کانگریس اور مذہب و ذات کی سیاست از:حفیظ نعمانی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 26th December 2016, 3:08 PM | مہمان اداریہ |

سید فیصل علی سہارا کے گروپ ایڈیٹر ہیں۔ انھوں نے کانگریس کے ایک لیڈر غلام نبی آزاد سے اترپردیش میں کانگریس کی پالیسی کے بارے میں کھل کر گفتگو کی۔ فیصل صاحب نے معلوم کیا کہ ۲۰۱۲ء کے الیکشن میں کانگریس کو صرف ۲۸ سیٹیں ملیں جو اب تک کی سب سے کم سیٹیں تھیں۔ جواب دیتے ہوئے آزاد صاحب نے کہا کہ میرے نزدیک اس کی کئی وجوہات ہیں۔ مثلاً آزادی سے پہلے ملک میں ذات اور مذہب کی تفریق نہیں تھی لیکن اب صرف یو پی میں ہی نہیں پورے ملک میں ذات اور مذہب کی بنیاد پر لوگ تقسیم ہوچکے ہیں۔ کانگریس پارٹی نے کبھی بھی ذات اور مذہب کی سیاست نہیں کی۔ اس کا مقصد ملک کو آزاد کرانا اور اس کے بعد ہندوستان کی تعمیر کرنا تھا۔

غلام نبی آزاد صاحب کے بارے میں ہم یہ تو نہیں بتا سکتے کہ وہ کانگریس میں کب آئے لیکن یہ حقیقت ہے کہ وہ جموں کشمیر کے رہنے والے ہیں اور کشمیر کی حیثیت ملک کے عام صوبوں جیسی نہ پہلے تھی اور نہ اب ہے۔ وہ ملک کی آزادی کے کافی دنوں کے بعد ملک کی سیاست میں آئے اور اب وہ قیادت کی اس صف میں ہیں جو ماں بیٹے اور بیٹی کے بعد پہلی صف کہی جاتی ہے۔ لیکن آج بھی صورت حال یہ ہے کہ انہیںیوپی کے الیکشن کا انچارج بنا کر بھیجا گیا ہے اور راج ببر کو اترپردیش کانگریس کا صدر بنا کر بھیجا گیا ہے۔ یعنی کانگریس کے الیکشن اور پارٹی کے ذمہ دار یہی دونوں ہیں اور یہ دونوں ایسے کسی اتحاد سے صاف انکار کررہے ہیں جس کی گفتگو مسٹر پی کے ملائم سنگھ اور اکھلیش یادو کرچکے ہیں اور بتا چکے ہیں کہ راہل گاندھی کے اشارہ پر یہ گفتگو ہورہی ہے۔

غلام نبی آزاد نے صاف صاف کہا ہے کہ کانگریس نے کبھی بھی ذات اور مذ ہب کی سیاست نہیں کی۔ ہم اگر یہ کہیں کہ ہم ان سے پہلے سے کانگریس کو دیکھ رہے ہیں اور اس سے وابستہ بھی رہے ہیں۔ اور ہم دعوے کے ساتھ کہہ رہے ہیں کہ صرف پنڈت نہرو کے زمانہ تک کانگریس نے ذات اور مذہب کی سیاست نہیں کی اس کے بعد ان کی بیٹی اور نواسوں نے صرف ذات اور مذہب کی سیاست کی اور آج بھی دہلی کی شکست خوردہ اور کامن ویلتھ کھیل کرانے میں ہر قسم کی بدعنوانی اور بے ایمانی کے الزامات میں ڈوبی ہوئی شیلا دکشت کو صرف اس لیے یوپی کا وزیر اعلیٰ بنانے کی تجویز سامنے لائی گئی کہ وہ برہمن ہیں اور اترپردیش کے برہمنوں کی طرح گروہ بند نہیں ہیں۔

مسلمانوں نے کانگریس کو جو دیا اس کا کوئی احاطہ نہیں کرسکتا۔ لیکن پنڈت نہرو کے دونوں نواسوں نے جیسی مذہب کی سیاست کی ہے اس کی وجہ سے ہی مسلمانوں کو کانگریس سے نفرت ہوگئی۔ سنجے گاندھی نے جو کیا وہ کون بھول سکتا ہے اور راجیو گاندھی کا بابری مسجد کا تالا کھلوانا اور اس پر احتجاج کی سزا میرٹھ کو اس طرح دلوانا کہ آج تک میرٹھ کی کمر سیدھی نہیں ہوئی اور راجیو گاندھی کا ان کے ساتھ دشمنی جیسا رویہ رکھنا ایسا ہے کہ اس کے بعد کوئی بھی کانگریسی مسلمان اگر صفائی دے تو ا یسا محسوس ہوتا ہے کہ یا تو وہ معصوم ہے یا مجبور ہے۔

