ترک بچوں اور خواتین کا جنسی استحصال کرنے والا خود ساختہ مذہبی رہنما گرفتار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 21st July 2018, 12:17 PM | عالمی خبریں |

انقرہ 21جولائی (ایس او نیوز؍ آئی این ایس انڈیا )استنبول کی ایک عدالت نے بزعم خود ایک اسلامی فرقے کے رہنما اور ٹی وی پر تبلیغ کرنے والی شخصیت عدنان اوکتار کو 115 دیگر پیروکاروں سمیت مختلف الزامات کی مزید تفتیش کے لئے پولیس کے حوالے کر دیا ہے۔ عدنان اوکتار پر جرائم پیشہ گینگ قائم کرنے، دھوکادہی اور جنسی استحصال کے الزامات ہیں۔

ترک خبر رساں ادارے "اناطولو" کے مطابق پولیس نے پانچ مختلف صوبوں میں کئی جائیدادوں پر کارروائی کی تاکہ مالی جرائم کے حوالے سے شواہد حاصل کیے جا سکیں۔ عدنان اوکتار نے عدالت میں پیش کردہ چارج شیٹ کی صحت سے انکار کرتے ہوئے اپنی رہائی کا مطالبہ کیا اور کہا کہ ان کے بیرون ملک روابط ترک مملکت کو کمزور کرنے کے بجائے اس کی قوت بڑھانے کا باعث ہیں۔ "مجھ پر عائد جنسی استحصال کے الزامات بے بنیاد ہیں۔"

عدنان اوکتار ۔۔۔ المعروف یحییٰ ہارون کون ہیں؟

تاہم انٹرنیٹ پر موجود معلومات کے مطابق عدنان اوکتار نے 1982 میں استنبول میں اپنی اسلامی تنظیم کی بنیاد رکھی تھی۔ اس وقت سے عدنان اوکتار نے بہت دولت جمع کی اور اثرو رسوخ بڑھایا۔ اگرچہ ماہرین کے مطابق یہ جاننا یا معلوم کرنا مشکل ہے کہ ان کی آمدن کا ذریعہ کیا ہے۔

حال ہی میں عدنان نے ایک ٹی وی چینل شروع کیا ہے جس کو وہ اپنے عقائد کی تبلیغ جس میں بالخصوص اسلام کی تشریح کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ترکی کے صحافیوں کے مطابق عدنان کے کچھ پیروکار دن میں کام کرتے ہیں جب کہ دیگر ان کے فرقے کے حوالے سے کتابیں تحریر کرتے ہیں، میڈیا پر تشہیر کرتے ہیں یا تنظیم کے لیے کارکن بھرتی کرتے ہیں۔ہارون یحییٰ کے نام سے کتابوں میں ’نظریہ ارتقاء کے جھوٹ‘ کے بارے میں بتایا گیا ہے اور یہ کتابیں سرکاری حکام، غیر ملکی سفارت کاروں اور صحافیوں کو ارسال کی جاتی ہیں۔

مذہبی مبلغ عدنان اوکتار کا سب سے متنازع پہلو ان کی ’ خواتین پیروکاروں کی فوج‘ ہے جو بہت زیادہ ہار سنگار کرتی ہیں اور بہت کم کپڑوں میں ملبوس ہوتی ہیں اور ان خواتین کو اکثر عدنان کا چلبلی لڑکیوں کا حرم کہا جاتا ہے۔عدنان کی تنظیم کو ترک کرنے والے ارکان دعویٰ کرتے ہیں کہ عدنان اپنے پیروکاروں کی برین واشنگ کرتے ہیں، انھیں بلیک میل کیا جاتا ہے اور جنسی غلام بنایا جاتا ہے اور ان میں اکثریت خواتین کی ہے۔

یاد رہے عدنان اور ان کی تنظیم کے متعدد ارکان کئی بار مختلف مواقع پر اسرائیل جا چکے ہیں اور وہاں ان کی اعلیٰ مذہبی اور سیاسی شخصیات سے ملاقات ہو چکی ہیں جبکہ بعض سینیئر اسرائیلی حکام عدنان سے ملنے ترکی بھی آ چکے ہیں۔ ایک برس پہلے عدنان کی سربراہی میں ایک وفد نے اسرائیلی پارلیمان کا دورہ کیا تھا جہاں اعلیٰ حکام سے ملاقات کا موقع ملا اور اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو سے خصوصی طور پر تعارف کرایا گیا تھا۔

ماضی میں بھی عدنان ان الزامات کو مسترد کر چکے ہیں اور اپنی ذات پر ان حملوں کو برطانوی خفیہ سروسز کی نگرانی میں ہونے والی بین الاقوامی سازش قرار دے چکے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

سی آئی اے کا دعویٰ ، سعودی عرب کے شہزادے نے دیا تھا جمال خشوگی کے قتل کاحکم

امریکی اخبار وشنگتن پوسٹ کے صحافی جمال خشوگی کی موت کو لیکر امریکی کی خفیہ ایجنسی نے بڑا دعوی کیا ہے۔ امریکہ کی سینٹرل انٹیلیجنس ایجنسی ( سی آئی اے ) نے کہا ہے کہ نے صحافی جمال خشوگی کے قتل کے احکام دئے تھے۔

بھارت۔ تائیوان ایس ایم ای ترقیاتی فورم تائیپی میں شروع 

vایم ایس ایم ای کے سکریٹری ڈاکٹر ارون کمار پانڈا 13 سے 17 نومبر 2018 تک چلنے والے بھارت 150 تائیوان ایس ایم ای ترقیاتی فورم کے اجلاس میں بھارتی وفد کی قیادت کررہے ہیں۔ فورم میں کل اپنے افتتاحی کلمات میں ڈاکٹر پانڈا نے کہا کہ بھارت میں ایم ایس ایم ای کی پوزیشن کلیدی اہمیت کی حامل ہے

شمالی کوریا کا میزائل پروگرام جاری ہے، رپورٹ

ایک امریکی ریسرچ آرگنائزیشن نے کہا ہے کہ اس نے شمالی کوریا کے میزائلوں سے متعلق ایسے 13 مقامات کا پتا لگایا ہے جن کا اعلان نہیں کیا گیا ہے۔ یہ اس بات کی تازہ ترین علامت ہے کہ شمالی کوریا کو اس کے جوہری ہتھیاروں سے دستبردار کرانے کی امریکی کوشش تعطل کا شکار ہو گئی ہے۔

غیر ملکی طلبہ کی امریکہ میں دلچسپی کیوں گھٹ رہی ہے؟

غیر ملکی طالب علموں کی آمد سے امریکی معیشت کو ہر سال42 ارب ڈالر کا فائدہ ہوتا ہے اور روزگار کی منڈی میں ساڑھے چار لاکھ ملازمتیں پیدا ہوتی ہیں۔ غیر ملکی طالب علم امریکی معیشت کے لئے بے بڑی اہمیت رکھتے ہیں۔

ہندوستان ڈیجیٹل فروغ اورترقی کے دورسے گذررہاہے ، سنگاپورمیں جاری فنٹیک فیسٹول میں وزیراعظم کاخطاب

وزیراعظم نے سنگاپورمیں جاری فنٹیک فیسٹول میں خطاب کرتے ہوئے کہاہے کہ یہ ہندوستان پر چھاجانے والے مالیاتی انقلاب اور ہندوستان کے 1.3 ارب عوام کی زندگی میں بہتر تبدیلیوں کا اعتراف ہے۔ہندوستان اور سنگاپور ہندوستانی اور آسیان ملکوں کے چھوٹے اور اوسط درجے کے کاروباری اداروں کوایک ...