فوج کو گھٹیا کھانا، مجرم کون ہے؟ ....... تحریر: منصور عالم قاسمی(ریاض، سعودی عرب)

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 14th January 2017, 7:07 AM | اسپیشل رپورٹس |

  جموں کشمیرمیں تعین ۹۲ویں بٹالین کا جوان تیج بہادر یادو پچھلے دو دنوں سے سوشل میڈیا سے لے کر پرنٹ میڈیا تک موضوع بحث؛بی ایس ایف افسران اور سرکار کے لئے باعث ندامت و خجالت بنا ہوا ہے اور کیوں نہ ہوکہ اس نے ایک ایسی خامی کو بر سر عام کردیا ہے جس سے ملک میں شدید غم و غصہ کی لہر پائی جا رہی ہے اوربیرون ممالک ہندوستان اورطاقتور ترین ہندوستانی افواج کا مذاق اڑایا جا رہا ہے۔

 تیج بہادر یادو نے دو روز قبل فیس بک پر یکے بعد دیگرے چار ویڈیوز اپلوڈ کیں،ایک ویڈیو میں وہ اپنا مکمل تعارف اودرپیش مشکلات و حالات کو بتا رہا ہے جبکہ دوسری ویڈیوزمیں مہیا ہونے والے کھانے کو دکھا رہا ہے؛بیک گراؤنڈ میں واضح نظر آرہا ہے کہ وہ کسی برفانی علاقہ میں کھڑا ہے۔یہ ویڈیوز کیاتھیں،ایٹم بم تھے،جس کی چپیٹ میں دیکھتے ہی دیکھتے حکومت بھی آگئی،کم و بیش ایک کروڑ سے زائد لوگوں نے دیکھیں،کمنٹس کئے اور شیئر بھی ہوتی رہیں۔حالات کی نزاکت کو بھانتے ہوئے وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ نے کہا:ہم نے ویڈیوز دیکھیں،داخلہ سیکریٹری کو اس معاملہ میں بی ایس ایف سے رپورٹ طلب کرنے کو کہا ہے،اگرضرورت پڑی تو کارروائی کی جائے گی“ راجناتھ جی کے جاری کردہ احکامات یقینا قابل ستائش ہیں لیکن کیا اس سے تیج بہادر کو انصاف ملے گا؟جوانوں کے حالات سدھریں گے؟مجھے قطعاً ایسا نہیں لگ رہا ہے اور ابتدائی رپورٹ بھی آ گئی ہے، جس میں جوان ہی کو مجرم اور جھوٹا بتایا گیا ہے۔ ویسے بھی تاریخ گواہ ہے کہ ہندوستان کی چانچ ایجینسیاں یا تو حقایق تک پہونچ نہیں پاتی ہیں یا کہہ نہیں پاتی ہیں بلکہ کہنے نہیں دیاجاتا ہے اور معاملہ جب حکومت کی بے عزتی کا ہو، سینئر افسران کی سرزنش کا ہو،صاحب اثر و رسوخ یا نیتاؤں کی گرفت کا ہو تو معاملہ سردبستہ میں ڈال  ہی دیا جاتا ہے۔۲۱۰۲ میں بھی جموں کشمیر کے ایک میجر پر راشن ٹھیکوں میں خرد برد کا ا لزام لگا تھا،اس پر مقدمہ بھی چلا مگر کیا ہوا کچھ نہیں؟راجیو کے دور میں بوفورس گھوٹالہ،واجپئی کے دور میں براک میزائل سے لے کر مشہور تابوت گھوٹالہ،پھر اگستا ہیلی کاپٹر گھوٹالہ،کن کو سزاملی؟ کسی کو نہیں۔  چونکہ تیج بہادر نے بھی اپنے سینئر افسران کو ہی کٹہرے میں کھڑا کیا ہے اس لئے ماضی کی تاریخ کو دیکھ کر ممکن نہیں لگتا ہے کہ غیر جانبدارانہ تحقیق ہوگی حالانکہ صداقت و شفافیت سے تحقیق کی نام پر مذکورہ جوان کی یونٹ بدل کر کنٹرول لائن سے پونچھ ہیڈ کواٹر منتقل کردیا گیا ہے لیکن وہاں اسے اس جرم کے عوض پلمبر کا کام دے دیا گیا ہے۔تیج بہادر کی بیوی شرمیلایادوکا کہنا ہے کہ:جب سے انہوں نے ویڈیوز اپلوڈ کی ہیں ہم سب فکر مند ہیں،ہم نے کچھ بولنے سے منع کیا تھا لیکن ان کی عادت ہے کہ وہ غلط کو سہن نہیں کر پاتے ہیں۔تیج بہادر کے والد نے بھی کہا ہے کہ: جب وہ ۱/ دسمبر کوگھر آیا تھا تو وہ کہہ رہا تھا کہ وہاں کھانا ٹھیک سے نہیں ملتا ہے اس لئے وہاں رہنا مشکل ہے،،۔ اور اب جموں رینج کے آئی جی بی ایس ایف  ڈی کے اپادھیائے نے کہا ہے کہ:تیج بہادر کے الزامات کی چانچ کی مگر کوئی ثبوت نہیں ملا! مطلب سینئر افسران پر کوئی آنچ نہیں آئے گی،برق گرے گی تو اس ناتواں بہادر پرہی۔تحقیق وتفتیش کرنے والے بی ایس ایف کے ڈی آئی ایم،ڈی ایس مان نے کہا ہے کہ:کھانے کی کوالیٹی کو لے کر کسی جوان نے کوئی شکایت نہیں کی،تیج بہادر کا  ہی ریکارڈ خراب ہے،یہ اپنے سینئروں کی بات نہیں مانتا ہے،یعنی تیج بہادر  جھوٹا ہے،نافرمان ہے۔مانا وہ سب کچھ ہے مگر اپادھیائے اور مان صاحبان سی آئی جی(cag (جیسی معتبر کمیٹی کی رپورٹ کو کیا کہیں گے؟ سی آئی جی کی رپورٹ ہے ”پاکستان اور چین کے بارڈر پر تعینات بھارتی جوانوں کو تازہ کھانا نہیں دیا جاتا ہے اور بھر پیٹ بھی نہیں دیا جاتا ہے،اس کا مزید کہنا ہے،فوجیوں کی درمیان سروے کرانے پر ۸۶ فیصد جوانوں نے کھانا کو گھٹیا یا بس قابل طعام کہا ہے،گوشت اور سبزیاں غیر معیاری ہوتی ہیں، برانڈیڈ آٹا تک نہیں دیا جاتا ہے“۔میجر جنرل ریٹائرڈ پی کے سہگل نے بھی مانا ہے کہ کھانے کی کوالیٹی کو لے کر سی آئی جی کی رپورٹ درست ہے، خامیوں کو دور کرنی چاہئیں۔کچھ سابق فوجیوں نے بھی تیج بہادر کو حق بجانب قرار دیا ہے۔حالانکہ ایک فوجی پر برائے طعام ۰۰۹۲ روپئے ماہانہ دیئے جاتے ہیں مطلب یومیہ ۵۹ روپئے،پھر اس قدر گھٹیا کھانے ان جوانوں کو کیوں کرپروسے جاتے ہیں جو سرحد اور دیش کی حفاطت میں مامور ہیں؟آخر ان جوانوں کی خوراک کون ہضم کر جاتا ہے؟اس کا جواب بھی انگریزی کا معتبر اخبار ”ٹائمس آف انڈیا“کے پاس ہے،وہ لکھتا ہے ”سرینگر کے ہُمہما بی ایس ایف ہیڈ کوارٹر کے گردو نواح میں رہنے والے لوگوں نے دعویٰ کیا ہے کہ ہوائی اڈے کے پاس کے دکاندار بی ایس ایف افسران سے فروخت کئے جانے والے ایندھن اور راشن کے خریدار ہیں،انہیں بازار سے نصف قیمت میں مل جاتے ہیں،نام نہ شائع کرنے کی شرط پر جوانوں نے بتایاکہ یہ کام ایجنٹ کی معرفت ہوتا ہے،ایک فرنیچر ڈیلر نے بھی  بتایا کہ فرنیچر خریدنے والے ذمہ داران ہم سے موٹا کمیشن لیتے ہیں اور انہیں کوالیٹی سے کوئی مطلب نہیں ہوتا ہے۔“

