لا کمیشن کے انکار کے بعد یکساں سول کوڈ جیسے مسئلے پرمرکزی حکومت نے لیا یوٹرن

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th September 2018, 12:08 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،10؍ ستمبر (ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) طلاق ثلاثہ اوریکساں سول کوڈ کے معاملے میں لاکمیشن کے رپورٹ آنے کے بعد مرکزی حکومت بھی اپنے پرانے موقف سے پیچھے ہٹنے لگی ہے۔ مرکزی وزیربرائے اقلیتی امور مختارعباس نقوی کا کہنا ہے کہ یکساں سول کوڈ کے مسئلے پراب حکومت عام اتفاق رائے سے کام کرے گی۔

مختارعباس نقوی نے کہا کہ یکساں سول کوڈ جیسے حساس معاملے میں تمام فرقوں کی اتفاق رائے نہایت ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ یکساں سول کوڈ کے بارے میں ملک میں بحث کا سلسلہ جاری رہنا چاہئے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ اکیڈمک اورصحتمند بحث ہے، اس لئے اس پر بحث ہونا چاہئے اور سلسلہ جاری رہنا چاہئے۔

واضح رہے کہ مودی حکومت کے قیام کے بعد سے ملک میں یکساں سول کوڈ کو نافذ کئے جانے کو کرکوششیں کررہی تھیں۔ لاکمیشن کے ذریعہ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ سے کئی میٹنگیں ہوئی تھیں اوردونوں ایک دوسرے کے سامنے آگئے تھے۔ تاہم گزشتہ ہفتہ لاکمیشن نے کہا کہ ملک میں یکساں سول کوڈ کی ضرورت نہیں ہے۔ لاکمیشن کے اس فیصلہ کا مختلف ملی تنظیموں نے استقبال کرتے ہوئے اسے مودی حکومت کی شکست سے تعبیر کیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

سابق وزیراعظم دیوے گوڈا کا بھٹکل دورہ؛ کہا، جمہوریت خطرے میں ہے، اُسے بچانے کے لئے ہر شہری کو آگے آنا ہوگا

اس بار کے انتخابات سب سے زیادہ اہم اس لئے  ہے کہ مودی کے زیر اقتدار ملک کی جمہوریت کو خطرہ لاحق ہوگیا ہے۔جب سے مودی ملک کے وزیراعظم  بنے ہیں ملک کے سرکاری جمہوری اداروں میں  دخل اندازی سے  عدالت تک محفوظ نہیں ہے، ریزروبینک آف انڈیا  ہو ، انفورسمنٹ ڈائرکٹوریٹ ہو، سی بی آئی ...

آگرہ - لکھنو ایکسپریس وے پرخطرناک حادثہ، 7 لوگوں کی موت اور34 زخمی

اترپردیش میں مین پوری کے پاس آگرہ - لکھنوایکسپریس وے پرہفتہ دیررات خطرناک سڑک حادثہ ہوا۔ یہاں مین پوری ضلع کے کرہل تھانہ علاقے کے پاس دہلی سے وارانسی جارہی ایک پرائیویٹ بس بے قابوہوکرایک ٹرک کے ساتھ ٹکراگئی۔ اس خطرناک سڑک حادثے میں کم از کم7 لوگوں کی موت ہوگئی جبکہ 30 سے زیادہ ...

چیف جسٹس آف انڈیا پرجنسی ہراسانی کا الزام سماعت کے لئے بنچ مقرر۔ الزامات بے بنیاد من گھڑت ہیں۔ عدلیہ خطرہ میں: سی جے آئی

ہندوستان کہاں جارہاہے؟ دلدل کی طرف یا پھر عروج کی اپنی آخری منزل کی طرف۔ موجودہ وقت میں یہ ایسے سوالات ہیں جو ہر ہندوستانی شہری کے ذہن پر کچو کے لگارہے ہیں۔ اقتدار پر بر قرار رہنے کے لئے وزارت عظمیٰ کے تقدس اور اس کے احترام کا بھی خیال نہیں کیاجاتا۔دوسری طرف سب سے بڑا انصاف کا ...