غلام نبی آزاد نے یہ اعتراف تو کیا کہ مسلمانوں کے کانگریس سے دورہونے کے کئی اسباب ہیں ان میں بابری مسجد بھی ایک سبب ہے۔ کیا یہ معمولی بات ہے کہ 1948میں اس میں مورتیاں رکھوا کر تالا ڈلوایا۔ یہ کام پنت نے کیا اور نہرو جی نے وہ نہیں کیا جو کرنا چاہیے تھا۔ پھر راجیو گاندھی نے تالا کھلوایا اور نماز کی نہیں پوجا پاٹ کی اجازت دلائی اور نرسمہا راؤ نے اسے شہید کرادیا اور وہ اس کے بعد بھی وزیر اعظم بنے رہے۔ اسے یہ کہنا کہ بابری مسجد بھی ایک سبب ہے جبکہ سبب یہ ہے کہ پنڈت نہرو نے بار بار کہا کہ میں کسی مذہب کو نہیں مانتا۔ ثبوت یہ ہے کہ انھوں نے بیٹی کو ایک پارسی سے شادی کرنے کی اجازت دی اور بیٹی نے بیٹے کو عیسائی سے شادی کرنے کی اجازت دی لیکن ہندو ووٹوں کے لیے سب ہندو بن کر کھڑے ہوگئے۔ 

پنڈت جی نے مولانا آزاد سے جو تعلق رکھا اور بزرگ علماء کا جیسا احترام کیا یہ سب کو معلوم ہے۔رمضان شریف میں مسلم ملکوں کے سفیروں اور اپنے مسلم وزیروں کو روزہ افطار کرانا ان کی ہی روایت ہے۔ لیکن پہلے اندرا جی مسلمانوں سے دور ہوئیں اس کے بعد ان کے بیٹے اتنے دور ہوئے کہ مسلم پرسنل لا بورڈ کے ابتدائی دو ر میں ایک ملاقات میں مولانا علی میاں اور مولانا منت اللہ نے وزیر اعظم راجیو گاندھی سے کہا کہ اب ہمارے لیے آنے میں پریشانی ہوگی۔ گرمیاں بھی سخت ہیں اور رمضان شروع ہونے والے ہیں۔ اس کے جواب میں بھولے راجیو گاندھی نے کہا کہ آپ رمضان سردیوں میں کیوں نہیں کرلیتے ؟ گرمی کا موسم تو بہت سخت ہوتا ہے؟ یہ اس کے نواسے تھے جس نے افطار کو سرکاری تقریب بنایا اور راہل گاندھی کو جب ایک نایاب تصویر پنڈت جی اور مولانا آزاد کی دکھائی تو سنا ہے کہ انھوں نے مولانا کی تصویر پر انگلی رکھ کر کہا کہ یہ کون ہیں؟

اس کے بعد غلام نبی آزاد کا یہ کہنا کہ کانگریس نے کبھی ذات اور مذہب کی سیاست نہیں کی اور اس پر رونا کہ آج کل جو کتابیں بچوں کو پڑھائی جارہی ہیں ان میں اس کا کوئی ذکر نہیں ہے کہ ملک کو آزاد کرانے کے لیے کس نے جان دی کس نے قربانی دی اور کون جیل میں برسوں پڑا رہا۔ کیا یہ اس احسان فراموشی کا جواب نہیں ہے جو مسلمانوں نے آرادی کے لیے قربانی دی جو مالٹا کی جیل میں شیخ الہند پر ا ور ان کے ساتھ ان کے ساتھیوں پر گذری۔ یا جو مولانا حسرت موہانی نے قربانیاں دیں یا جو علماء کالے پانی، جزائر انڈمان نیکوبار بھیجے گئے اور وہیں اللہ کو پیارے ہوگئے۔ آزاد صاحب کا مسلمانوں کے بارے میں یہ کہنا کہ انھوں نے باضابطہ طور پر کوئی حکمت عملی نہیں اپنائی وہ کبھی ایس پی کے ساتھ گیا کبھی بی ایس پی کے ساتھ اور کبھی اپنی پارٹیاں بنا لیں۔ یہ صرف انھوں نے اس لیے کیا کہ کانگریس نے انہیں اپنا غلام یا بندھوا مزدور سمجھا اور صرف ان سے ووٹ لے لیے۔ اس کے بعد جو ایس پی یا بی ایس پی کے ساتھ گئے وہ ان کو جتانے کے لیے نہیں بلکہ اس لیے گئے کہ وہ کانگریس اور بی جے پی کو ہرانا چاہتے تھے اور آج بھی صورت حال یہی ہے کہ مسلمانوں کو غلام نبی آزاد کے انچارج بننے سے بھی کانگریس سے دلچسپی نہیں ہے۔

