انکم ٹیکس آفیسر کے مغویہ فرزند شرتھ کی نعش برآمد؛رقم کے لالچ میں دوستوں نے ہی اس کا کام تمام کردیا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 22nd September 2017, 11:10 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،22؍ستمبر (ایس او نیوز؍عبدالحلیم منصور) 12؍ ستمبر کو شہر کے ایک انکم ٹیکس آفیسر کے لڑکے کو اغوا کرلیا گیا تھا، جس کے بعد اس سلسلے میں ہمہ قسم کی قیاس آرائیاں کی جارہی تھیں تاہم فوری تحقیقات کرتے ہوئے پولیس نے مقتول شرتھ کے دوستوں کو اس کے قتل کے الزام میں گرفتار کرتے ہوئے پتہ لگایا ہے کہ پیسے کے لالچ میں ان لوگوں نے اپنے دوست کا کام تمام کردیا ۔ 12 ستمبر کو شرتھ کا اغوا کیاگیا تھا، اسے اغوا کرنے کیلئے جو سوئفٹ کار استعمال کی گئی تھی اسی میں اس کا گلا گھونٹ کر ماردیا گیا اور مضافات شہر راموہلی تالاب میں اس کی نعش پتھر باندھ کر پھینک دی۔ پولیس نے اس معاملے کی تحقیقات کرکے اس معاملے میں بے خبری کا ناٹک کرنے والے 21 سالہ وشال ، پرساد 24 کرن 22 اور ونود کمار 24 کو گرفتار کرلیاہے، جبکہ ان کا ایک اور ساتھی شانتا کمار فرار ہوگیا۔ بتایاجاتاہے کہ اس گینگ کا سرغنہ وشال شرتھ کی بہن کا کلاس میٹ ہے، اور قریب ہی مقیم تھا، اکثر یہ دونوں ملا کرتے تھے، اس نے شرتھ کے گھروالوں کا اعتماد بھی حاصل کرلیا تھا، اسی اعتماد کا غلط فائدہ اٹھاکر اس نے انکم ٹیکس آفیسر کے اکلوتے فرزند کو مار ڈالا ۔ بتایاجاتاہے کہ اغوا کرنے کے بعد انکم ٹیکس آفیسر سے 50لاکھ روپیوں کا ہرجانہ طلب کیا گیا۔ تاہم اس سلسلے میں پولیس کی کارروائی سے خوفزدہ ہوکر ملزمین نے شرتھ کو مار ڈالا۔ اغوا کے 9؍ دن بعد آج رامو ہلی تالاب سے شرتھ کی نعش برآمد کی گئی۔ بتایاجاتاہے کہ اغوا کاروں کو یہ خدشہ تھاکہ انکم ٹیکس آفیسر نے ان کے بارے میں پولیس کو ضرور بتایا ہوگا، اسی لئے ان لوگوں نے شرتھ کو مار کر راہ فرار اختیار کرلی۔ ملزم وشال کا بہنوئی شانتا کمار جوفرار ہے اس نے چار لاکھ روپیوں کا قرضہ کیاتھااس کی قرضے کی ادائیگی کیلئے شرتھ کا اغوا کیاگیا۔ مقتول شرتھ آچاریہ کالج میں ڈپلوما کا طالب علم تھا، جبکہ اس کی بڑی بہن انجینئرنگ کی طالبہ تھی، وشال بھی اس کے ساتھ انجینئرنگ کررہاتھا۔ بتایاجاتاہے کہ شرتھ کا قتل کرنے کے بعد بھی وشال اس کے گھر آتاجاتا رہا۔ تحقیقات کے مرحلے میں اس نے پولیس ٹیم کو گمراہ بھی کرنے کی کوشش کی۔اس کی ان کوششوں کو دیکھتے ہوئے پولیس کو شبہ ہوا اور جب سختی سے پوچھ تاچھ کی گئی تو اس نے سارا معاملہ بیان کردیا۔ اس نے بتایاکہ 12؍ ستمبر کو شرتھ کا اغوا کرنے کے بعد اس کی ٹولی نے 50 لاکھ روپیوں کا ہرجانہ طلب کرتے ہوئے ویڈیو مسیج شرتھ کے فون سے ہی روانہ کیا۔ اس مسیج میں شرتھ نے خود کہاتھاکہ رقم ادا کرکے کسی طرح اسے آزاد کرالیا جائے،تاہم اس مسیج پر پولیس کو یہی شبہ ہواتھا کہ شایدشرتھ نے خود اغوا کا ڈرامہ کیا ہے۔ اس پیغام میں شرتھ نے یہ بھی اشارہ دے دیا تھا کہ اس کی بڑی بہن کو بھی بچایا جائے، اسی بنیاد پر پولیس کو وشال پر شبہ ہوا اور پوچھ تاچھ کا سلسلہ شروع ہوگیا ، اس کے بعد انکم ٹیکس آفیسر نرنجن نے پولیس میں شکایت درج کرائی اور اغوا کاروں کو ڈھونڈنے کیلئے چار الگ الگ ٹیمیں تشکیل دی گئیں، اس سے پہلے کہ یہ ٹیمیں کارروائی کرتیں، قاتل مغویہ کے گھرپر ہی مل گیا۔ 

ایک نظر اس پر بھی

ہبلی :پٹاخوں سے گھر میں لگی آگ ، کئی اشیاء جل کر خاک : کوئی جانی نقصان نہیں

دیوالی کے موقع پر پٹاخوں کو پھوڑنے کو لےکر سرکاری و غیر سرکاری طورپر احتیاطی تدابیر اختیار کرنےکے سلسلےمیں کئی احکامات جاری کئے جاتےہیں اور رہنمائی کی جاتی ہے لیکن اس کے باوجو د ہر سال پٹاخوں سے جانیں تلف ہونے  بچوں کی بینانی متاثر ہونے   پر سماجی ذمہ داران تشویش کا اظہار ...

وزیر اعلیٰ عہدے کے امیدوار کا اعلان نہ ہونے کی کانگریس کی انتخابی امید پر کوئی اثر نہیں ہوگا: جی پرمیشور

کرناٹک ریاستی کانگریس نے آج یہاں کہا کہ اسمبلی انتخابوں سے پہلے ریاست میں وزیر اعلیٰ عہدہ کے امید وار کے نام کا اعلان نہیں کئے جانے سے پارٹی کی امیدوں پر اس کاکوئی اثرنہیں پڑے گا۔