بھٹکل میں آدھا تعلیمی سال گزرنے پر بھی ہائی اسکولوں کے طلبا میں نہیں ہوئی شو ز کی تقسیم  : رقم کا کیا ہوا ؟

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 25th November 2018, 2:15 AM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل:24؍نومبر (ایس او نیوز)   تعلیمی سال 2018-2019 کا آدھا تعلیمی سال گذر چکاہے اور اگلے دو تین مہینوں میں سالانہ امتحانات ہونے والے ہیں، لیکن بھٹکل کے سرکاری ہائی اسکولوں میں سرکار کی جانب سے دئے جانے والے شوز کی تقسیم ابھی تک نہیں ہوپائی ہے، جس پر عوام سوالات اُٹھارہے ہیں کہ آخر شوز کی رقم کہاں ہے ؟

بھٹکل تعلقہ کےہائی اسکولوں میں 1000سے زائد طلبا زیر تعلیم ہیں۔ ریاستی حکومت نے طلبا میں شو اور ساکس کی تقسیم کےلئے  متعلقہ اسکولوں کو رقم منظور کرچکی ہے مگر ابھی  تک شوز کی خریداری مکمل نہیں ہوئی ہے۔ (قومی پرائمری تعلیمی منصوبے کے ماتحت آنے والے 4اسکول شوز مسئلہ سے پار ہوگئے ہیں) ۔ مقامی سطح پر کم قیمت پر معیاری شوز خریدنے کاسبق پڑھاتے ہوئے اساتذہ، افسران  تعلیمی سال  مکمل   ہونے کے انتظار میں ہیں۔ اگلے دو تین مہینوں میں سالانہ امتحانات شروع  ہوجائیں گے،ایسے میں طلبا اور سرپرستوں کے سوال  کا کوئی جواب نہیں مل پارہاہے کہ سرکاری منصوبے سے منظور شدہ شو اور  ساکس کی تقسیم کاری کب ہوگی؟ اسی طرح عوامی سطح پر چہ مئگوئیاں بھی ہوری ہیں کہ کیا  کہیں سرکارکی طرف سے منظور شدہ رقم کا غلط استعمال تو نہیں ہورہا ہے یا پھر سیاسی مداخلت وجہ سبب بنی ہے؟۔

اس تعلق سے جب  افسران سے دریافت کیا گیا تو ان کا جواب یہ تھا کہ  بھٹکل سرکاری ہائی اسکولوں کے بینک کا کھاتہ نمبر غلط درج ہونے کی بنا پر رقم منتقلی کا مسئلہ درپیش ہے جس کی وجہ سے طلبا شوز اورساکس سے محرو م رہ گئے ہیں۔ اسکول اکاؤنٹ نمبر متعلقہ اسکولوں کے صدور مدرس ہی دیتے ہیں ، رجسٹرڈ کرنے والے محکمہ تعلیمات کے  سرکاری افسران ہوتے ہیں ، جب آفسران سے پوچھا گیا کہ  ان دونوں میں  غلطی کس کی طرف سے ہوئی  ہے تو جواب نہیں دیا گیا۔  اس دوران 3-4 اسکولوں کو شو دئیے گئے ہیں مگر ابھی تک تقسیم نہیں کئے گئے  ہیں، جب  پوچھا گیا کہ طلبا میں شوز کب تقسیم ہوں  گے تو جواب ملا  کہ ابھی اس کی قسمت نہیں کھلی ہے۔

حکومت اعلان کرتی ہے کہ تعلیمی سال کے شروع میں ہی طلبا کو ضروری اشیاءمہیا کئے جاچکے  ہیں۔ لیکن عوام پوچھ رہے ہیں کہ  عوامی نمائندے ، اساتذہ ، افسران کی غیر ذمہ دارانہ حرکتوں سے پورا نظام ٹھپ ہورہاہے  آخر اس کو  کیسے  برداشت کریں۔

معاملے کو لے کر بھٹکل بی ای اؤ دفتر کی وسائل آفیسر یلما سے بات کی گئی تو انہوں نےقبول کیا کہ  اب تک بھٹکل کے سرکاری ہائی اسکولوں کے طلبا میں شو ز اورساکس تقسیم ہوجانے چاہئے تھے۔ سرکار نیفٹ کے ذریعے متعلقہ اسکولوں کے کھاتوں کو رقم جمع کرتی ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ  شو تقسیم کیوں نہیں ہوئے اس سلسلے میں وہ متعلقہ  ہائی اسکولوں کے صدور اور مدرسین  سے تحریر ی جواب مانگیں گی۔

ایک نظر اس پر بھی

محکمہ جنگلات کی جانب سے ہونے والی ہراسانیوں کے خلاف 23فروری کو سرسی میں ہوگا سی سی ایف دفتر کا محاصرہ

جنگلاتی زمین پر رہائش پزیر افراد کے لئے حقوق فراہم کرنے والے قوانین کی خلاف ورزی کرنے اور بار بار جنگلاتی زمین پر مکانات یا باغاغبانی کرکے زندگی گزارنے والوں پر محکمہ جنگلات کے افسران کی ہراسانی کے خلاف 23فروری کو سرسی میں واقع چیف کنزرویٹر آف فاریسٹ (سی سی ایف) دفتر کا محاصرہ ...

