آندھرا کو خصوصی درجے کا مطالبہ اور پی این بی معاملے پر ہنگامہ، چھٹے دن بھی نہیں ہوسکا کام کاج

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th March 2018, 11:16 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی 12مارچ (ایس او نیوز؍ آئی این ایس انڈیا ) آندھرا پردیش کو خصوصی درجے کا مطالبہ، پنجاب نیشنل بینک فراڈ کیس اور کاویری پانی کے انتظامیہ بورڈ کے قیام کا مطالبہ سمیت مختلف مسائل پر کانگریس، ترنمول کانگریس، تیلگو دیشم پارٹی (ٹی ڈی پی)، وائی ایس آر کانگریس اور انادرمک وغیرہ جماعتوں کے بھاری ہنگامے کی وجہ سے لوک سبھا کی کارروائی آج ایک بار ملتوی کے بعد پورے دن کے لئے ملتوی کر دی گئی۔ بجٹ اجلاس کے دوسرے مرحلے میں پہلے پانچ دن کی کارروائی ان ہی مسائل پر ہنگامے کی نذر ہو چکی ہے۔ اختتام ہفتہ کے بعد آج چھٹے دن بھی ان موضوعات پر ارکان کی نعرے بازی کی وجہ سے کام کاج نہیں ہوسکا۔ بھاری ہنگامے کی وجہ سے ایک بار ملتوی کے بعد ایوان کی کارروائی دوپہر 12 بجے کے بعد شروع ہوئی تو ٹی ڈی پی، وائی ایس آر کانگریس، انادرمک، ٹی آر ایس اور ترنمول کانگریس کے رکن اپنے مسائل پر نعرے بازی کرتے ہوئے نشستوں کے درمیان میں آگئے ۔ کانگریس اور بائیں بازو کی جماعتوں کے رکن ان مقامات پر کھڑے ہوکر احتجاج درج کرا رہے تھے۔ ٹی ڈی پی اور وائی ایس آر کانگریس کے رکن گزشتہ ہفتے کی طرح آندھرا پردیش کو خصوصی ریاست کا درجہ دیئے جانے کا مطالبہ کر رہے تھے۔ ادھر ترنمول کانگریس کے ایم پی آسن کے پاس آکر پی این بی فراڈ کیس پر نعرے بازی کر رہے تھے، کانگریس کے ایم پی بھی اپنے مقام پر کھڑے ہوکر ان کی حمایت کر رہے تھے۔ ٹی ڈی پی کے اشوک گج پتی راجو بھی آج اپنے عملے کے ساتھیوں کے ساتھ پیلاپٹا پہن کر آسن کے قریب کھڑے تھے۔ انہوں نے اور اسی پارٹی کے وائی ایس چودھری نے آندھرا پردیش کو خصوصی ریاست کا درجہ دینے کا مطالبہ پوری نہیں ہونے پر گزشتہ ہفتے ہی مرکزی کابینہ سے استعفیٰ دیا تھا۔ ہمیشہ ہی مختلف طریقے سے احتجاج درج کرانے والے ٹی ڈی پی کے رہنما این شوپرساد آج شہنائی جیسا موسیقی آلہ لے کر ایوان میں پہنچے تھے۔ انادرمک کے رکن کاویری پانی کے انتظامیہ بورڈ بنانے کا مطالبہ کر رہے تھے تو تلنگانہ راشٹر سمیتی کے رکن اپنی ریاست میں ریزرویشن کوٹہ بڑھانے کا مطالبہ اٹھا رہے تھے۔ ان دونوں جماعتوں کے تمام ممبر پارلیمنٹ بھی آسن کے قریب نعرے بازی کر رہے تھے۔ اسپیکر سمترا مہاجن نے بھاری ہنگامے کے درمیان ضروری کاغذات پیش کرائے۔ خزانہ کے وزیر شیوپرتاپ شکلا نے اس درمیان چٹ فنڈ (ترمیمی) بل، 2018 اورمفرور اقتصادی مجرم بل 2018 پیش کئے۔ ہنگامہ رفع نہیں ہوتے ہوئے دیکھتے ہوئے صدر نے ایوان کی کارروائی پورے دن کے لئے ملتوی کر دی۔ اس سے پہلے صبح ایوان کی کارروائی شروع ہونے پر صدر نے جیسے ہی وقفہ سوال شروع کرنے کو کہا، ویسے ہی ٹی ڈی پی، وائی ایس آر کانگریس، ٹی آر ایس، انادرمک اور ترنمول کانگریس کے رکن اپنے مسائل پر نعرے بازی کرتے ہوئے آسن کے قریب آ گئے تھے اور ہنگامہ تھمتا نہیں دیکھ صدر نے چند منٹ بعد اجلاس دوپہر 12 بجے تک کے لئے ملتوی کر دی تھی۔ انہی مسائل کو لے کر گذشتہ پورے ہفتے ایوان میں کام کاج نہیں ہوسکا۔ 

