بابری مسجد معاملہ: اجودھیا میں معمولات زندگی معمول پر، پولیس کی سخت چوکسی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 7th December 2017, 12:13 AM | ملکی خبریں |

ایودھیا، 7؍دسمبر(ایس او نیوز؍ایجنسی) اجودھیا میں متنازعہ ڈھانچہ منہدم ہونے کی 25 ویں برسی پر معمولات زندگی تو معمول پر ہے لیکن پولیس سخت چوکسی برت رہی ہے۔ برسی کو ہندو اور مسلمان اپنے اپنے طریقے سے منا رہے ہیں. وشو ہندو پریشد اور کچھ دیگر ہندو تنظیم فتح یا شوریہ دیوس کی حیثیت سے پروگرام منعقد کر رہے ہیں جبکہ مسلمانوں کی جانب سے ’یوم غم ‘ منایاجا رہا ہے. بائیں بازو کی پارٹیوں نے اس دن کو آئین بچاؤ دن کے طور پر منانے کا اعلان کیا ہے. مسلمانوں نے کہیں کہیں تجارتی ادارے بند رکھے ہیں۔ وی ایچ پی ہیڈکوارٹر کارسیوک پورم میں دوپہر بعد اجتماع کے انعقاد کا اعلان کیا ہے۔ ان واقعات کو دیکھتے ہوئے سیکورٹی کے وسیع پیمانہ انتظامات کئے گئے ہیں. چپے چپے پر پولیس نظر رکھ رہی ہے. مرکزی فورسز کی بھی تعیناتی کی گئی ہے۔

مسلمانوں نے ظہر کی نماز میں سپریم کورٹ سے بابری مسجد کے حق میں فیصلہ آنے کے لئے دعا کرنے کی اپیل کی ہے۔ دونوں فرقوں کے پروگراموں کے پیش نظر اتر پردیش میں کل ہی هائی الرٹ جاری کر دیا گیا تھا. اس سلسلے میں ضلع مجسٹریٹوں اور ضلع کے پولیس سپرنٹنڈنٹوں کو ہدایت دے دیئے گئے تھے۔ دریں اثنا، ضلع مجسٹریٹ انل پاٹھک نے بتایا کہ قانون اور امن و امان برقرار رکھنے کیلئے ضلع کو چار زون اور دس سیکٹر میں بانٹ کر چار زونل مجسٹریٹ، دس سیکٹر مجسٹریٹ اور چودہ اسسٹنٹ سیکٹر مجسٹریٹ کی تعیناتی کی گئی ہے۔ اس کے علاوہ سات مجسٹریٹ کو ریزرو میں بھی رکھا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ متنازع شري رام جنم بھومی کی حفاظت کے لیے مقامی پولیس فورس کے علاوہ دس ایڈیشنل پولیس سپرنٹنڈنٹ، چار ڈپٹی پولیس سپرنٹنڈنٹ، 12 کمپنیاں نیم فوجی دستے، چار سو سپاہی ، ایک پلاٹون خواتین كمانڈو، ایک سو پچاس كانسٹبل لگائے گئے ہیں. اس کے علاوہ بم ڈسپوزل اسکواڈ سمیت مختلف مقامات پر سی سی ٹی وی کیمرے بھی لگائے گئے ہیں. حساس علاقوں میں پولیس مسلسل گشت کر رہی ہے۔ مسٹر پاٹھک نے بتایا کہ احتیاط کے طور پر دفعہ 144 لگانے کے ساتھ ہی ضلع کی سرحد میں داخل ہونے والی سڑکوں پر گاڑیوں کی تلاشی لی جا رہی ہے. انہوں نے بتایا کہ تمام ایڈیشنل ضلع مجسٹریٹ کو اپنے اپنے تحصیل علاقوں میں امن و امان برقرار رکھنے کی سخت ہدایات دی گئی ہیں۔ نئے پروگراموں کے انعقاد کی اجازت نہیں دی گئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ سڑک پر اجتماع اور جلوس پر بھی روک لگا دی گئی ہے. ہوٹل، اسپتال میں ٹھہرے افراد پر نگرانی رکھی جا رہی ہے. پورے ضلع میں چوکسی برتنے کی ہدایات دی گئی ہیں.

