کیرالہ اور مڈکیری میں پہاڑ کھسکنے کے واقعات کے بعد کیا بھٹکل محفوظ ہے ؟

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 30th August 2018, 11:15 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل30/ اگست (ایس اؤ نیوز) جب کسی پر  بوجھ حد سے زیادہ  بڑھ جاتا ہے تو انسان ہو یا  جانور اس کو جھکنا ہی پڑتاہے، اس میں پہاڑ، چٹان، مٹی کے ڈھیر،تودے  سب  کچھ شامل ہیں۔ قریبی ضلع کورگ اورپڑوسی ریاست کیرالہ میں شدید بارش کے نتیجے میں جس طرح پہاڑ کے پہاڑ کھسک گئے اور چٹانیں راستوں پر گرنے کے ساتھ ساتھ  عمارتیں اور سڑکیں کس طرح پانی میں بہہ گئیں، ان مناظر کو دیکھنے کے بعد پڑوسی اضلاع میں بھی اس طرح کی وارداتوں  کے رونما ہونے میں  بعید از قیاس نہیں ہے۔

شہر بھٹکل  ضلع اترکنڑا  میں تیز رفتاری کے ساتھ ترقی کی طرف گامزن رہنے کی بات  اپنی جگہ سچ   ہے۔ترقی  کے معنی  پھیلنا تو  ہے  مگر جو لوگ ندی کنارے اور  سمندر کنارے مکانات  تعمیر کرکے  رہائش پذیر ہیں ان کے لئے جگہ تنگ نظر آرہی ہے۔ پہاڑوں کے دامن میں مویشیوں کو چروا کر ، سبزی اگا کر اپنا پیٹ بھرنے والا کسان بھی حریص بن رہاہے وہ بھی معاشی سطح پر مضبوط ہونے کے لئے  اپنی تھوڑی سی زمین فروخت کر کے  شہرکا ’’آدمی ‘‘بننا چاہتاہے۔ پہاڑوں ، چٹانوں، بہتی ندیوں  کے راستے میں مشینوں  کی آواز کابڑاشورہے۔ اس کو دیکھتے ہوئے پہاڑوں اورچٹانوں  کے کھسکنے اورنالوں کا ندیوں میں تبدیل ہونے کا خطرہ بڑھتا نظر آرہا ہے۔ اور یہ کہنا  پڑرہا ہے کہ  بھٹکل تعلقہ  بھی  اس کی زد میں ہے۔

 

وینکٹاپور سے جالی ، ہیبلے سمیت بی ایس این ایل دفتر تک تقریبا ً آدھے سے زائد بھٹکل شہر پہاڑ پر ہی بسا ہواہے۔   نشیبی علاقوں کے لوگ پرانے محلوں سے نئے محلوں میں جانے کے لئے ( آراروسون ائیتا)یعنی  بلندی والے علاقوں  پر جا کر آتاہوں کہنے کی روایت رہی ہے۔آج جس علاقے کو گلمی کہتے ہیں دراصل وہ  پہاڑ کو کاٹ کر  ہی بسایا گیا ہے۔ پہلے یہاں   ایک  ہی گھر تھا پھر دس مکانات بنے پھر یہ تعداد بڑھ کر سو تک پہنچ گئی، یہاں تعلیمی اداروں کا وسیع کامپلیکس پہلے سے موجود ہے، مگر  اب پہاڑ کو رہائشی مقصد کے لئے نیچے سے کاٹنے کی وجہ سے تعلیمی اداروں کی عمارتوں کےلئے بھی خطرہ بڑھتا نظر آرہا ہے۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ  پہاڑ کاٹ کر مکانات تعمیر کرنے کا سلسلہ رُک نہیں رہا ہے۔  پہاڑ کو کاٹ کر چوٹی پر پہنچنے اور بلندی پر عمارت تعمیر کرنے کی  خواہش بڑھتی ہی جارہی ہے۔ اب تھوڑا آگے بڑھیں  تو کورگار کیری بھی پہاڑ پرہی آباد ہے۔ پھر آگے  بیلنی کی طرف چلیں تو یہاں سب کچھ پہاڑ پر ہی بسیرا ہے۔کبھی کبھار پہاڑ سے کوئی ٹکڑا  گرتابھی ہے تو  کوئی اس کی طرف توجہ نہیں دیتا۔ ایک طرف تلگوڈ، دوسری طرف بیلنی  سے ہوتے ہوئے مخدوم کالونی پہنچ کر ایک نظر دوڑائیں تو منی کورگ نظر آتاہے۔

