کانگریس عہدیداروں کا تقرر برگشتگی کا سبب نہیں:پرمیشور

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 16th July 2017, 10:30 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،15؍ جولائی(ایس او نیوز) کرناٹک پردیش کانگریس کمیٹی کے عہدیداروں کے تقرر کو لے کر پارٹی میں کسی طرح کی ناراضگی پائی نہیں جاتی۔ بعض اراکین اسمبلی وقائدین کی طرف سے عہدیداروں کے تقرر کے معاملے میں پارٹی اعلیٰ کمان سے شکایت کی خبریں بے بنیاد ہیں۔ یہ بات آج کرناٹک پردیش کانگریس کمیٹی صدر ڈاکٹر جی پرمیشور نے کہی۔اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ آنے والے انتخابات کو پیش نظر رکھ کر عہدیداروں کی اتنی طویل فہرست ترتیب دی گئی ہے ، اس فہرست میں تمام طبقات کو مناسب نمائندگی دینے کے ساتھ خواتین کو بھی اچھے عہدوں پر فائز کیاگیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ پارٹی کے نئے عہدیداروں کے تقرر کو لے کر پارٹی کے داخلی محاذ میں کہیں کوئی ناراضگی ظاہر نہیں کی گئی اور اگر کی جائے تو اسے داخلی طور پر نمٹایا جائے گا۔ رکن پارلیمان کے ایچ منی اپا کی طرف سے پارٹی عہدیداروں کے تقرر پر اعتراض کی خبروں کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ان کی طرف سے جن ناموں کی سفارش کی گئی تھی، ان پر بھی پوری توجہ دی گئی ہے۔ پارٹی کے عہدیداروں کی فہرست میں فی الوقت جن قائدین کا نام شامل نہیں ہے انہیں دیگر ذمہ داریوں پر مامور کیا جائے گا۔ اس فہرست میں نوجوانوں کو زیادہ ترجیح دی گئی ہے اور پارٹی کے عہدیداروں میں توازن برقرار رکھنے کی کوشش کی گئی ہے۔ اے آئی سی سی جنرل سکریٹری ایم سی وینو گوپال چونکہ کیرلا سے تعلق رکھتے ہیں کرناٹک اسمبلی انتخابات بھی کیرلا کے طرز پر کروانے کانگریس قیادت کی تیاریوں کی خبروں کو بعید از حقیقت قرار دیتے ہوئے ڈاکٹر پرمیشور نے کہاکہ کرناٹک کیلئے کرناٹک ہی ماڈل ہے۔ انہوں نے کہاکہ بی جے پی قائدین کا یہ الزام بھی غلط ہے کہ ریاست کے ساحلی علاقوں میں کانگریس کیرلا کے طرز پر فرقہ وارانہ ماحول کو مکدر کرنے کی کوشش کررہی ہے، تاکہ اقتدار پر برقرار رہ سکے۔ انہوں نے کہاکہ یہ الزام غلط ہے کہ وینو گوپال کرناٹک میں فرقہ وارانہ حالات کے بگاڑ کو ہوا دینے کی کوشش کررہے ہیں، بلکہ وینو گوپال ریاست میں پارٹی کو منظم کرنے میں لگے ہوئے ہیں۔ اب تک انہوں نے کوئی اشتعال انگیز یا فرقہ پرستانہ بیان بازی نہیں کی ہے۔ سابق وزیر داخلہ نے کہاکہ بی جے پی اور بعض مسلم تنظیموں کے قائدین اگر اشتعال انگیز بیان بازی بند کردیں تو ساحلی علاقوں میں نظم وضبط کو غیر معمولی رفتار سے قابو میں کیا جاسکتا ہے۔اس کے باوجود بھی ریاستی حکومت کی طرف سے یہی کوشش کی جارہی ہے کہ ساحلی علاقوں میں جلد از جلد امن بحال کیا جائے۔ ریاست کے بعض کالجوں میں لکچرارس کی طرف سے سیاسی تنظیموں سے وابستگی اور ان کے حق میں انتخابی مہم چلانے کے متعلق نیشنل اسٹوڈنٹس یونین آف انڈیا کی کرناٹک شاخ کی شکایت پر ڈاکٹر پرمیشور نے کہاکہ اے آئی سی سی جنرل سکریٹری وینو گوپال نے اس سلسلے میں مناسب کارروائی کرنے کی ہدایت دی ہے، لیکن انہوں نے لکچرارس کے خلاف کارروائی کا حکم کہیں نہیں دیا ،بلکہ فرقہ پرست عناصر کو پنپنے سے روکنے پارٹی کارکنوں کو ہدایت دی ہے۔ ڈاکٹر پرمیشور نے بتایا کہ 21؍ جولائی کو اے آئی سی سی نائب صدر راہول گاندھی دورۂ بنگلور پر آئیں گے اور شہر میں ہونے والی امبیڈ کر انٹرنیشنل کانفرنس میں شرکت کریں گے۔اس کے ساتھ ہی24 اگست کو رائچور میں کانگریس کنونشن میں بھی شرکت کریں گے۔ پرپنا اگراہارا سنٹرل جیل میں اعلیٰ آئی پی ایس افسران کے درمیان ایک دوسرے پر الزام تراشیوں کے متعلق انہوں نے کہاکہ جب وہ وزیر داخلہ تھے ان کے علم میں یہ بات نہیں آئی تھی۔ وزیر اعلیٰ سدرامیا نے اب اس معاملے کی جانچ کے احکامات صادر کردئے ہیں توقع ہے کہ تحقیقاتی رپورٹ کے ذریعہ حقائق سامنے آئیں گے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

