بھٹکل سب جیل کی خستہ حالت۔ زیر سماعت قیدیوں کے لئے اضافی مصیبت

Source: S.O. News Service | By V. D. Bhatkal | Published on 12th August 2018, 7:14 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل12؍اگست (ایس او نیوز) زیرسماعت قیدیوں کے لئے مختصر عرصے تک قیام کی سہولت کے طور پر جو ذیلی قید خانہ ( سب جیل) تھا اس کی خستہ حالت کی وجہ سے دو سال قبل اسے بندکردیا گیا تھا۔ اس کے بعد سے ایک یا دو دن کی عدالتی حراست میں دئے جانے والے قیدیوں کو تین گھنٹے کا سفر کرکے کاروار لے جانا پڑتا ہے جس کی وجہ سے قیدیوں کے ساتھ بطور سیکیوریٹی جانے والے پولیس عملے کو بھی مشکلات کاسامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

بھٹکل کے ریوینیو دفتر کے احاطے میں موجود اس سب جیل کے کمروں کی حالت بہت ہی خستہ ہوگئی ہے اور اس کی پچھلی دیوار گرجانے کے بعد اس ذیلی قید خانے کومرمت ہونے تک کے لئے بند کردیا گیاتھا۔ اس بات کو دو سال کا عرصہ گزر چکا ہے ، مگر سب جیل کو درست کرنے کی طرف افسران توجہ نہیں دے رہے ہیں۔جس کے نتیجے میں سب جیل کے لئے مختص دو کمرے یونہی ویران پڑے ہوئے ہیں اور وہاں ٹریژری کی حفاظت پر ماموربینچ پر بیٹھے ہوئے ایک پولیس کانسٹیبل کے علاوہ کوئی انسان نظر نہیں آتا ۔


بھٹکل میں سب جیل کی سہولت مہیا نہ ہونے کی وجہ سے ہر زیر سماعت قیدی کوبس کے ذریعے تین گھنٹوں کا سفر کرکے کاروار لے جانا اور عدالت میں دوبار ہ پیش کرنے کے لئے بھٹکل لانا پڑتا ہے۔ قیدیوں کے لئے اضافی مصیبت تو یہ ہوجاتی ہے کہ اگر عدالت شام کے آخری وقت میں کسی قیدی کو رہا کرنے کا فیصلہ سناتی ہے تو اس کی تصدیق شدہ نقل حاصل کرکے کاروار جیل کے افسران تک پہنچانے میں کئی گھنٹے لگ جاتے ہیں اور اکثر اوقات جیل کا عملہ دفتری وقت ختم ہونے کی وجہ بتاکر قیدی کے رشتے داروں کو دوسرے دن آنے کی ہدایت کے ساتھ واپس بھیج دیتا ہے۔ اس طرح قیدی کو عدالت سے رہائی ملنے کے باوجود مزید ایک رات اور دوسرے دن کا کچھ حصہ اضافی سزا کے طور پر جیل میں گزارنا ہوتا ہے۔جس کی وجہ سے پولیس کوبھی بڑی مشکلات کا سامنا کرناپڑتا ہے۔ 

اس سلسلے میں ایڈوکیٹ ایم جے نائک نے اپنے تاثرات کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ بھٹکل سب جیل کا مسئلہ شروع ہوکر دو سال کا عرصہ گزرچکا ہے۔ لیکن اس سلسلے میں کسی کوبھی کوئی فکر نہیں ہے۔اس سے عام لوگوں کو بڑی تکلیف ہورہی ہے۔ اس تعلق سے عوامی منتخب نمائندوں کو توجہ دیتے ہوئے مناسب اقدام کرنا چاہیے۔جبکہ ریوینیو ڈپارٹمنٹ کے سررشتہ دار سنتوش بھنڈاری نے بتایا کہ سب جیل کی پچھلی دیوار گرجانے کی وجہ سے اسے بندکردیاگیا ہے۔ اس کی مرمت کے لئے پی ڈبلیو ڈی سے مطالبہ کیا گیا ہے۔لیکن فنڈ نہ ہونے کی وجہ سے ابھی تک یہ تجویز یوں ہی التوا میں پڑی ہوئی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کاروار میں 22اور23دسمبر کومنعقد ہوگا روزگار میلہ