بہار میں مسلمانوں نے کانگریس کو ووٹ نہیں دیا بلکہ لالو اور نتیش کے محاذ کو کامیاب کرانے اور بی جے پی کو ہرانے کے لیے دیا اور اگر تمام اخباروں نے اور سب سے زیادہ اہمیت کے ساتھ سہارا نے جو چھاپا ہے کہ یوپی میں اتحاد کا اعلان جلد ہوجائے گا۔ تو اس وقت بھی مسلمان کانگریس کو نہیں بلکہ اس محاذ کو ووٹ دیں گے جو امت شاہ کی ۲۰۱۴ء کی قابلیت پر کالک پوتنے کے لیے بے چین ہیں اور دیکھ رہے ہیں کہ امت شا ہ مسلمانوں میں پھوٹ ڈالنے کے لیے نئے نوٹوں کی بوچھار کررہے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس کے بعد مرکزی حکومت کو دھمکی ۔۔۔۔۔ اعتماد کا اداریہ

گوا میں ہوئے ہندو تنظیموں کے اجلاس میں مرکزی حکومت کو دھمکی دی گئی ہے کہ اگر وہ 2023تک ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر نہیں کروائے گی تو ہندو تنظیمیں خود وہاں مندر تعمیر کرلیں گے کوئی قانون یا عدالت کا پاس و لحاظ نہیں رکھا جائے گا

جانوروں کی فروخت پر پابندی کے نام پر تنازعہ کھڑاکرنے کی ضرورت نہیں تھی (پرجا وانی کا اداریہ۔۔۔کنڑا سے ترجمہ)

ذبح کرنے کے مقصد سے گائے، بیل، سانڈ، بھینس ، چھوٹے بچھڑے اور اونٹوں کو جانوروں کے میلے اور مارکیٹ میں بیچنے پرمرکزی حکومت کی طرف سے لگائی گئی  پابندی سے ایک بڑا تنازعہ کھڑا ہوگیا ہے۔یہ پابندی اصل میں کوئی مناسب تدبیر ہی نہیں ہے۔ بی جے پی کی قیادت والی این ڈی اے حکومت کو گؤ ...

ہوشیار، خبردار۔۔۔۔۔۔۔از قلم : مدثر احمد

جب ہندوستان کی سرزمین پر مغل ، نواب اور نظام حکومت کررہے تھے اس وقت انکے پاس جو مال و دولت اور خزانے تھے انہیں اگر وہ صحیح طریقے سے استعمال کرتے تو آج کے مسلمان کسی کی مدد کے طلبگار نہ ہوتے اور مسلمان قوم ایک عزت دار قوم بن کر اس ملک میں دوسروں پر حکومت کرتی یا کم از کم حکومتیں ...

طلاق: مسلمانوں کا ایجنڈ ا کیا ہو؟ کنڑا ہفتہ وار’’ سنمارگہ‘‘ میں ایڈیٹر عبدالقادر کوکیلا کی تحریر

ملک بھر میں جاری طلاق کی بحث کا سدباب دوطریقوں سےکرسکتےہیں۔ پہلا یہ ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت والی مرکزی حکومت پر پورا الزام دھر کر خاموش ہوجائیں۔ دوسرا انہی موضوعات کو بنیاد مان کر مسلم ملت کی داخلی ترقی کے لئے حکمت عملی ترتیب دیں ۔ طلاق کے گرد گھومنے والی ٹی وی ...

جاسوسی اپنے ملک کے لئے؟ .... از : ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز

پاکستان کی فوجی عدالت نے ہندوستان کے سابق نیوی کمانڈر کلبھوشن سدھیر یادو کو سزائے موت سنائی ہے۔ جس پر ہندوستان کا شدید ردعمل فطری ہے۔ خود پاکستانی میڈیا نے فوجی عدالت کے اس فیصلے کو بعید از قیاس اور ہند۔پاک کشیدگی میں مزید اضافے کا سبب قرار دیا۔ کلبھوشن کی سزا پر عمل آوری کب ...