ہاڈولی۔ کونار، ماروکیری ، اترکوپاجیسے دیہی علاقوں میں بھی پہاڑوں کے دامن میں بسیر اڈھونڈنے کی کوششیں جاری ہیں۔تلان میں پتھروں کی کھدائی کے لئے پہاڑ کاٹے جا رہے ہیں۔ ان سب وجوہات کا کلی نتیجہ اخذ کریں تو یہی سمجھ میں آتا ہے کہ بچے کھچے پہاڑی حصے پر بوجھ بڑھتا جا رہا ہے جس کے نتیجے میں  ماحولیاتی تناسب بگڑ رہا ہے، دور جانے کی ضرورت نہیں،  پڑوسی تعلقہ ہوناور، کاروار اور شیرور کے قریب اوتینانی میں نیشنل ہائی وے کی تعمیر کے لئے پہاڑوں کو کاٹنے کے نتیجے میں چٹانوں کا راستوں پر گرنے کی تازہ مثالیں موجود ہیں۔ایسے میں  سوال یہ ہے کہ   بوجھ سے پہاڑ  جھکنے سے پہلے آخر اس کا وزن کون  کم کرے گا؟

بھٹکل شہر اور نواحی علاقوں کی یہ صورت حال ہے تو مرڈیشور کی کہانی کچھ اور کہتی ہے۔ یہاں پہاڑ کے کھسکنے کا کوئی ڈر ویسے نظر نہیں آرہا ہے لیکن مرڈیشور کے لئے بارش کا پانی خطرہ بنتا جارہاہے۔ سیاحوں کو ترغیب دینے ، کمانے کی دوڑ میں مرڈیشور بے ڈھنگے طورپر بڑھتا جارہاہے۔ جہاں دیکھو وہاں مکانات اور  رہائشی گھر  تعمیر ہورہے ہیں۔ بارش کے پانی کو سمندر تک پہنچانےوالا کاری نالے کا راستہ بدل دیاگیا ہے۔ آج جہاں سے پانی بہتاہے، اور جس جگہ پانی جمع ہوتاہے اُن تمام  جگہوں پر  عمارتیں  کھڑی ہوگئی ہیں۔ اگر زیادہ بارش ہوتی ہے تو راستے، سڑکیں ، کھیت کھلیان سب کچھ  ندی نالوں میں تبدیل ہونا عام بات ہوگئی ہے۔پیسوں کی کھنک کے لئے پورے گاؤں کی تصویر  بگاڑنے کی  جوکوشش ہورہی ہے اس میں گرام پنچایت ، تحصیل افسران کی حصے دارہونے کا بھی  عوام الزام لگارہے ہیں۔

کہنے والے کہتے ہیں کہ  بارش بھلے کتنی  بھی  ہوجائے،آخر کاربارش  کا پانی سمندر میں ہی  مل جاتاہے  ۔مگر لوگوں کو کون سمجھائے کہ پانی سمندر میں ملنے سے پہلے ہی اگر شہر کو ہی غرق کردے تو کیا ہوگا ؟فی الحال اس طرح کی باتوں پر کوئی غور کرنے کے لئے تیار نہیں ہے۔ ہاں یہ بات یاد رکھنے کی ہے کہ جس طرح کیرلا اور قریبی ضلع کورگ  سیلاب کی زد میں آکر جن مشکلات اور پریشانیوں کو جھیل رہاہےایسی آفات سے بھٹکل کی حفاظت کرنا پورے عوام کے لئے ضروری ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل: نوجوان اپنی ذمہ داریوں کو سمجھیں اور وقت کا صحیح استعمال کریں : ڈاکٹر سریش نایک

دی نیوانگلش پی یو کالج میں منعقدہ پارلیمنٹ نامی ایک پروگرام کا افتتاح کرتے  ہوئے بھٹکل ایجوکیشن  کے صدر ڈاکٹر سریش نایک نے نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ اپنی ذمہ داریوں کا شعور رکھتے ہوئے اوقات کا صحیح استعمال کریں اور  ملک کی تعمیر اور اس کی ترقی میں  اپنا رول ادا کریں۔  انہوں نے ...

اترکنڑا ضلع کے سبھی پولس تھانوں میں ہر ماہ کی دوسری اتوار کو ’یوم دلت‘ منایاجائے : ڈی سی ہریش کمار

پسماندہ طبقات وذات والوں کے مسائل اور شکایات کو حل کرنے کے لئے ہر ماہ  کی دوسری اتوار کو سبھی پولس تھانوں میں ’’ یومِ دلت ‘‘ منانے کے لئے منصوبہ تشکیل دینے اترکنڑاڈی سی ڈاکٹر ہریش کمار نے پولس محکمہ کو  ہدایات جاری کی ہیں۔

کاسرگوڈ میں جانور لے جانے کے الزام میں دو لوگوں پر حملہ؛ بجرنگ دل کارکنوں کے خلاف معاملات درج کرنے پر مینگلور کے قریب وٹلا اور بنٹوال میں بسوں پر پتھراو

پڑوسی ریاست کیرالہ کے  کاسرگوڈ میں جانور لے جانے کے الزام میں دو لوگوں پر حملہ اور لوٹ مار کی وارداتوں کے بعد پولس نے جب  بجرنگ دل کارکنوں کے خلاف معاملات درج کئے  تو  مینگلور کے قریب  وٹلا اور بنٹوال  میں  بسوں پر پتھراو اور توڑ پھوڑ کی واردات پیش آئی ہے۔ پتھراو میں   نو ...

