بھٹکل کی سڑکوں پر آوارہ گردی کرنے والے جانور اور نام نہاد گو رکشھکوں کی خاموشی (وسنت دیواڑیگا کی خصوصی رپورٹ)

Source: S.O. News Service | By V. D. Bhatkal | Published on 25th October 2016, 11:34 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل  :25/اکتوبر(ایس او نیوز) گذشتہ چار پانچ سالوں سے شہرمیں جانوروں اور کتوں کی آوارہ گردی میں حددرجہ اضافہ ہواہے، مگران  پر قابو پانے کی طرف کسی کا دھیان نہیں جارہا ہے ، ایک طرف ان جانوروں کی کوئی حفاظت کرنےو الا نہیں ہے ۔مگر دوسری طرف جب ان جانوروں کوکوئی لے جاتا ہے تو نام نہاد محافظ پیدا ہوجاتے ہیں، دیکھا جائے تو آوارہ جانوروں کا معاملہ پولس کے لئے بھی سردرد بن گیا ہے۔

کسی اورجگہ سے لاکر شہر میں چھوڑے گئے لاوارث  ڈیل ڈول کے جانور سڑک اور سڑک کےکنارے خالی جگہوں پرہی ڈیرا ڈالے رہتی ہیں۔ ان جانوروں سے ٹکرا کرسواریاں حادثوں کی شکار ہو رہی ہیں، بس اسٹانڈ، ہوٹلوں کے سامنے اور دیگر جگہوں پر بڑے بڑے جانوروں سے راہ گیر بھی گذرنے میں خوف محسوس کرتے ہیں۔ مصیبت یہ ہے کہ جانور اپنے ٹھکانے کو لوٹے بغیر جہاں تہاں آرام کرنے اور گھومنے کے عادی ہوگئے ہیں۔ لاوارث جانوروں کو پکڑ کر ان کے مالکان کا پتہ چلانا بھٹکل بلدیہ اور پولس کے لئے دقت بھرا کام ہے۔ سڑک کنارے کا کچرا کتوں اورجانوروں کے لئے غذا بن رہاہے۔ لیکن عوام سوال اُٹھارہے ہیں کہ اپنے آپ کو گئو رکھشک کہنے والے غنڈے ان جانوروں کی حفاظت کرنے میں آگے کیوں نہیں آرہے ہیں ؟ عوام پوچھ رہے ہیں کہ ان جانوروں کی حفاظٹ کے لئے کیا وہ لوگ  آواز بلند کررہے ہیں؟ لوگوں کا کہنا ہے کہ گئو رکھشک کے نام نہاد لیڈرس ان جانوروں کو لے کر خاموش ہیں۔

بھٹکل بلدیہ نے ایک دومرتبہ آوارہ جانوروں کو پکڑ کر باندھنا شروع کیا تھا لیکن ان کی پرورش کے لئے کوئی راہ نہیں سوجھی تو اس کی فکر سے آزاد ہوکر سال گذرگیا ۔ اب جب کہ دن رات آوارہ گھومنے والے جانوروں کا کوئی وارث ہی نہیں ہے تو پھر چوروں کی منہ مانگی برات پوری ہورہی ہے، ادھر کچھ مہینوں سے چور ان آوارہ جانوروں پر گہری نظر رکھے ہوئے نگرانی کررہے ہیں۔ حال ہی میں ایک الزام بھی عائد کیا گیا ہے کہ آوارہ جانوروں کو رات کے اوقات میں باقاعدہ پکڑ کر سواریوں پر لاد کرلے جایا جارہا ہے۔اور کچھ لوگ شہر ، گلی محلوں کے سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعے جانورسپلائی کی وڈیوز کی تلاشی میں ہیں لیکن بے چاروں کو جانوروں کا کوئی وارث نہیں مل پارہاہے اور نہ کوئی اس کے متعلق شکایت درج کرنے والا ہے۔ شہری پولس تھانہ ایس آئی کوڈگونٹی نے جانوروں کی چوری کے متعلق بتایا کہ اگر کوئی جانوروں کی چوری کے متعلق کوئی شکایت لے کر آتاہے تو اس کو نہ صرف درج کیا جائے گا بلکہ تفتیش کے ذریعے چوروں تک بھی پہنچا جائے گا۔ عوام کا کہنا ہے کہ جانوروں کی آوارہ گردی سے عورتوں اور بچوں کو بھی کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑرہاہے ، اس تعلق سے متعلقہ محکمہ کا مناسب اقدام ضروری ہے۔

