قانون ساز کونسل کی تمام 13 سیٹوں پر بلامقابلہ انتخاب تقریبا طے

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th April 2018, 12:09 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی16 اپریل ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) یوپی قانون ساز کونسل کی تمام 13 سیٹوں کے لئے بلامقابلہ انتخاب تقریبا طے مانا جا رہا ہے۔ پیر کو نامزدگی کے آخری دن تک ہر سیٹ پر ایک ایک امیدوار نے کاغذات نامزدگی داخل کیا ہے ۔ قانون ساز کونسل انتخابات کے ریٹرننگ افسر اشوک کمار چوبے نے بتایا کہ ایوان بالا کی 13 نشستوں کے لئے اتنے ہی امیدواروں نے کاغذات نامزدگی داخل کیا ہے ۔حال میں اختتام پذیرراجیہ سبھا کے انتخابات کے برعکس قانون ساز کونسل انتخابات میں تمام 13 سیٹوں پر بلامقابلہ الیکشن طے ہو گیا ہے۔ ووٹنگ کے لئے 26 اپریل کی تاریخ مقرر کی گئی تھی۔ چوبے نے بتایا کہ 12 امیدواروں نے کاغذات نامزدگی داخل کر دیا ہے۔ ایک اور امیدوار نے 12 اپریل کو فارم بھرا تھا۔ داخل کئے گئے تمام نامزدگی کاغذات کی جانچ کل ہوگی۔ غور طلب ہے کہ قانون ساز کونسل ممبر اور سماج وادی پارٹی صدر اکھلیش یادو اور بی جے پی حکومت کے وزراء مہندر سنگھ اور محسن رضا سمیت 13 ارکان کی مدت آئندہ پانچ مئی کو ختم ہو رہی ہے۔جو 13 نشستیں خالی ہوں گی ان میں سات سپا کی، دو دو بی جے پی اور بی ایس پی کی اور ایک راشٹریہ لوک دل (آر ایل ڈی) کی ہے۔ ان میں ایک نشست سابق وزیر امبیکا چودھری کی بھی ہے۔ جو ان کے ایس پی سے بی ایس پی میں جانے کے بعد خالی ہوئی تھی۔ ایس پی صدر اکھلیش کے علاوہ پارٹی کے قومی سکریٹری راجندر چودھری، ایس پی ریاستی صدر نریش بہترین، عمر علی خاں،مدھو گپتا، رام سکل گوجر اور وجے یادو کی مدت ختم ہو رہی ہے۔ اس کے علاوہ بی ایس پی کے وجے پرتاپ اور سنیل کمار چتوڑ اور آر ایل ڈی کے واحد رکن چودھری مشتاق کی مدت بھی ختم ہو رہی ہے ۔ ایک امیدوار کو جتانے کے لئے پہلی ترجیح کے 29 ووٹوں کی ضرورت ہو گی۔ ریاست سے راجیہ سبھا کی 10 سیٹوں پر گزشتہ ماہ ہوئے انتخابات میں نو سیٹیں جیتنے والی بی جے پی ریاست کی 403 رکنی اسمبلی میں 324 اراکین اسمبلی کے دم پر کم از کم 11 نشستیں آسانی سے جیت سکتی ہے۔ بی جے پی نے ان میں سے ایک نشست اپنی اتحادی پارٹی ’ اپنا دل‘ کو دی ہے۔ بی جے پی نے وزیر مہندر سنگھ اور محسن رضا کے علاوہ ڈاکٹر سروجنی اگروال، بکل نواب، یشونت سنگھ، جے ویر سنگھ، ودیا سونکر، وجے بہادر پاٹھک، اشوک کٹاریا اور اشوک دھون کو بھی امیدوار بنایا ہے۔ گیارہویں سیٹ پر اپنا د ل آشیش سنگھ پٹیل نے نامزدگی داخل کی ہے ۔ 
 

ایک نظر اس پر بھی

مالیگاؤں ۲۰۰۸ ء بم دھماکہ معاملہ،زخمیوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کی گواہی کا سلسلہ جاری، ڈاکٹر سعید فیضی نے گواہی بھتہ پبلک ویلفئر فنڈ میں عطیہ کردیا

مالیگاؤں ۲۰۰۸ ء بم دھماکہ معاملے میں خصوصی این آئی اے عدالت میں بم دھماکوں میں زخمی ہونے والوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کی گواہی بددستور جاری ہے جس کے دوران آج مالیگاؤں کے مشہور و سینئر ڈاکٹر سعید فیضی کی گواہی عمل میں آئی

دواؤں کا معیار اور نوجوانوں کو روزگار انتہائی اہم مسئلہ: پروفیسر عبداللطیف، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس (اسٹوڈنٹس وِنگ) کی تشکیل

آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس کی ایک میٹنگ آج ابن سینا اکیڈمی، دودھ پور، علی گڑھ میں منعقد ہوئی، جس کی صدارت پروفیسر عبداللطیف (قومی نائب صدر، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس، اکیڈمک وِنگ) نے کی۔ جبکہ نظامت کے فرائض ڈاکٹر سنبل رحمن (قومی صدر، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس، خواتین ...

سکھ فسادات: میرے خلاف نہ کوئی ایف آئی آر اور نہ ہی چارج شیٹ، کمل ناتھ نے کہا،بی جے پی جھوٹ پھیلارہی ہے

مدھیہ پردیش کے وزیراعلیٰ کمل ناتھ نے 1984 کے سکھ فسادات پر اٹھ رہے سوالوں پر جواب دیاہے۔کمل ناتھ نے کہاہے کہ 1984 کے سکھ فسادات میں ان کے خلاف کوئی بھی ایف آئی آر یا چارج شیٹ نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ اب اس مسئلے کواٹھانے کے پیچھے صرف سیاست ہے۔انہوں نے کہاکہ جس وقت میں کانگریس کا جنرل ...

بریلی: ایک ساتھ 58 ہندو، مسلم اور سکھ لڑکیوں کی شادی

اجتماعی شادیوں کے بارے میں تو آپ بہت سن لیں گے لیکن یوپی کے بریلی میں ایک منفرد شادی دیکھنے کوملی ہے۔بریلی میں منعقد ایک پروگرام میں ایک ساتھ ہندو، مسلم اور سکھ کمیونٹی کی غریب لڑکیوں کی شادی کرائی گئی۔ایک ساتھ جب گھوڑی پر بیٹھ کر 58 دولہا نکلے تو ہر کوئی اس منفرد بارات کو ...

1984-1993-2002فسادات: اقلیتوں کو نشانہ بنانے میں سیاسی رہنماؤں اور پولیس کی ملی بھگت تھی : ہائی کورٹ

دہلی ہائی کورٹ نے 1984سکھ مخالف فسادات معاملے کے فیصلے میں دوسرے فسادات کولے کر بھی بے حد سخت تبصرہ کیاہے ۔ جسٹس ایس مرلی دھر اور جسٹس ونود کوئل کی بنچ نے پیر کو سجن کمار کو فسادات پھیلانے اور سازش رچنے کا مجرم قرار دیتے ہوئے عمر قید کی سزا سنائی ۔ کورٹ نے کہا کہ سال 1984 میں نومبر کے ...