بھٹکل میں اندرونی نالیوں کے ابترحالات ؛ حل کے منتظر عوام :پریشان عوام کا وزیرا علیٰ سے سوال،  کیا ہوا تیرا وعدہ  ؟؟

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 11th January 2017, 12:41 AM | ساحلی خبریں | اداریہ |

بھٹکل:10/جنوری  (ایس او نیوز) یہاں کے عوام کے سامنے چاند اورسورج لانے کے وعدے کرنےکے باوجود عوام کے بنیادی سہولیات کی حالت دگرگوں اور قابل تشویش  کی حد تک جاری ہے، جو بھٹکلی عوام کے لئے کسی سانحہ سے کم نہیں ہے، خاص کر بھٹکل شہر میں اندرونی نالیوں کا نظام عوام کو ہر طرح سے پریشان کررکھاہے۔

یہ کیسا سانحہ دیکھئے ! ضلع میں سب سے زیادہ تیز رفتاری سے ترقی کی طرف گامزن شہر بھٹکل میں گندے پانی کی نکاسی کے لئے کوئی جگہ نہیں ہے۔ یہ پانی جہاں تہاں جمع ہوکر گھروں اور کمپائونڈوں کے اندر پہنچ کرگھروں کو آلودہ کررہا ہے۔ شہر کے کنوؤں کی کہانی کہنے کے لائق ہے ہی نہیں، اسی طرح ایسے واقعات بھی ہوئے ہیں جہاں گھر کے صحن میں فضلات سے آلودہ پانی میں کیڑوں ، جراثیموں کی بھر مار کی وجہ سے تکالیف کا سامنا کرتے عوام بلدیہ کے خلاف پولس تھانے  تک پہنچ گئے تھے ۔ایسا لگتاہے کہ  مچھروں کی پیدائش کے لئے شہر بھٹکل بالکل موزوں اور مناسب مقام ہے، بیماری کے خوف کا ازالہ کبھی ہوگا بھی یا نہیں، اس بات کا کسی کے پاس جواب نہیں ہے۔ راہ گیروں کے لئے تو بارش کے موسم میں اس بات کا پتہ لگانا مشکل ہوجاتا ہے کہ بارش کا پانی کونسا ہے اور گندہ اور آلودہ پانی کونساہے۔ پانی بہنے کے لئے جگہ نہ ہونے کی وجہ سے قلب شہر شمس الدین سرکل بارش کے موسم میں اکثر تالاب کی شکل اختیار کرجاتا ہے۔ ریاست میں جب  ایس ایم کرشنا کی قیادت میں کانگریس کی حکومت تھی تو شہر بھٹکل میں اندرونی نالیوں کے زون 2اور زون 3کا کام مکمل ہوا تھا مگر زون 1 کا کام باقی رکھا گیا تھا۔  اب دو زون پر ہوئے کام پر دس سال سے زائد کا عرصہ گذرچکا ہے۔ نوائط کالونی، آزاد نگر، بندرروڈ اور اطراف کے علاقوں میں باپ دادا کے زمانے کی نالیاں بھر کر خشک ہوجاتی ہیں، جس کا نتیجہ یہ نکل رہاہے کہ شہر بھٹکل میں اندرونی نالیوں کا بہترین انتظام نہ ہونےکی وجہ سے پورا شہر آلودگی سے بھرا نظر آتاہے۔ بھٹکل بلدیہ اب حکومت کو عرضیاں دے دے کر سست ہوچکی ہے، لیکن ابھی تک کوئی حل نہیں نکل آیاہے۔

