بھٹکل کے غریب مریضوں کے علاج کے لئے وزیرا علیٰ کے فنڈ سے منظور 25لاکھ روپیوں کی تقسیم

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 17th July 2017, 7:02 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل:17/جولائی (ایس اؤنیوز)مختلف بیماریو ں میں مبتلا ہوکر اسپتال میں علاج پانے والے بھٹکل ہوناور ودھان سبھا حلقہ کے 40 مستفیدین میں وزیر اعلیٰ کے متاثرہ  فنڈ سےمنظور کل 25لاکھ روپیوں کو رکن اسمبلی منکال وئیدیا نے تقسیم کیا ۔

ریاستی حکومت کی طرف سے منظورشدہ یہ خصوصی رقم مریض علاج پائے اسپتالوں کو راست طورپر ادا کیاگیا ہے۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے رکن اسمبلی منکال وئیدیا نے کہاکہ تعلقہ کے غریب مریضوں کو اپنی بساط سے زیادہ مدد پہنچانے کے لئے کوشاں ہوں، اس کے لئے ضلع نگراں کار وزیر آر وی دیش پانڈے اور ریاستی وزیرا علیٰ سدرامیا ہر سطح پر تعاون دینے کی وجہ سے یہ سب ممکن ہونے کی بات کہی۔ اس موقع پر بلاک کانگریس صدر وٹھل نائک، اسٹانڈنگ کمیٹی چیرمن وشنو دیواڑیگا، منجوناتھ نائک بیلکے، ناگراج نائک جالی وغیرہ موجود تھے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل میونسپالٹی عمارت پر توڑ پھوڑ کا معاملہ؛ سنگھ پریوار کے کارکنوں کی گرفتاری کے خلاف انکولہ میں احتجاج۔ بھٹکل چلو ریالی کا اعلان

بھٹکل میں بلدیہ عمارت پر حملے کے بعد توڑ پھوڑ اور سرکای عمارت کو نقصان پہنچانے کے الزام میں جہاں ایک طرف پولیس متعلقہ افراد کو گرفتار کررہی ہے، وہیں پر ضلع کے مختلف مقامات پر اسے ہندو مسلم تفرقہ کا رنگ دیتے ہوئے پولیس پر الزام لگایا جارہا ہے کہ وہ بلاوجہ ہندوؤں کو ہراساں کررہی ...

مرڈیشور میں نوائط فاؤنڈیشن بنگلورو کے زیراہتمام یکم اکتوبر کو مفت طبی کیمپ کا انعقاد : عوام سے استفادہ کی اپیل

مرڈیشور نوائط فاؤنڈیشن بنگلورو کے زیرا ہتمام کمیونٹی کے مختلف مقامات پر قائم جماعتوں کے تعاون سے یکم اکتوبر کو نیشنل ہائی اسکول مرڈیشور میں صبح 10بجے سے شام 6 بجے تک فری میڈیکل کیمپ منعقد کئے جانے کی محفل کی طرف سے جاری کردہ پریس ریلز میں جانکاری دی گئی ہے۔

بھٹکل میں شری درگا مورتی کی وداعی پر پابندی کی مذمت میں راشٹریہ ہندو اندولن کا میمورنڈم

مغربی بنگال میں شری درگا مورتی کی وداعی پر پابندی عائد کرنا مذہبی تفریق ہے، مرکزی حکومت فوری مداخلت کرنے کا مطالبہ لے کر راشٹریہ ہندو آندولن بھٹکل کمیٹی نے اسسٹنٹ کمشنر کے ذریعے میمورنڈم سونپا۔

بھٹکل میونسپالٹی عمارت پر پتھرائو کا معاملہ؛ دکانداروں کی جدوجہد میں شریک ہونے والوں کے خلاف درج معاملات کو رد کرنے کا مطالبہ

رام چندرنائک کی خود کشی کے بعدجو پتھراؤ ہواہے وہ ایک فطری کارروائی تھی ، اسی کے پیش نظر جدوجہد کرنےو الوں پر ڈکیتی کا کیس درج کرنا قابل مذمت ہونے کی دکانداروں نے بات کہی۔