بی جے پی قیادت سے ناراض یڈیورپا کیرلا روانہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 30th November 2018, 11:42 PM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو،30؍نومبر(ایس او نیوز) ریاستی حکومت کو کمزور کرنے اور آپریشن کمل کے ذریعے اسے گرانے کے متعلق متعدد کوششوں کے ناکام ہوجانے کے بعد بی جے پی کے حوصلے جہاں پہلے ہی پست ہوگئے تھے حالیہ ضمنی انتخابات میں پارٹی کی غیر متوقع ناکامی نے ان پست حوصلوں کو اور بھی توڑ دیا جس کی وجہ سے پارٹی کے مختلف حلقوں میں پارٹی کی ریاستی قیادت یڈیورپا کی بجائے کسی اور کو سونپنے کی قیاس آرائیوں نے بھی زور پکڑ لیا۔

اس دوران حالانکہ بی جے پی کی مرکزی قیادت نے یہ واضح کردیا کہ یڈیورپا کو ریاستی بی جے پی صدارت سے ہٹایا نہیں جائے گا لیکن اس کے باوجود پارٹی کا ایک بڑا حلقہ جو آر ایس ایس کا وفادار مانا جاتا ہے، اس نے ریاست کی قیادت کی تبدیلی پر شدت کے ساتھ زور دینے کا سلسلہ آگے بڑھایا اور یڈیورپا کی بجائے پارٹی کی ریاستی صدارت لنگایت فرقے سے ہی وابستہ سابق وزیراعلیٰ جگدیش شٹر یا پھر بی جے پی کے قومی تنظیمی سکریٹری اور آر ایس ایس سے قریبی روابط رکھنے والے سنتوش کو سونپنے کی باتیں ہورہی ہیں۔

اس دوران ضمنی انتخابات میں بی جے پی کو یہ امید تھی کہ بلاری اور جمکھنڈی پارلیمانی حلقوں میں پارٹی جیت ضرورہوگی، لیکن ان توقعات پر کانگریس اور جے ڈی ایس اتحاد نے جب پانی پھیر دیاتو اس کی چوٹ بی جے پی کو زبردست لگی ، ساتھ ہی یڈیورپا کو ذاتی طور پر دھچکا اس وقت لگا جب شیموگہ پارلیمانی حلقے سے ان کے فرزند بی وائی راگھویندرا کو جیت بہت معمولی فرق سے ملی ۔ 2014 کے لوک سبھا انتخابات میں یڈیورپانے شیموگہ کی سیٹ 4.5لاکھ ووٹوں سے جیتی تھی، جبکہ راگھویندرا کو اس بار کانگریس جے ڈی ایس اتحاد کے امیدوار مدھو بنگارپا نے لوہے کے چنے چبا دئے اور انہیں جیت صرف 50ہزار ووٹوں سے ملی۔ ان تمام حقائق کی بنیاد پر بی جے پی میں یڈیورپا کے خلاف ایک مضبوط محاذ تیار ہوچکا ہے۔ بتایاجاتاہے کہ پارٹی قیادت سے یڈیورپا اس قدر ناراض ہیں کہ منگلور میں آر ایس ایس کے ساتھ تبادلۂ خیال کے لئے پارٹی کے قومی صدر امت شاہ کی آمدپر یڈیورپا میٹنگ میں حاضر نہیں ہوئے، ان تمام حالات کو دیکھتے ہوئے یڈیورپا نے طے کیا ہے کہ ایک ہفتے سے زیادہ مدت کے لئے وہ ریاست سے باہر رہیں گے۔