 ماناکہ تیج بہادر جھوٹا ہے،مکار ہے،سینیئروں کی بات نہیں مانتا ہے،ضابطہ شکن ہے،۰۱۰۲ میں کورٹ مارشل ہو چکا ہے،پرموشن نہ ملنے کی وجہ سے نوکری چھوڑنے کی درخواست دے چکا ہے، مگر سی آئی جی،میجر پی کے سہگل اور ٹائمس آف انڈیا کو بی ایس ایف کے افسران کیا کہیں گے؟ان ویڈیوز کو اپلوڈ کرنا ممکن ہے ڈسپلن شکنی ہو لیکن ڈسپلن شکنی اس وقت کہا جا سکتا ہے جب وہ اپنے سینئر کمانڈروں سے پہلے اس کی شکایت نہ کرتا! جبکہ تیج بہادر کا کہنا ہے کہ ہم نے متعدد بار شکایت کی مگر ہماری بات ان سنی کردی گئی،  تب جا کر مجبوراًٰ ہم نے یہ قدم اٹھایا،اس لئے اس عمل کو ضابطہ شکنی نہیں کہا جا سکتا ہے۔ سوال یہ بھی ہے کہ جب تیج بہادر بارہاں قانون توڑتا رہا ہے تو اب تک وہ ملازمت کیسے کر رہا ہے وہ بھی سرحد جیسے حساس ایریا میں ڈیوٹی دی گئی ہے؟اسے ۴۱/ اعزازات کیسے دیئے گئے جس میں ایک گولڈ بھی ہے؟ تیج بہادر اگرچہ حکومت کو کلین چٹ دے کر اس سے مدد کی اپیل کر رہا ہے مگر حکومت کو معصوم بھی نہیں گرداناجا سکتا، کیونکہ آرمی ہیڈ کوارٹر نے جو راشن مانگا تھا وزارت دفاع نے ۰۲۔۳۲ فیصد کم کر کے دیا ہے،یہ بھی سی آئی جی ہی کی رپورٹ ہے۔پھر مجرم کون ہے؟تیج بہادر یادو،بی ایس ایف کے سینئر افسران یا وزارت دفاع؟