دریں اثنا، وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) کے ترجمان شرد شرما نے بتایا کہ ملک بھر میں مختلف مقامات پر وشو ہندو پریشد اور بجرنگ دل کے کارکن ہندو سماج سے اپیل کریں گے کہ وہ مٹھ ،مندروں اور گھروں میں پوجا پاٹھ کرکے پرشوتم بھگوان شری رام کی نگری اجودھیا میں متنازعہ شري رام جنم بھومی پر خوبصورت رام مندر کی تعمیر کرانے کا حلف لیں۔ مسٹر شرما نے بتایا کہ وشو ہندو پریشد کے ہیڈکوارٹر کارسیوک پورم میں شوریہ دیوس میں ’سوابھیمان سنکلپ سبھا‘ کیا گیا ہے. اس تقریب میں متنازعہ مذہبی مقام پر خوبصورت رام مندر کی تعمیر کے ساتھ ساتھ کاشی اور متھرا کی بازیابی کا بھی حلف لیا جائے گا۔ یہ اجتماع دوپہر بعد ہوناہے. اس اجتماع میں شري رام جنم بھومی ٹرسٹ کے چیئرمین، منی رام داس، چھاؤنی کے مہنت نرتيہ گوپال داس، مہنت کوشل کشور داس، جگدگرو پرشوتم آچاريہ، شري رام جنم بھوم ٹرسٹ کے سینئر رکن اور ہندو دھام کے مہنت اور سابق ممبر پارلیمنٹ ڈاکٹر رام ولاس داس ویدانتي، مہنت كشوری شرن سمیت وشو ہندو پریشد کے لیڈر اور سنت دھرماچاريہ شرکت کریں گے۔ ادھر، شیوسینا کے ریاستی سربراہ ٹھاکر انل سنگھ صوبہ کور کمیٹی کے ساتھ سریو کے کنارے پرم ہنس رام چندر داس کی سمادھی پر جاکر شہید کارسیوکوں کو خراج عقیدت پیش کیا اور رام للا کے درش کئے. اکھل بھارتیہ ہندو مہاسبھا کی جانب سے 30 اکتوبر اور دو نومبر 1990 کو مارے گئے کارسیوکوں کو سریو کے کنارے خراج عقیدت پیش کی گئی۔ دوسری جانب ، بابری مسجدایکشن کمیٹی کے اعلان کے مطابق مسلمان یوم غم منا رہے ہیں اور بابری مسجد کی دوبارہ تعمیر کے لیے دعا کر رہے ہیں۔ انڈین یونین مسلم لیگ کے صوبائی صدر ڈاکٹر نجم الحسن غنی نے بتایا کہ مسلم لیگ یوم سیاہ کے طور پر منا رہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

مالیگاؤں ۲۰۰۸ ء بم دھماکہ معاملہ،زخمیوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کی گواہی کا سلسلہ جاری، ڈاکٹر سعید فیضی نے گواہی بھتہ پبلک ویلفئر فنڈ میں عطیہ کردیا

مالیگاؤں ۲۰۰۸ ء بم دھماکہ معاملے میں خصوصی این آئی اے عدالت میں بم دھماکوں میں زخمی ہونے والوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کی گواہی بددستور جاری ہے جس کے دوران آج مالیگاؤں کے مشہور و سینئر ڈاکٹر سعید فیضی کی گواہی عمل میں آئی

دواؤں کا معیار اور نوجوانوں کو روزگار انتہائی اہم مسئلہ: پروفیسر عبداللطیف، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس (اسٹوڈنٹس وِنگ) کی تشکیل

آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس کی ایک میٹنگ آج ابن سینا اکیڈمی، دودھ پور، علی گڑھ میں منعقد ہوئی، جس کی صدارت پروفیسر عبداللطیف (قومی نائب صدر، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس، اکیڈمک وِنگ) نے کی۔ جبکہ نظامت کے فرائض ڈاکٹر سنبل رحمن (قومی صدر، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس، خواتین ...

سکھ فسادات: میرے خلاف نہ کوئی ایف آئی آر اور نہ ہی چارج شیٹ، کمل ناتھ نے کہا،بی جے پی جھوٹ پھیلارہی ہے

مدھیہ پردیش کے وزیراعلیٰ کمل ناتھ نے 1984 کے سکھ فسادات پر اٹھ رہے سوالوں پر جواب دیاہے۔کمل ناتھ نے کہاہے کہ 1984 کے سکھ فسادات میں ان کے خلاف کوئی بھی ایف آئی آر یا چارج شیٹ نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ اب اس مسئلے کواٹھانے کے پیچھے صرف سیاست ہے۔انہوں نے کہاکہ جس وقت میں کانگریس کا جنرل ...

بریلی: ایک ساتھ 58 ہندو، مسلم اور سکھ لڑکیوں کی شادی

اجتماعی شادیوں کے بارے میں تو آپ بہت سن لیں گے لیکن یوپی کے بریلی میں ایک منفرد شادی دیکھنے کوملی ہے۔بریلی میں منعقد ایک پروگرام میں ایک ساتھ ہندو، مسلم اور سکھ کمیونٹی کی غریب لڑکیوں کی شادی کرائی گئی۔ایک ساتھ جب گھوڑی پر بیٹھ کر 58 دولہا نکلے تو ہر کوئی اس منفرد بارات کو ...

1984-1993-2002فسادات: اقلیتوں کو نشانہ بنانے میں سیاسی رہنماؤں اور پولیس کی ملی بھگت تھی : ہائی کورٹ

دہلی ہائی کورٹ نے 1984سکھ مخالف فسادات معاملے کے فیصلے میں دوسرے فسادات کولے کر بھی بے حد سخت تبصرہ کیاہے ۔ جسٹس ایس مرلی دھر اور جسٹس ونود کوئل کی بنچ نے پیر کو سجن کمار کو فسادات پھیلانے اور سازش رچنے کا مجرم قرار دیتے ہوئے عمر قید کی سزا سنائی ۔ کورٹ نے کہا کہ سال 1984 میں نومبر کے ...