2014 میں مجلس اصلاح وتنظیم کے صد سالہ جشن میں شرکت کرنے والے  وزیر اعلیٰ سدرامیا  کے سامنے ذمہ داران نے جب اندرونی نالیوں کے ابتر حالات کی تفصیل پیش کی تھی تو کھڑے پاؤں وہیں پر وزیرا علیٰ نے اس کو منظوری دی تھی ۔ اسی ڈائس پر رکن اسمبلی منکال وئیدیا بھی موجود تھے۔ افسوس یہ ہے کہ وزیرا علیٰ نے جیسے ہی ہیلی کاپٹر پر سوارہوکر بنگلورو کی طرف پروازکیا ادھر اندرونی نالیوں کا کام ہوا میں اڑ گیا۔ یہ مسئلہ اب نہ وزیر اعلیٰ کو یا دہے نہ رکن اسمبلی اس کا تذکرہ کرتے ہیں۔اس تعلق سے جب میونسپل صدر محمد صادق مٹا سے سوال کیا گیا تو انہوں نے بتایا کہ ڈرینیج سسٹم کے نئے فیس کے لئے قریب 250 کروڑ روپیوں کی ضرورت ہے، سننے میں آیا ہے کہ حکومت 240 کروڑ روپئے کی منظوری دینے والی ہے، مگر اس رقم کو حاصل کرنے کے لئے رکن اسمبلی کے  ذریعے بھاگ دوڑ کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر حکومت یہ رقم منظور کرتی ہے تو کام شروع کیاجاسکتا ہے۔

اُدھر غوثیہ اسٹریٹ کے مکینوں کا کہنا ہے کہ ڈرینیج سسٹم سے سب سے زیادہ اُن کا علاقہ متاثر ہوا ہے، ڈرینیج سسٹم مکمل طور پر فیل ہوجانے سے پورے شہر کی گندگی غوثیہ اسٹریٹ میں واقع پمپنگ اسٹیشن پر جمع ہوتی ہے اور نکاسی نہ ہونے پر گندے پانی کو قریبی ندی میں چھوڑ دیا جاتا ہے، جس کے نتیجے میں پورے علاقے کے کنویں خراب ہوگئے ہیں، صرف اتنا ہی نہیں ندی آلودہ ہوجانے سے بیماریاں بھی پھیل رہی ہیں۔

دیکھا جائے تو ذمہ داران اس معاملے کو لے کرآ ج اور کل پر ٹال رہے ہیں۔ اندرونی نالیوں کافائل محکمہ آب رسانی کے میز پر دھول کھارہی ہے۔ جس کی طرف شاید ہی کوئی دیکھتا ہوگا ،انہی گومگوں کی کیفیت میں اندروںی نالیوں کے زون دو اور زون تین کا کام مکمل ہوکر 10سال بیت چکے ہیں، سال گزرنےکے ساتھ ساتھ منصوبے کی لاگت رقم میں بھی کئی گنا اضافہ ہوچکا ہے، اب ریاستی حکومت کی میعاد بھی صرف ایک سال کی باقی رہ گئی ہے۔ ایسے میں اگر وزیراعلیٰ اس طرف نظر دوڑاتے ہیں تو کسی کرشمہ سے کم نہیں ہوگا۔ وعدوں، ارادوں کے درمیان حیران پریشان بھٹکلی عوام کا یہ مسئلہ آخر کب حل ہوگا، حل ہوگا بھی یا نہیں۔۔ اس کا جواب ذمہ داران بھی ٹھیک طور پر نہیں دے پارہے ہیں۔ 

ایک نظر اس پر بھی

منگلورو: ایس ایس ایل سی امتحان میں طالب علم کوملے انگلش مضمون میں59 کی جگہ 97 مارکس!

ایس ایس ایل سی اور پی یو سی وغیرہ کے پبلک امتحانات میں پرچہ جانچنے یا پھر مارکس اینٹری کرنے میں گڑ بڑ کے معاملات ہر سال سامنے آتے رہتے ہیں۔امسال بھی منگلورو سے ملنے والی ایک خبر کے مطابق سینٹ ایلوشیئس ہائی اسکول کوڈیال بیل کے ایک طالب علم ایلسٹائر کیوین بنگیرا کے ساتھ بھی ایسا ...