بھٹکل میں 110 کے وی اسٹیشن کے قیام سے ہی بجلی کا مسئلہ حل ہونے کی توقع؛ کیا ہیسکام کو عوامی تعاون ملے گا ؟

بھٹکل میں رمضان کے آخری دنوں میں بجلی کی کٹوتی سے جو پریشانیاں ہورہی تھی، سمجھا جارہا تھا کہ  عین عید کے  دن  بعض نوجوانوں کے  احتجاج کے بعد  اُس میں کمی واقع ہوگی اور مسئلہ حل ہوجائے گا، مگر  عید الفطر کے بعد بھی  بجلی کی کٹوتی یا انکھ مچولیوں کا سلسلہ ہنوز جاری ہے اور عوام ...

بھٹکل تعلقہ اسپتال میں ضروری سہولتیں تو موجود ہیں مگر خالی عہدوں پر نہیں ہورہا ہے تقرر

جدید قسم کا انٹینسیو کیئر یونٹ (آئی سی یو)، ایمرجنسی علاج کا شعبہ،مریضوں کے لئے عمدہ ’اسپیشل رومس‘ کی سہولت کے ساتھ بھٹکل کے سرکاری اسپتال کو ایک نیا روپ دیا گیا ہے۔لیکن یہاں اگر کوئی چیز نہیں بدلی ہے تو یہاں پر خالی پڑی ہوئی اسامیوں کی بھرتی کا مسئلہ ہے۔ 

آر ایس ایس کی طرح کوئی مسلم تنظیم کیوں نہیں؟ از: ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز

مسٹر نریندر مودی کی تاریخ ساز کامیابی پر بحث جاری ہے۔ کامیابی کا سب کو یقین تھا مگر اتنی بھاری اکثریت سے وہ دوبارہ برسر اقتدار آئیں گے اس کا شاید کسی کو اندازہ نہیں تھا۔ دنیا چڑھتے سورج کی پجاری ہے۔ کل ٹائم میگزین نے ٹائٹل اسٹوری مودی پر دی تھی جس کی سرخی تھی ”India’s Divider in Chief“۔

خود کا حلق سوکھ رہا ہے، مگر دوسروں کو پانی فراہم کرنے میں مصروف ہیں بھٹکل مسلم یوتھ فیڈریشن کے نوجوان؛ ایسے تمام نوجوانوں کو سلام !!

ایک طرف شدت کی گرمی اور دوسری طرف رمضان کا مبارک مہینہ  ۔ حلق سوکھ رہا ہے، دوپہر ہونے تک ہاتھ پیر ڈھیلے پڑجاتے ہیں،    لیکن ان   نوجوانوں کی طرف دیکھئے، جو صبح سے لے کر شام تک مسلسل شہر کے مختلف علاقوں میں پہنچ کر گھر گھر پانی سپلائی کرنے میں لگے ہوئے ہیں۔ انہیں  نہ تھکن کا ...

مودی جی کا پرگیہ سنگھ ٹھاکور سے لاتعلقی ظاہر کرنا ایسا ہی ہے جیسے پاکستان کا دہشت گردی سے ۔۔۔۔ دکن ہیرالڈ میں شائع    ایک فکر انگیز مضمون

 وزیر اعظم نریندرا مودی کا کہنا ہے کہ وہ مہاتما گاندھی کے قاتل ناتھو رام گوڈسے کو دیش بھکت قرار دیتے ہوئے ”باپو کی بے عزتی“ کرنے کے معاملے پر پرگیہ ٹھاکورکو”کبھی بھی معاف نہیں کرسکیں گے۔“امیت شاہ کہتے ہیں کہ پرگیہ ٹھاکور نے جو کچھ کہا ہے(اور یونین اسکلس منسٹر اننت کمار ہیگڈے ...

بلقیس بانو کیس۔ انصاف کی جدوجہد کا ایک سنگ میل ......... آز: ایڈووکیٹ ابوبکرسباق سبحانی

سترہ سال کی ایک لمبی اور طویل عدالتی جدوجہد کے بعد بلقیس بانو کو ہمارے ملک کی عدالت عالیہ سے انصاف حاصل کرنے میں فتح حاصل ہوئی جس فتح کا اعلان کرتے ہوئے عدالت عالیہ (سپریم کورٹ آف انڈیا) نے گجرات سرکار کو حکم دیا کہ وہ بلقیس بانو کو پچاس لاکھ روپے معاوضہ کے ساتھ ساتھ سرکاری نوکری ...