ایک نظر اس پر بھی

جی ایس ٹی انٹیلی جنس کے ڈائریکٹوریٹ جنرل کے گروگرام زونل یونٹ دو تاجروں کو گرفتار کیا

جی ایس ٹی انیٹلی جنس کے ڈائریکٹوریٹ جنرل کے گروگرام زونل یونٹ نے سامان کی حقیقی سپلائی کے بغیر ان پٹ ٹیکس کریڈٹ( آئی ٹی سی) انوائسیز دھوکہ دہی سے جاری کرنے کے معاملے میں دو تاجروں وکاس گوئل اور راجوسنگھ کو گرفتار کیا ہے۔

بھساول ۔ناسک ٹاڈا مقدمہ: سرکاری گواہ نے پولس کی جانب سے لالچ دیئے جانے کا اعتراف کیا

۲۴؍ سال پرانے بھساول۔ناسک ٹاڈا مقدمہ میں گذشتہ کل تیسر ے سرکاری گواہ کی گواہی عمل میں آئی جس کے دوران اس نے جمعیۃ علماء مہاراشٹر (ارشد مدنی) کی جانب سے مقرر کردہ دفاعی وکیل شریف شیخ کی جرح کی دوران اعتراف کیا

کئی مہینوں تک 5 ویں کلاس کی طالبہ کی عصمت دری؛ پرنسپل اور ٹیچر کررہے تھے ریپ، حاملہ ہونے پر ہوا انکشاف؛ پولس کے بھی اُڑ گئے ہوش

پٹنہ پولس نے ایک نجی اسکول کے پرنسپل اور ایک ٹیچر کو ایک گیارہ سالہ لڑکی کی کئی مہینوں سے عصمت دری کرنے کے الزام میں گرفتار کرلیا ہے جن کے تعلق سے بتایا گیا ہے کہ پرنسپل اور ٹیچر پانچویں کلاس کی طالبہ کو  بلیک میل کرتے ہوئے بار بار اُس کا ریپ کررہے تھے۔

تین طلاق پر حکومت کی آرڈیننس قابل مذمت مسلمانوں کو محکوم بنانے کی کوشش ۔ ایس ڈی پی آئی

سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI)نے مرکزی کابینہ کی جانب سے تین طلاق پر آر ڈیننس کومنظوری دیئے جانے کی سخت مذمت کرتے ہوئے اسے ملک کے مسلمانوں کو محکوم بنانے کی ناکام کوشش قرار دیا ہے۔آرڈیننس کے نفاذ سے تین طلاق ایک غیر ضمانتی جرم مانا جائے گا اور کم از کم تین سال کی جیل کی سزا ...

رافیل جنگی طیارہ سودے کو لے کر راہول گاندھی نے کیا وزیر دفاع سے استعفیٰ کا مطالبہ

کانگریس صدر راہل گاندھی نے وزیر دفاع نرملا سیتا رمن پر رافیل جنگی طیارہ سودے کو لے کر لگا تار جھو ٹ بولنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا ہے کہ ان کے جھوٹ کی پول کھلتی جا رہی ہے اس لئے اب وہ اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیں۔