کیرلا کے کوٹاکل میں نیچورو پتی کے لئے یڈیورپا آج روانہ ہوگئے۔ یڈیورپا کا شمار ریاست کے مصروف سیاست دانوں میں کیا جاتا ہے۔ اس قدر ہنگامہ آرائی کے باوجود ریاست میں رہ کر اپوزیشن لیڈر کا رول اداکرنے کی بجائے کیرلا روانہ ہونے یڈیورپا کے فیصلے نے کئی شکوک وشبہات پیدا کردئے ہیں ، اس کے علاوہ گزشتہ روز ریاستی وزیر اور کانگریس کے سب سے طاقتور سیاست دان ڈی کے شیوکمار سے یڈیورپا کی ملاقات نے بھی کئی قیادت آرائیوں کو ہوا دی ہے۔ کیرلا جانے یڈیورپاکے فیصلے سے ریاستی بی جے پی قیادت کا ایک بہت بڑا حلقہ بھی حیران ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بنگلور میں 23/ مئی کو ووٹوں کی گنتی کے دوران امتناعی احکامات نافذ

23 مئی کو لوک سبھاانتخابات کے نتائج کا اعلان ہورہا ہے۔ انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے کے مرحلے میں کوئی ناخوشگوار صورتحال پیدا نہ ہونے پائے اس کے لئے شہر کے پولیس کمشنر سنیل کمار نے 23مئی کی صبح چھ بجے سے شہر بھر میں امتناعی احکامات نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

کرناٹک کے کندگول اور چنچولی حلقوں میں آج ہوگی پولنگ؛ 85 پولنگ بوتھوں کو قرار دیا گیا ہے حساس

ریاست کرناٹک  کے دو اسمبلی حلقوں کندگول اور چنچولی کے لئے آج اتوار کو  ووٹ ڈالے جائیں گے۔ دونوں حلقوں پر کامیابی درج  کرنے کے لئے کانگریس جے ڈی ایس اتحاد اور بی جے پی نے ایڑی چوٹی کا زور لگایا ہے۔

محمد محسن کی فرض شناسی کو پھر نشانہ بنانے کی کوشش، الیکشن کمیشن تادیبی کارروائی کے لئے ہائی کورٹ سے رجوع

اڈیشہ میں انتخابی مشاہد کے طور پر متعین کرناٹک کیڈر کے آئی اے ایس افسر محمد محسن نے وزیراعظم مودی کے ہیلی کاپٹر کی تلاشی لے کر جس فرض شناسی کا ثبوت پیش کیا اسے فرض شکنی قرار دیتے ہوئے الیکشن کمیشن نے نہ صرف انہیں معطل کردیا بلکہ اب ایسا لگتا ہے کہ الیکشن کمیشن نے انہیں نشانہ ...

بنگلور میں 23/ مئی کو ووٹوں کی گنتی کے دوران امتناعی احکامات نافذ

23 مئی کو لوک سبھاانتخابات کے نتائج کا اعلان ہورہا ہے۔ انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے کے مرحلے میں کوئی ناخوشگوار صورتحال پیدا نہ ہونے پائے اس کے لئے شہر کے پولیس کمشنر سنیل کمار نے 23مئی کی صبح چھ بجے سے شہر بھر میں امتناعی احکامات نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

بلدی انتخابات کے لئے 5945 نامزدگیاں داخل

ریاست بھر کے بلدی اداروں کے لئے 29 مئی کو ہونے والے انتخابات میں حصہ لینے کے لئے نامزدگیوں کے اندراج کی تاریخ کل ختم ہونے کے بعد جملہ 5945 نامزدگیاں داخل کی گئی ہیں۔

مودی کی اقتدار میں واپسی کے تمام راستے بند: راہل گاندھی

 کانگریس کے صدر راہل گاندھی نے حزب اختلاف کے طور پر کانگریس کی کارکردگی کو کامیاب بتاتے ہوئے کہا ہے کہ گزشتہ پانچ برسوں کے دوران پارٹی نے مؤثر طریقہ سے عوام کے مسائل کو اٹھایا ہے اور وزیر اعظم نریندر مودی کو دوبارہ اقتدار میں آنے سے روکنے کے لئے ان کے تمام راستے بند کر دئے گئے ...