شہر کےلوگوں کا کہنا ہے کہ جانوروں کے متعلق ہنگامہ برپا کرنے والے نام نہاد گئو رکھشکوںاور اُن کے اداروں کو آگے آکر ضروری قدم اٹھانا چاہئے اور ان کے ٹھکانے وغیرہ کا انتظام کرتے ہوئے جانوروں کی حفاظت کا کرنا چاہئے۔ آوارہ جانوروں کی نگرانی کےمتعلق عوامی سطح پر یہ سنا گیا کہ بھٹکل بلدیہ کی انتظامیہ کے لئے بھی ضروری ہے کہ وہ آوارہ جانوروں پر قد غن لگانے کے لئے بہتر قانونی انتظامات کرے۔

اس سلسلے میں بی جے پی لیڈر گوندنائک سے پوچھے جانے پر انہوں  نے بتایا کہ دنیا میں تمام جانوروں اور پرندوں کو جینے کا حق ہے، دن نکلنے سے پہلے ہی کچھ لوگ پیسہ کمانے کے لئے راستوں پر پائی جانے والے جانوروں کو چوری کرکے لے جاتے ہیں جو ایک جرم ہے ، اس سلسلے میں پولس کو ضروری اقدامات کرنے چاہئے ، اور پالتو جانوروں کو سڑکوں پر چھوڑنے کے متعلق مالکان کو بھی چوکنا رہنا چاہئے۔

ایک نظر اس پر بھی

دبئی کے قریب عجمان میں شروع ہورہا ہے نوائط پرئمیر لیگ کا شاندار کرکٹ ٹورنامنٹ؛ پہلے نام درج کرنے والی چھ ٹیموں کو ملے گا ٹورنامنٹ میں موقع

متحدہ عرب امارات کے شہر عجمان میں جنوری 2019 کو نوائط پرئمیر لیگ (این پی ایل) کاشاندار کرکٹ ٹورنامنٹ منعقد کیا جارہا ہے ، جس  میں دبئی یا متحدہ عرب امارات کے شہروں میں مقیم  بھٹکل، شرالی، مرڈیشور اور منکی کے کھلاڑی اپنے جوہر دکھلا سکیں گے۔ اس بات کی اطلاع  این پی ایل کے کنوینر ...

ہوناور:پریش میستاکی پراسرار موت کے معاملے میں نیا خلاصہ۔ واردات سے پہلے بند کردیا گیا تھا سی سی کیمرہ !

ہوناور میں فرقہ وارانہ کشیدگی کے دوران پریش میستانامی نوجوان کی پراسرار موت کو سنگھ پریوار کی طرف سے فرقہ وارانہ قتل قرار دیا جارہا تھا۔لیکن سی بی آئی کی تحقیقات دوران اس معاملے نے اب ایک نیا رخ لے لیا ہے۔

بھٹکل میں تنظیم میڈیا ورکشاپ کا شاندار اختتامی اجلاس۔ میڈیا کی معتبر شخصیات اور علماء کا خطاب۔ ورکشاپ کے شرکاء کو انعامات اور اسناد کی تقسیم

صحافت کے پیشے میں دلچسپی رکھنے والوں کے لئے مجلس اصلاح وتنظیم کی میڈیا واچ کمیٹی کی نگرانی میں منعقد ہونے والے ہونے پانچ روزہ ورکشاپ کے اختتام پر ایک شاندار اختتامی اجلاس بندر روڈ سیکنڈ کراس پر واقع المدینہ ہال میں منعقد ہوا۔

ملک کے موجودہ حالات اور دینی سرحدوں کی حفاظت ....... بقلم : محمد حارث اکرمی ندوی

   ملک کے موجودہ حالات ملت اسلامیہ ھندیہ کےلیے کچھ نئے حالات نہیں ہیں بلکہ اس سے بھی زیادہ صبر آزما حالات اس ملک اور خاص کر ملت اسلامیہ ھندیہ پر آچکے ہیں . افسوس اس بات پر ہے اتنے سنگین حالات کے باوجود ہم کچھ سبق حاصل نہیں کر رہے ہیں یہ سوچنے کی بات ہے. آج ہمارے سامنے اسلام کی بقا ...

