کمارسوامی کا الزام، جمہوریت کو منہدم کرنا چاہتا ہے مرکز

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th May 2018, 8:04 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،17؍مئی (ایس او نیوز؍ آئی این ایس انڈیا ) جنتا دل (ایس) کے رہنما ایچ ڈی کمارسوامی نے آج کہا کہ نریندر مودی حکومت ملک میں جمہوریت کو تباہ کرنا چاہتی ہے۔ ساتھ ہی انہوں نے مرکز پر کرناٹک میں کانگریس جد (ایس)اتحاد کے ممبران اسمبلی کو ڈرانے کے لئے ای ڈی جیسی ایجنسیوں کا استعمال کرنے کا الزام لگایا۔بی جے پی لیڈر بی ایس یدیورپا کے کرناٹک کے وزیر اعلی کے طور پر حلف لینے کے بعد کمارسوامی نے کہا کہ غیر بی جے پی پارٹیوں کو ’ملک کے مفادات کی حفاظت کرنے کے لئے ‘اپنے اختلافات بھلا کر مصافحہ کرنا چاہئے۔یدیورپا کو حکومت بنانے کے لئے مدعو کرنے کے، گورنر وجوبھائی والا کے فیصلے کو’غیر آئینی‘بتاتے ہوئے سابق وزیر اعلی نے مرکز پر سخت ناراضگی ظاہر کی۔انہوں نے کہاکہ یہ مرکزی حکومت کیسا برتاؤ کر رہی ہے؟ یہ نریندر مودی حکومت ملک میں جمہوریت کو تباہ کر دینا چاہتی ہے۔گورنر نے حکومت بنانے کا کمارسوامی کا دعوی نظر انداز کر دیا۔کمارسوامی نے کہا کہ ملک میں شاید پہلی بار ایسا ہوا ہے جب بغیر اکثریت والی پارٹی کو حکومت بنانے کا موقع دیا گیا اور اسے ایوان میں اکثریت ثابت کرنے کے لئے 15 دن کا وقت دیا گیا۔انہوں نے سوال کیا 15 دن کا وقت دینے کی وجہ کیا ہے؟کیا یہ کاروبار کے لئے ہے؟ایک سوال کے جواب میں کمارسوامی نے کہا کہ مودی حکومت مرکزی حکومت کی ایجنسیوں کا غلط استعمال کر رہی ہے۔وہ ممبران اسمبلی کو ڈرا رہے ہیں اور ان پر دباؤ بنا رہے ہیں۔کانگریس ممبر اسمبلی آنند سنگھ کے بی جے پی میں شامل ہونے کی قیاس آرائیوں کا حوالہ دیتے ہوئے کمارسوامی نے کہا کہ ان کے خلاف ای ڈی استعمال کیا جا رہا ہے کیونکہ ان کے خلاف ایک کیس زیر التوا ہے۔انہوں نے دعوی کیاکہ میں نے آنندسنگھ سے بات نہیں کی ہے۔کانگریس کے ایک رکن اسمبلی نے مجھے بتایا کہ سنگھ نے انہیں اپنے مسائل بتائے۔کانگریس ممبر اسمبلی نے مجھے پیغام دیا اور مجھ سے اس بارے میں کوئی پہل کرنے کو کہا۔کمارسوامی نے غیر بی جے پی جماعتوں سے متحد ہونے کا اعلان کیا اور اپنے باپ اور سابق وزیر اعظم ایچ ڈی دیوگوڑا سے اس بارے میں پہل کرنے کی درخواست کی۔انہوں نے کہاکہ میں نے اپنے والد سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ تمام علاقائی پارٹیوں سے، ریاستوں کے وزرائے اعلی اور لیڈروں سے اس ملک کی جمہوری نظام کو تباہ کرنے کی مائل بی جے پی کے خلاف متحد ہونے کی اپیل کریں۔جنتا دل (ایس)لیڈر نے کہاکہ میں ممتا بنرجی، چندرا بابو نائیڈو، چندرشیکھر راؤ، مایاوتی، نوین پٹنائک سے درخواست کرتا ہوں اگر کوئی اختلافات ہو تو ملک کے مفاد کی حفاظت کے لئے انہیں بھلا دیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کے والک آوٹ اور کافی ہنگامہ آرائی کے درمیان کرناٹکا کے وزیراعلیٰ کماراسوامی نے اپنی اکثریت ثابت کرتے ہوئے فلور ٹیسٹ میں پائی کامیابی

کرناٹک ودھان سبھا میں فلورٹیسٹ کے دوران  کافی ہنگامہ آرائی اور بی جے پی اراکین کے والک آوٹ کے درمیان  کرناٹک کے نو منتخب وزیراعلیٰ کماراسوامی نے  فلور ٹیسٹ میں اپنی اکثریت ثابت کردی۔  کانگریس۔جے ڈی ایس گٹھ بندھن کو 117 ووٹ پڑے۔اس کے ساتھ ہی اب کرناٹک میں سیاسی ڈرامے بازی ...

گوا میں اتحادی جز گووا فارورڈ پارٹی کی دھمکی

بی جے پی کی قیادت والی گووا حکومت کا ایک جز گووا فارورڈ پارٹی نے آج کہا ہے کہ اگر ریاست میں جاری موجودہ کان کنی کے بحران کا حل نہیں ہوا تو وہ اگلے لوک سبھا انتخابات میں زعفرانی پارٹی کی حمایت نہیں کرے گی۔