چکمنگلور میں پٹرول ٹینکر اُلٹ گئی؛ دو زندہ جل کر ہلاک؛ کئی مکانوں میں آگ؛ سو میٹر تک آگ کے شعلے؛ مرنے والوں کی تعداد زائد ہونے کا خدشہ

ریاست کرناٹک کے ضلع چکمنگلور کے کڈور تعلقہ کے گریا پور میں ہائی وے پر ایک پٹرول ٹینکر اُلٹ جانے کے نتیجے میں سو میٹر سے زائد رقبہ تک آگ پھیلنے کے ساتھ ساتھ  کم ازکم دو لوگوں کے ہلاک ہونے کی اطلاع ملی ہے ۔

کسانوں کا قرضہ معاف کرنے مرکزی حکومت سے تعاون کی اپیل 85لاکھ سے زائد کسان مشکلات کا شکار ہیں ، مصیبت کی گھڑی میں ہاتھ تھامنا مرکزی و ریاستی حکومت کاکام ہے: کمار سوامی

قرض کی دلدل میں پھنسے ہوئے کسانوں کو اوپر لانے کی خاطر کئے جارہے قرضہ معاف اسکیم کو مرکزی حکومت 50فی صد امداد فراہم کرے ، اس خیال کااظہار ریاستی وزیر اعلیٰ کمار سوامی نے کیا۔

ٹریفک پر قابو پانے کیلئے دو فلائی اوور کی تعمیر عنقریب

سڑکوں کی بدحالی کے سبب شہر میں ٹریفک جام کا مسئلہ پیش آیا ہے جسے دور کرنے کیلئے تارکول کے بجائے کانکریٹ کی سڑکیں بچھائی گئی ہیں ۔ اولڈ مدراس روڈ کو اولڈ ایرپورٹ روڈ سے جوڑنے والے 2.6کلومیٹر طویل سرنجن داس روڈ پر کانکریٹ کی سڑک تعمیر کی گئی ہے ۔

ملک بھر میں لاری مالکان کی ہڑتال شروع اشیائے ضروری کی سربراہی متاثر ہونے کا امکان

ڈیزل کی قیمتوں میں اضافہ، تھرڈ پارٹی انشورنس پریمیم کی فیس میں اضافے کے خلاف کرناٹک سمیت ملک بھر میں لاری مالکان کی غیر معینہ مدت ہڑتال آج سے شروع ہوچکی ہے۔ اس ہڑتال میں کل سے مزید شدت لائی جائے گی۔

گوری لنکیش قتل معاملہ: سری رام سینا نے کیا مہلوک صحافیوں کا 'کتے' سے موازنہ؛ پوچھا، کیا کتے کی مو ت کے لئے بھی وزیراعظم ذمہ دار ہیں؟

شری رام سینا کے صدر پرمود متالک نے کرناٹک اور مہاراشٹر میں سماجی کارکنان اور صحافیوں کے قتل پر متنازعہ بیان دیا ہے۔ گوری لنکیش اور ایم ایم کلبرگی کے قتل کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کانگریس پر سوال کھڑے کرتے ہوئے متنازعہ بیان دیا ۔