منگلورو سٹی مال کے فوڈ شاپ میں معمولی آتشزدگی؛ فوری طور پر پایا گیا آگ پر قابو؛ معمولی نقصان

منگلورو سٹی مال کی ایک فوڈ شاپ میں آگ لگنے پر تھوڑی دیر کے لئے افراتفری کا ماحول پیدا ہوگیا۔ مگرپانڈیشور علاقے سے فائر بریگیڈ کے افسران نے موقع پر پہنچ کر جلد ہی آگ پر قابو پالیا ۔

مینگلور اور اُڈپی میں پولس افسران کے تبادلے؛ نیشا جیمس اب اُڈپی کی نئی ایس پی اور سندیپ پاٹل مینگلور کے نئے پولس کمشنر

پارلیمانی انتخابات کو لے کر ریاستی حکومت کی جانب سے بڑے پیمانے پر اعلیٰ آفسران کے تبادلے جاری ہیں، اسی مناسبت سے اب اُڈپی اور مینگلور میں اعلیٰ آفسران کے تبادلے کئے گئے ہیں۔

ہوناور: ہیسکام کے افسران راستہ بھٹک گئے۔ پوری رات جنگل میں گزارنے پر ہوئے مجبور

گیر سوپّا ڈیم کے علاقے میں گھنے جنگل سے گزرنے والی 33کے وی بجلی لائن کا معائنہ کرنے کے لئے نکلی ہوئی ہیسکام افسران اور عملے پر مشتمل ایک ٹیم میں شامل دوافسران جنگل میں راستہ بھٹک گئے جس کی وجہ سے انہیں پوری رات جنگل ہی میں گزارنی پڑی ۔

آننت کمار ہیگڈے۔ جو صرف ہندووادی ہونے کی اداکاری کرتا ہے ’کراولی منجاؤ‘کے چیف ایڈیٹر گنگا دھر ہیرے گُتّی کے قلم سے

اُترکنڑا کے رکن پارلیمان آننت کمار ہیگڈے جو عین انتخابات کے موقعوں پر متنازعہ بیانات دے کر اخبارات کی سُرخیاں بٹورتے ہوئے انتخابات جیتنے میں کامیاب ہوتا ہے، اُس کے تعلق سے کاروار سے شائع ہونے والے معروف کنڑا روزنامہ کراولی منجاو کے ایڈیٹر نے  اپنے اتوار کے ایڈیشن میں اپنے ...

کیا جے ڈی نائک کی جلد ہوگی کانگریس میں واپسی؟!۔دیشپانڈے کی طرف سے ہری جھنڈی۔ کانگریس کر رہی ہے انتخابی تیاری

ایسا لگتا ہے کہ حالیہ اسمبلی انتخابات سے چند مہینے پہلے کانگریس سے روٹھ کر بی جے پی کا دامن تھامنے اور بی جے پی کے امیدوار کے طور پر فہرست میں شامل ہونے والے سابق رکن اسمبلی جے ڈی نائک کی جلد ہی دوبارہ کانگریس میں واپسی تقریباً یقینی ہوگئی ہے۔ اہم ذرائع کے مطابق اس کے لئے ضلع ...

ضلع شمالی کینرا میں پیش آ سکتا ہے پینے کے پانی کابحران۔بھٹکل سمیت 11تعلقہ جات کے 423 دیہات نشانے پر

امسال گرمی کے موسم میں ضلع شمالی کینرا میں پینے کے پانی کا شدید بحران پیدا ہونے کے آثار نظر آر ہے ہیں۔ کیونکہ ضلع انتظامیہ نے 11تعلقہ جات میں 428دیہاتوں کی نشاندہی کرلی ہے، جہاں پر پینے کے پانی کی شدید قلت پیدا ہوگئی ہے۔

ہوناور قومی شاہراہ پرگزرنےو الی بھاری وزنی لاریوں سے سڑک خستہ؛ میگنیز کی دھول اور ٹکڑوں سے ڈرائیوروں اور مسافروں کو خطرہ

حکومت عوام کو کئی ساری سہولیات مہیا کرتی رہتی ہے، مگر ان سہولیات سے استفادہ کرنےو الوں سے زیادہ اس کاغلط استعمال کرنے والے ہی زیادہ ہوتے ہیں، اس کی زندہ مثال  فورلین میں منتقل ہونے والی  قومی شاہراہ 66پر گزرنے والی بھاری وزنی لاریاں  ہیں۔

لوک سبھا انتخابات 2019؛ کرناٹک میں نئے مسلم انتخابی حلقہ جات کی تلاش ۔۔۔۔۔۔ آز: قاضی ارشد علی

جاریہ 16ویں لوک سبھا کی میعاد3؍جون2019ء کو ختم ہونے جارہی ہے ۔ا س طرح جون سے قبل نئی لوک سبھا کا تشکیل ہونا ضروری ہے۔ انداز ہ ہے کہ مارچ کے اوائل میں لوک سبھا انتخابات کا عمل جاری ہوجائے گا‘ اور مئی کے تیسرے ہفتے تک نتائج کا اعلان بھی ہوجائے گا۔ یعنی دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت 17ویں ...

2002گجرات فسادات: جج پی بی دیسائی نے ثبوتوں کو نظر انداز کردیا: سابق IAS افسر و سماجی کارکن ہرش مندرکا انکشاف

 خصوصی تفتیشی ٹیم عدالت کے جج پی ۔بی۔ دیسائی نے ان موجود ثبوتوں کو نظر انداز کیاکہ کانگریس ممبر اسمبلی احسان جعفری جنہیں ہجوم نے احمدآباد کی گلمرگ سوسائٹی میں فساد کے دوران قتل کردیا تھا انہوں نے مسلمانوں کو ہجوم سے بچانے اور اس وقت کے وزیر اعلیٰ نریندر مودی سے فساد پر قابو ...