ہندوتوا سیاست ‘عالمی طاقت بننے میں حائل :جسٹس کیہر

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th January 2018, 1:04 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،12؍جنوری (یواین آئی ) سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس جگدیش سنگھ کیہر نے کہا کہ ہندوتوا کی سیاست ملک کے عالمی طاقت بننے کی راہ میں حائل ہوسکتی ہے ۔ جسٹس (ریٹائر) کیہر نے کہا کہ 1947میں تقسیم کے دوران ہندؤوں اور مسلمانوں نے بھیانک تشددکا درد برداشت کیا تھا۔آزادی کے بعد ہندستان جہاں سیکولر ملک بنا ،وہیں پاکستان نے اسلامی ملک بننے کی راہ اختیار کی تھی ۔انھوں نے کہا کہ ،ہندستان کے سابق لیڈروں نے یہ یقینی بنایاتھا کہ ملک میں مکمل سیکولرازم ہو ،لیکن اب ہم ایک بار پھر اسے بھولنے لگے ہیں اور ‘جیسے کو تیسا’ کی راہ پر چل پڑے ہیں ۔ نہرو میوزیم میں منعقدہ 14ویں یادگاری خطبہ میں انھوں نے کہا کہ ، ہندستان عالمی طاقت بننے کی آرزو رکھتاہے ۔عالمی منظرنامہ میں اگر آپ مسلم ملکوں کے ساتھ دوستی کا ہاتھ بڑھانا چاہتے ہیں تو اپنے ملک میں مسلم مخالف نہیں بن سکتے ۔اگر آپ عیسائی ملکوں کے ساتھ مضبوط رشتے قائم کرنا چاہتے ہیں تو آپ عیسائی مخالف نہیں بن سکتے ۔آنجہانی شاستری کو یاد کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ 1965کی ہند۔پاک جنگ کے دوران کامیابی کے ساتھ ملک کی قیادت کرنے والے ہندستان کے دوسرے وزیر اعظم کہا کرتے تھے کہ ہندوستان ‘ مذہب کو سیاست میں شامل نہیں کرتاہے ۔ سابق چیف جسٹس نے کہا کہ ” آپ مسائل کو جنگ سے حل نہیں کرسکتے اس کیلئے آپ کو امن اور بات چیت کا راستہ اختیار کرنا ہوگا ۔

ایک نظر اس پر بھی

مینکا گاندھی نے بچوں کے خلاف جرائم کے سلسلے میں پولیس کے لیے قانونی عمل پرکتابچہ جاری کیا 

عورتوں اور بچوں کی ترقی کی مرکزی وزیر محترمہ مینکاسنجے گاندھی نے آج یہاں ایک تقریب کے دوران بچوں کے خلاف جرائم کے سلسلے میں پولیس کے لئے قانونی عمل کے بارے میں ایک کتابچہ جاری کیا۔

رادھا موہن سنگھ نے نیپال کے زرعی شعبے کو آگے بڑھانے کے لیے تعاون کایقین دلایا 

زراعت اور کسانوں کی فلاح و بہبود کے مرکزی وزیر جناب رادھا موہن سنگھ نے آج نئی دہلی میں اپنے نیپالی ہم منصب اورنیپال کے زراعت ، زمین بندوبست اور امداد باہمی کے وزیر جناب چکرپانی کھنال سے ملاقات کی

جموں کشمیر میں بی جے پی۔پی ڈی پی سرکار گرگئی؛ محبوبہ مفتی نے سونپا گورنر کو اپنا استعفیٰ

جموں کشمیر میں بی جے پی نے محبوبہ مفتی سرکار سے اپنی حمایت واپس لے لی ہے جس کے ساتھ ہی ریاست میں تین سالوں سے چلی آرہی گٹھ بندھن سرکار ختم ہوگئی ہے۔ بی جے پی کے سرکار سے  الگ ہونے کی اطلاع کے فوری  فوری بعد محبوبہ نے گورنر این این بوہرا  کو اپنا استعفیٰ سونپ دیا۔