سی ایل پی اجلاس میں بیشتر اراکین اسمبلی شریک،آٹھ غیر حاضر اراکین میں سے چار کے خلاف کارروائی کی جائے گی: سدرامیا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 9th February 2019, 11:47 AM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو،9؍جنوری(ایس او نیوز) ریاست کی کانگریس جے ڈی ایس مخلوط حکومت کو گرانے کے لئے کانگریس اراکین اسمبلی کی خرید وفروخت کی تمام کوششیں آج اس وقت رائیگاں گئیں جب سابق وزیراعلیٰ اور کانگریس لیجسلیچر پارٹی لیڈر سدرامیا کی طرف سے بجٹ سے پہلے طلب کی گئی کانگریس لیجسلیچر پارٹی میٹنگ میں بیشتر اراکین اسمبلی نے شریک ہوکر پارٹی سے اپنی وفاداری کا ثبوت دیا۔

چار برگشتہ اراکین کے علاوہ دیگر چار اراکین اسمبلی سدرامیا کی اجازت کے ساتھ اجلاس سے غیر حاضر رہے ، اور اجازت لے کر غیر حاضر رہنے والے اراکین کی غیر حاضری کو خاطر میں نہیں لایا گیا البتہ چار برگشتہ اراکین اسمبلی رمیش جارکی ہولی ، بی ناگیندرا ، مہیش کمٹلی،اور امیش جادھو کو اسمبلی کی رکنیت سے نااہل قرار دینے کی کارروائی سدرامیا نے شروع کروادی تو دوسری طرف امیش جادھو کو کرناٹکا ویر ہاؤزنگ ڈیولپمنٹ کارپوریشن کا چیرمین منتخب کیاگیا تھا انہیں بھی اس عہدے سے ہٹاکر ایک اور رکن اسمبلی پرتاب گوڈا پاٹل کو مقرر کردیا۔

آج صبح ودھان سودھا کے کانفرنس ہال میں منعقد کانگریس لیجسلیچر پارٹی میٹنگ میں بیشتر اراکین اسمبلی کی شرکت کی تصدیق کرتے ہوئے سدرامیا نے بتایاکہ شیواجی نگر کے رکن اسمبلی روشن بیگ نے میٹنگ سے غیر حاضر رہنے کے لئے ان سے پیشگی اجازت حاصل کرلی ہے۔ اسی لئے ان پر وہپ لاگو نہیں ہوگی، اسی طرح جن دیگر اراکین اسمبلی نے اجازت لی ہے ان پر بھی وہپ لاگو نہیں کی جائے گی۔البتہ پچھلی دو میٹنگوں میں غیر حاضر چار اراکین اسمبلی پر نااہل قرار دینے کی کارروائی شروع کی جائے گی۔ کانگریس لیجسلیچر پارٹی میٹنگ میں بیشتر اراکین اسمبلی کی شرکت کے ساتھ ہی ریاست کی مخلوط حکومت کو گرانے کے لئے بی جے پی کی طرف سے جاری آپریشن کمل پر چوتھی مرتبہ پانی پھر گیا۔ 

ایک نظر اس پر بھی

کرناٹک میں ایک ہی دن 6257 کورونا پوزیٹیو معاملات ، 86 اموات

کرناٹک میں کورونا وائرس کا خوفناک پھیلاؤ رکنے اور تھمنے کا نام نہیں لے رہا ہے، ہر گزرتے لمحے اور دن کے ساتھ کورونا وائرس کے نئے معاملات میں اضافہ ہی ہوتاجار ہا ہے۔ ریاست میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا متاثرین کی تعداد تشویشناک حد تک اضافہ یکھا جارہا ہے۔ ریاست میں ایک ہی دن ...

کرناٹک: ایس ایس ایل سی سپلیمنٹری امتحانات ستمبر میں منعقد کئے جائینگے

ایس ایس ایل سی سپلیمنٹری امتحان آئندہ ماہ ستمبر میں منعقد کئے جانے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور دو ایک دن میں امتحان کی تاریخ اور ٹائم ٹیبل کا اعلان کردیا جائے گا۔ یہ بات کرناٹک سکینڈری ایگزامنیشن بورڈ کی ڈائرکٹر وی سو منگلا نے کہی۔

بنگلور میں احتجاجیوں اور پولس کے درمیان زبردست جھڑپ؛ پولس فائرنگ میں دو کی موت؛ فیس بُک پر توہین آمیز پوسٹ پرعوام نے کیا تھا پولس تھانہ کا گھیراو

 فیس بُک پر مبینہ طور پر  پیغمبر اسلام حضرت محمد ﷺ کے خلاف توہین آمیز مسیج پوسٹ کرنے پر سخت برہمی ظاہر کرتے ہوئے بنگلور کے جی ہلی پولس تھانہ کے باہر  جمع ہوکرایک فرقہ کے لوگوں نے جب احتجاج کیا تو یہی احتجاج بعد میں تشدد میں تبدیل ہوگیا جس کے نتیجے میں بتایا جارہا ہے کہ ...

اننت کمار ہیگڈے نے لگایابی ایس این ایل میں دیش دروہی افسران موجود ہونے کا الزام

اپنے متنازعہ بیانات کے لئے پہچانے جانے والے رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے نے الزام لگایا کہ بھارت سنچار نگم لمیٹڈ کے اندر دیش دروہی افسران بیٹھے ہوئے جس کی وجہ سے اس کے کام کاج میں کوئی ترقی نہیں ہورہی ہے۔ اس لئے آئندہ دنوں میں اس کی نج کاری (پرائیویٹائزیشن) کیا جائے گا۔

بنگلور: ٹرانسفرس کے احکامات ملتوی کرانے میں مبینہ طور پر با رسوخ اساتذہ کی لابی شامل، چار سال سے ڈگری کالجوں کے لکچررس کے تبادلے نہیں ہوسکے

ریاست کرناٹک کے سرکاری فرسٹ گریڈ کالجوں میں خدمات انجام دے رہے لکچررس کے تبادلے نہیں ہوسکے ہیں، جس کے سبب انہیں کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اس تعلق سے الزامات لگائے جارہے ہیں کہ  چند با رسوخ لکچررس کی طرف سے سیاسی اثر و رسوخ کا استعمال کرکے تبادلوں کی کاروائی ملتوی ...

باپ کی املاک پر بیٹی کا بیٹے کی طرح یکساں حق: سپریم کورٹ

سپریم کورٹ نے منگل کو ایک دور رس نتائج والے اپنے فیصلہ میں کہا ہے کہ ہندو غیر منقسم خاندان کی آبائی املاک میں بیٹی کو بیٹے کی طرح ہی حقوق حاصل ہوں گے، یہاں تک کہ اگر ہندو جانشینی (ترمیمی) ایکٹ 2005 کے نفاذ سے قبل ہی اس کے والد کی موت کیوں نہ ہوگئی ہو۔

بنگلور: ٹرانسفرس کے احکامات ملتوی کرانے میں مبینہ طور پر با رسوخ اساتذہ کی لابی شامل، چار سال سے ڈگری کالجوں کے لکچررس کے تبادلے نہیں ہوسکے

ریاست کرناٹک کے سرکاری فرسٹ گریڈ کالجوں میں خدمات انجام دے رہے لکچررس کے تبادلے نہیں ہوسکے ہیں، جس کے سبب انہیں کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اس تعلق سے الزامات لگائے جارہے ہیں کہ  چند با رسوخ لکچررس کی طرف سے سیاسی اثر و رسوخ کا استعمال کرکے تبادلوں کی کاروائی ملتوی ...