بابری مسجد شہادت کیس، کھرگے نے مرکزی وزیر اوما بھارتی کا استعفیٰ طلب کیا

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 21st April 2017, 1:56 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو:20/اپریل(ایس او نیوز) کانگریس پالیمانی پارٹی لیڈر ملیکارجن کھرگے نے بابری مسجد کی شہادت کے کیس میں مجرم قرار دی گئی، مرکزی وزیر برائے آبی وسائل اوما بھارتی کو مستعفی ہوجانے کا مشورہ دیا۔اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے مسٹر کھرگے نے کہاکہ دوسری پارٹیوں پر جب بھی الزامات آئے تو بی جے پی متعلقہ لیڈروں کے استعفے پر ضد کرتی رہی اور ایوانوں کی کارروائی چلنے نہیں دی، بابری مسجد کی شہادت جیسے سنگین معاملے میں عدالت عظمیٰ نے او ما بھارتی کو دیگر ملزمین کے ساتھ برابر ذمہ دارقرار دیتے ہوئے ان کے خلاف مقدمہ چلانے کا فیصلہ کیا ہے، اس معاملے میں بی جے پی خاموش کیوں ہے؟۔ انہوں نے کہاکہ اس کیس میں دیگر ملزمین ایل کے اڈوانی یا مرلی منوہر جوشی فی الوقت کسی سرکاری عہدہ پر فائز نہیں ہیں، البتہ اوما بھارتی، مودی کابینہ کی ایک اہم وزیر ہوتے ہوئے اس کیس کا سامنا کریں گی، اخلاقی اصول اس بات کا تقاضہ کرتے ہیں کہ ایسے الزامات کا سامنا کرنے والی اوما بھارتی کو فوراً وزارت چھوڑ دینی چاہئے۔ انہوں نے کہاکہ اس معاملے میں وزیر اعظم مودی کی خاموشی بھی افسوسناک ہے۔ موجودہ صورتحال میں بابری مسجد کا معاملہ سامنے لانے اور اڈوانی جیسے بی جے پی لیڈرکو ملزم قرار دیتے ہوئے ان پر قانونی چارہ جوئی کرنے کی پہل کو مسٹر کھرگے نے ایک منظم سیاسی سازش کا حصہ قرار دیا اور کہاکہ اس مقدمہ کو تیزی سے آگے بڑھانے کے پیچھے وزیراعظم مودی کا مقصد بابری مسجد کی شہادت کے ساتھ انصاف کرنا قطعاً نہیں ہے، بلکہ اس کیس کے ذریعہ وہ اپنے سیاسی گرو اڈوانی کو اپنے راستے سے ہٹادینا چاہتے ہیں، تاکہ صدارتی انتخابات کی دوڑ میں اڈوانی شامل نہ ہوسکیں۔ یوبی گروپ کے سربراہ وجئے ملیا کی لندن میں گرفتاری اور چند ہی گھنٹوں میں رہائی پر تبصرہ کرتے ہوئے کہاکہ مودی حکومت کی یہ سب سے بڑی کامیابی ہے کہ ملک کے بینکوں سے 17/ ہزار کروڑ روپیوں کا غبن کرکے فرار ہونے والے شخص کو چند ہی گھنٹوں میں رہا کردیاگیا۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر حکومت برطانیہ سے رابطہ کرکے وجئے ملیا کو ہندوستان لایا جائے اور ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

ریاستی حکومت نے ٹو وہیلر بائیک پر ڈبل سواری کو روک لگانے کا فیصلہ کیا 

کرناٹک حکومت جلدہی ایک فیصلہ کرنے جارہی ہے جسے میں ریاست کے دوپہیوں والے سوار کی زندگی میں تبدیلی آسکتی ہے۔ریاستی حکومت 100سی سی یا اس سے کم انجن کی صلاحیت والے دو پہیوں کی موٹر گاڑیوں پر دو لوگوں کی سواری کرنے پر روک لگانے جارہی ہے ۔

ہبلی :پٹاخوں سے گھر میں لگی آگ ، کئی اشیاء جل کر خاک : کوئی جانی نقصان نہیں

دیوالی کے موقع پر پٹاخوں کو پھوڑنے کو لےکر سرکاری و غیر سرکاری طورپر احتیاطی تدابیر اختیار کرنےکے سلسلےمیں کئی احکامات جاری کئے جاتےہیں اور رہنمائی کی جاتی ہے لیکن اس کے باوجو د ہر سال پٹاخوں سے جانیں تلف ہونے  بچوں کی بینانی متاثر ہونے   پر سماجی ذمہ داران تشویش کا اظہار ...

وزیر اعلیٰ عہدے کے امیدوار کا اعلان نہ ہونے کی کانگریس کی انتخابی امید پر کوئی اثر نہیں ہوگا: جی پرمیشور

کرناٹک ریاستی کانگریس نے آج یہاں کہا کہ اسمبلی انتخابوں سے پہلے ریاست میں وزیر اعلیٰ عہدہ کے امید وار کے نام کا اعلان نہیں کئے جانے سے پارٹی کی امیدوں پر اس کاکوئی اثرنہیں پڑے گا۔