پارلیمانی انتخابات سے قبل مسلم سیاسی جماعتوں کا وجود؛ کیا ان جماعتوں سے مسلمانوں کا بھلا ہوگا ؟

لوک سبھا انتخابات یا اسمبلی انتخابات قریب آتے ہی مسلم سیاسی پارٹیاں منظرعام  پرآجاتی ہیں، لیکن انتخابات کےعین وقت پروہ منظرعام سےغائب ہوجاتی ہیں یا پھران کا اپنا سیاسی مطلب حل ہوجاتا ہے۔ اورجو پارٹیاں الیکشن میں حصہ لیتی ہیں ایک دو پارٹیوں کو چھوڑکرکوئی بھی اپنے وجود کو ...

بھٹکل میں سواریوں کی  من چاہی پارکنگ پرمحکمہ پولس نے لگایا روک؛ سواریوں کو کیا جائے گا لاک؛ قانون کی خلاف ورزی پر جرمانہ لازمی

اترکنڑا ضلع میں بھٹکل جتنی تیز رفتاری سے ترقی کی طرف گامزن ہے اس کے ساتھ ساتھ کئی مسائل بھی جنم لے رہے ہیں، ان میں ایک طرف گنجان  ٹرافک  کا مسئلہ بڑھتا ہی جارہا ہے تو  دوسری طرف پارکنگ کی کہانی الگ ہے۔ اس دوران محکمہ پولس نے ٹرافک نظام میں بہتری لانے کے لئے  بیک وقت کئی محاذوں ...

غیر اعلان شدہ ایمرجنسی کا کالا سایہ .... ایڈیٹوریل :وارتا بھارتی ........... ترجمہ: ڈاکٹر محمد حنیف شباب

ہٹلرکے زمانے میں جرمنی کے جو دن تھے وہ بھارت میں لوٹ آئے ہیں۔ انسانی حقوق کے لئے جد وجہد کرنے والے، صحافیوں، شاعروں ادیبوں اور وکیلوں پر فاشسٹ حکومت کی ترچھی نظر پڑ گئی ہے۔ان لوگوں نے کسی کو بھی قتل نہیں کیا ہے۔کسی کی بھی جائداد نہیں لوٹی ہے۔ گائے کاگوشت کھانے کا الزام لگاکر بے ...

اسمبلی الیکشن میں فائدہ اٹھانے کے بعد کیا بی جے پی نے’ پریش میستا‘ کو بھلا دیا؟

اسمبلی الیکشن کے موقع پر ریاست کے ساحلی علاقوں میں بہت ہی زیادہ فرقہ وارانہ تناؤ اور خوف وہراس کا سبب بننے والی پریش میستا کی مشکوک موت کو جسے سنگھ پریوار قتل قرار دے رہا تھا،پورے ۹ مہینے گزر گئے۔ مگرسی بی آئی کو تحقیقات سونپنے کے بعد بھی اب تک اس معاملے کے اصل ملزمین کا پتہ چل ...

گوگل رازداری سے دیکھ رہا ہے آپ کا مستقبل؛ گوگل صرف آپ کا لوکیشن ہی نہیں آپ کے ڈیٹا سےآپ کے مستقبل کا بھی اندازہ لگاتا ہے

ان دنوں، یورپ کے  ایک ملک میں اجتماعی  عصمت دری کی وارداتیں بڑھ گئی تھیں. حکومت فکر مند تھی. حکومت نے ایسے لوگوں کی جانکاری  Google سے مانگی  جو لگاتار اجتماعی  عصمت دری سے متعلق مواد تلاش کررہے تھے. دراصل، حکومت اس طرح ایسے لوگوں کی پہچان  کرنے کی کوشش کر رہی تھی. ایسا اصل ...