 مجرم جو بھی ہو یہ فیصلہ بعد میں ہوگا،تاہم فوجی عہدیداران،وزارت دفاع اور دیگر ذمہ داران کو ٹھنڈے دل سے سوچنا چاہئے کہ یہی جوانان  دیش کے مخافظ ہیں،سرد و گرم،رطب و یابس کو سہہ کر سرحد کی،ملک کی،ہماری اور آپ کی حفاظت کے لئے ہمہ وقت اپنی خدمات انجام دے رہے ہیں؛اگر انہیں غیر معیاری کھانا کھانے کو دیا جائے گا، ان کا خیال بہتر طریقے سے نہیں رکھا جائے گا تو اس سے ان کا حوصلہ اور اعتماد ٹوٹے گا،جس سے ملک کی داخلی اور خارجی سلامتی خطرے میں بھی پڑ سکتی ہے۔              (ساحل آن لائن)
 

ایک نظر اس پر بھی

اترکنڑا ضلع میں بندوق برداروں کی تعداد صرف ایک فی صد: لائسنس کی تجدید کو لے کر اکثر بے فکر

اترکنڑا ضلع جغرافیائی وسعت، جنگلات سے گھراہواہے اس کی آبادی میں خاصی ہے لیکن ضلع میں صرف ایک فی صد لوگ ہی بندوق رکھتے ہیں،ضلع میں فصل کی حفاظت کے لئے 8163اور خود کی حفاظت کے لئے 930سمیت کل 9093لوگ ہی لائسنس والی بندوقیں رکھتے ہیں۔

گوری لنکیش کے قتل میں قانون کی ناکامی کا کتنا ہاتھ؟ وارتا بھارتی کا اداریہ ............ (ترجمہ : ڈاکٹر محمد حنیف شبابؔ )

گوری لنکیش کے قاتل بہادر تو ہوہی نہیں سکتے۔ساتھ ہی وہ طاقتور اورشعوررکھنے والے بھی ہیں۔ہم اندازہ لگاسکتے ہیں کہ ایک تنہا اور غیر مسلح عورت پر سات راؤنڈگولیاں چلانے والے کس حد تک بزدل اورکس قسم کے کمینے ہونگے۔مہاتما گاندھی کو بھی اسی طرح قتل کردیا گیا تھا۔وہ ایک نصف لباس اور ...

یومِ اساتذہ اور ہمارا معاشرہ ؛ (غوروفکر کے چند پہلو) از :ڈاکٹر شاہ رشاد عثمانی ،صدر شعبہ اردو؛ گورنمنٹ ڈگری کالج ، سونور ضلع ہاویری

ہمارا معاشرہ سال کے جن ایام کو خصوصی اہمیت دیتاہے ، ان میں سےایک یومِ اساتذہ بھی ہے، جو 5ستمبر کو ہر سال پورے ملک میں منایاجاتاہے۔ اس موقع پر جلسے ، مذاکرے اور اس نوعیت کے مختلف رنگا رنگ پروگراموں کا انعقاد کرکے ایک قابل احترام اور مقدس پیشہ میں مصروف اساتذہ کو خراجِ تحسین پیش ...

کیا کابینہ کی توسیع میں آر ایس ایس کا دخل تھا ؟

اتوار کے روزہونے والی کابینی رد وبدل میں محض وزیر اعظم نریند مودی کی ہی مرضی نہیں بلکہ اس میں آر ایس ایس کا بھی دخل برابر کا تھا۔ حقیقت میں اگر دیکھا جائے تو اس توسیع میں وزیر اعظم کی مرضی اتنی نظر نہیں آئی جتنا سنگھ کا اثر دکھائی دیا۔ توسیع کے کسی بھی فیصلے سے ایسا محسوس نہیں ...

کرنل پروہت کو سپریم کورٹ سے ملی ضمانت کے پس منظر میں ریٹائرآئی جی پی مہاراشٹرا ایس ایم مشرف کے چبھتے ہوئے سوالات

مالیگائوں بم بلاسٹ معاملے میں کرنل پروہت کو ضمانت ملنے پر Who Killed Karkare ? کے رائٹر اورسابق انسپکٹر جنرل آف پولس ایس ایم مشرف نے کچھ چبھتے ہوئے سوالات کے ساتھ سنسنی خیز خلاصہ کیا ہے، جس کو ایک مرہٹی نیوز چینل نے پیش کیا ہے۔ اُس کا مکمل ترجمہ ذیل میں پیش کیا جارہا ہے۔