سیول سروس میں دلچسپی رکھنے والوں کے لئے زبردست خوش خبری؛ مینگلور میں ایس سیول سروس اکیڈمی میں دی جارہی ہے بہترین کوچنگ

  ملک کی  ایڈمنسٹریشن میں مسلمانوں کی تعداد نہ کے برابر ہونے کی وجہ سےآج پورے ملک کے مسلمانوں میں تشویش کی لہر پائی جارہی ہے ، جس کو دیکھتے ہوئے نوجوانوں میں بیداری پیدا کی جارہی ہے کہ وہ بڑی تعداد میں  ملک کی ایڈمنسٹریشن میں شامل ہوکر   ملک کی ترقی میں اپنی صلاحیتوں کو بروئے ...

امن کے باغ میں تشدد کا کھیل کس لئے؟ خصوصی اداریہ

ضلع شمالی کینر اکو شاعرانہ زبان میں امن کا باغ کہا گیا ہے۔یہاں تشدد کے لئے کبھی پناہ نہیں ملی ہے۔تمام انسانیت ،مذاہب اور ذات کامائیکہ کہلانے والی اس سرزمین پر یہ کیسا تشددہے۔ ایک شخص کی موت اور اس کے پیچھے افواہوں کا جال۔پولیس کی لاٹھی۔ آمد ورفت میں رکاوٹیں۔ روزانہ کی کمائی سے ...

کیا ساحلی پٹری کی تاریکی دور ہوگی ؟ یہاں نہ ہواچلے ، نہ بارش برسے : مگر بجلی کے لئے عوام ضرورترسے

ساحلی علاقہ سمیت ملناڈ کا کچھ حصہ بظاہر اپنی قدرتی و فطری خوب صورتی اور حسین نظاروں کے لئے متعارف ہو، یہاں کے ساحلی نظاروں کی سیر و سیاحت کے لئے دنیا بھر کے لوگ آتے جاتے ہوں، لیکن یہاں رہنے والی عوام کے لئے یہ سب بے معنی ہیں۔ کیوں کہ ان کی داستان بڑی دکھ بھری ہے۔ کہنے کو سب کچھ ہے ...

ہندوتوا فاشزم کا ہتھکنڈا "بہو لاؤ،بیٹی بچاؤ" ملک کے کئی حصوں میں خفیہ طور پر جاری

آر ایس ایس کے ہندو فاشزم کے نظریے کو رو بہ عمل لانے کے لئے اس کی ذیلی تنظیمیں خاکے اور منصوبے بناتی رہتی ہیں جس میں سے ایک بڑا ایجنڈا اقلیتوں کو جسمانی، ذہنی اور اخلاقی طور پر ہراساں کرنا اور خوف و دہشت میں مبتلا رکھنا ہے۔ حال کے زمانے میں سنگھ پریوار کی تنازعات کھڑا کرنے کے لئے ...

بھٹکل کے سڑک حادثات پرایک نظر : بائک کا سفر کیا………………سفر ہے ؟ غور کریں

’’ مجھے بہت غرورتھا اپنی بائک پر، تیز رفتاری پر، توازن پر ، سمجھتاتھا کہ میں بائک چلانے میں ماہرہوں، جتنی بھی تیز رفتاری ہو اپنی بائک پر مجھے پورا کنڑول ہے ،کراس کٹنگ میں بھی میرا توازن نہیں جاتا، جب چاہے تب میں اپنی بائک کو اپنی پکڑ میں لاسکتاہوں۔ لیکن جب میرا حادثہ ہوا تو ...

ٹی وی، موبائیل اورسوشیل میڈیا کی چکاچوند سے اب کتب خانے ویران :بھٹکل سرکاری لائبریری میں27 ہزار سے زائد کتابیں مگرپڑھنے والا کوئی نہیں

جدید ٹکنالوجی کے دورمیں موبائیل ، لیپ ٹاپ، ٹیاب کی بھر مار ہے یہی وجہ ہے کہ موجودہ دور کو موبائیل دور کہا جاتاہے۔ واٹس اپ کی کاپی پیسٹ تہذیب ، تخلیق ، جدت اور سنجیدگی کو قتل کرڈالا ہے، جس کی وجہ سے بچوں کا مستقبل خطرے میں ہے۔ موبائیل کے ذریعے ہی ہرچیز حاصل کرنے کو ہی جب ...