی کے صدر کی حیثیت سے عہدہ کاجائزہ لے لیا ۔

بی جے پی کوابھیشک منوسنگھوی نے کہا ، کرناٹک میں کھلواڑہوتاتوقانونی منصوبہ تیارتھا

کرناٹک کے تازہ سیاسی واقعات کے پس منظر میں کانگریس کے سینئر لیڈر ابھیشیک منو سنگھوی نے جمعرات کو کہا کہ اگر بی جے پی ریاست کی مخلوط حکومت کو غیر مستحکم کرنے کے لیے اپنے ’آپریشن لوٹس‘پر آگے بڑھتی تو اس کومنہ توڑجواب دینے کے لیے کانگریس نے منصوبہ تیار کر رکھا تھا۔