کاروار رکن اسمبلی روپالی ایس نائک کی قیادت میں 22اور23دسمبر کو ایک زبردست روزگار میلہ منعقد کیا جائے گا، جس میں ملک کے مختلف علاقوں سے 106کمپنیوں کے نمائندے حصہ لیں گے۔توقع کی جارہی ہے کہ تقریباً5300بے روزگار نوجوان اس میلے سے فائدہ اٹھائیں گے ۔

بھٹکل میں اسٹریٹ لائٹ کی بیٹریاں چوری کرنے والوں کی پولس کررہی ہے تلاش؛ سی سی ٹی وی کیمرہ میں چوری کی واردات ہوگئی قید

بھٹکل کے مختلف علاقوں میں گذشتہ کئی دنوں سے  اسٹریٹ کے کھمبوں پر لگی سولار لائٹ کی بیٹریاں چوری ہونے کی وارداتیں پیش آرہی تھی، بینگرے اور شرالی علاقوں میں چوریوں کی زائد وارداتیں ریکارڈ کی گئی تھی جبکہ اُترکوپا ودیگر علاقوں میں بھی بیٹریاں چوری ہونے کی شکایتیں ملی تھی، اس ...

بھٹکل کے مرڈیشور میں دو لوگوں پر حملے کی پولس تھانہ میں دو الگ الگ شکایتیں

تعلقہ کے مرڈیشور میں کل جمعرات کو  دو لوگوں پر حملہ اور پھر جوابی حملہ کے تعلق سے آج مرڈیشور تھانہ میں دو الگ الگ شکایتیں درج کی گئی ہیں اور پولس نے دونوں پارٹیوں کی شکایت درج کرتے ہوئے چھان بین شروع کردی ہے۔

بھٹکل میں آدھا تعلیمی سال گزرنے پر بھی ہائی اسکولوں کے طلبا میں نہیں ہوئی شو ز کی تقسیم  : رقم کا کیا ہوا ؟

آخر اس  نظام ،انتظام کو کیا کہیں ،سمجھ سے باہر ہے! تعلیمی سال 2018-2019نصف گزر کر دو تین مہینے میں سالانہ امتحان ہونے ہیں۔ اب تک بھٹکل کے سرکاری ہائی اسکولوں کو سرکاری شو بھاگیہ میسر نہیں ، نہ کوئی پوچھنے والا ہے نہ  سننے والا۔شاید یہی وجہ ہے کہ محکمہ تعلیم شو، ساکس کی تقسیم کا ...

سوشیل میڈیا اور ہماراسماج ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ (از: سید سالک برماور ندوی)

اکیسویں صدی کے ٹکنالوجی انقلاب نے دنیا کو گلوبل ویلیج بنادیا ہے۔ جدید دنیا کی حیرت انگیزترقیات کا کرشمہ ہے کہ مہینوں کا فاصلہ میلوں میں اورمیلوں کا،منٹوں میں جبکہ منٹ کامعاملہ اب سیکنڈ میں طےپاتا ہے۔

جیل میں بندہیرا گروپ کی ڈائریکٹر نوہیرانے فوٹو شاپ جعلسازی سے عوام کو دیا دھوکہ۔ گلف نیوز کا انکشاف

دبئی سے شائع ہونے والے کثیر الاشاعت انگریزی اخبار گلف نیوز نے ہیرا گولڈ کی ڈائرکٹر نوہیرا شیخ کی جعلسازی کا بھانڈہ پھوڑتے ہوئے اس بات کا انکشاف کیا ہے کہ    کس طرح اس نے فوٹو شاپ کا استعمال کرتے ہوئے بڑے بڑے ایوارڈ حاصل کرنے اور مشہور ومعروف شخصیات کے ساتھ اسٹیج پر جلوہ افروز ...

کہ اکبر نام لیتا ہے۔۔۔۔۔۔۔!ایم ودود ساجد

میری ایم جے اکبر سے کبھی ملاقات نہیں ہوئی۔میں جس وقت ویوز ٹائمز کا چیف ایڈیٹر تھا تو ان کے روزنامہ Asian Age کا دفتر جنوبی دہلی میں‘ہمارے دفتر کے قریب تھا۔ مجھے یاد ہے کہ جب وہ 2003/04 میں شاہی مہمان کے طورپرحج بیت اللہ سے واپس آئے تو انہوں نے مکہ کانفرنس کے تعلق سے ایک طویل مضمون تحریر ...