کارکنوں کی گرفتاری ماؤنوازوں سے رابطہ کی بنیاد پرہوئی : مہاراشٹر پولیس

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 6th September 2018, 12:32 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی6ستمبر ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا ) مہاراشٹر پولیس نے بدھ کو سپریم کورٹ میں دعوی کیا کہ پانچ کارکنوں کو اختلاف کے ان کے نقطہ نظر کی وجہ سے نہیں بلکہ کالعدم بھاکپا سی پی آئی (ماؤنواز) سے ان کے تعلقات کے بارے میں ٹھوس ثبوت کی بنیاد پر گرفتار کیا گیا ہے۔چیف جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والے بنچ نے 29 اگست کو ان کارکنوں کو چھ ستمبر کو گھروں میں ہی نظربند رکھنے کا حکم دیتے وقت واضح الفاظ میں کہا تھا کہ اختلاف جمہوریت کا سیفٹی والو ہے۔ یہ بنچ جمعرات کو اس معاملے میں آگے کی شنوائی کرے گی۔کورٹ نے مؤرخ روملا تھاپر اور دیگر کی عرضی پر مہاراشٹر پولیس کو نوٹس جاری کیا تھا۔ اس درخواست میں بھیما۔کورے گاؤں تشدد کیس میں ان کارکنوں کی گرفتاری کو چیلنج کیا گیا تھا۔ریاستی پولیس نے اس نوٹس کے جواب میں ہی اپنا حلف نامہ عدالت میں داخل کیا ہے۔ پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ یہ کارکن ملک میں تشدد پھیلانے اور سیکورٹی فورسز پر گھات لگا کر حملہ کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔ریاستی پولیس کا کہنا ہے کہ اختلافی نقطہ نظر کی وجہ سے انہیں گرفتار کرنے کے شک کے ازالے کے لیے اس کے پاس کافی ثبوت ہیں۔مہاراشٹر پولیس نے اس کے ساتھ ہی یہ بھی سوال اٹھایا ہے کہ درخواست گزار روملا تھاپر، اور ماہر اقتصادیات پربھات پٹنائک اور دیویکا جین، سماجی علوم کے ماہر ستیش دیشپاڈے اورماہر قانون ماجہ دارووالا نے کس حیثیت سے درخواست دائر کی ہے اور کہا کہ وہ اس معاملے کی جانچ سے لاعلم ہیں۔مہاراشٹر پولیس نے 28 اگست کو کئی ریاستوں میں بائیں بازو کے کارکنوں کے گھروں پر چھاپے مارے تھے اور ماؤنوازوں سے رابطہ ہونے کے شک میں کم از کم پانچ کارکنوں کو گرفتار کیا تھا۔ ان گرفتاریوں کو لے کر انسانی حقوق کے کارکنوں نے زبردست مخالفت کی تھی۔پولیس نے اس چھاپے ماری کے دوران اہم تیلگو شاعر ورورا راؤ کو حیدرآباد اور ورنن گونسالوج اور ارون فریرا کو ممبئی سے گرفتار کیا گیا تھا جبکہ ٹریڈ یونین کارکن سدا بھاردواج کو فرید آباد اور شہری حقوق کے کارکن گوتم نولکھا کو دہلی سے گرفتار کیا گیا تھا۔پولیس نے گزشتہ سال 31 دسمبر کو پونے کے قریب منعقد ایلگار کونسل پروگرام کے بعد بھیما۔ کورے گاؤں میں بھڑکے تشدد کی تحقیقات کے سلسلے میں مذکورہ چھاپہ ماری کی تھی۔

ایک نظر اس پر بھی

اکھلیش یادو ’ٹائیگر بام‘ کی طرح ہیں : مایاوتی 

اتر پردیش کی سیاست کے دو بڑے قد آور ملائم سنگھ یادو اور مایاوتی جب دہائیوں پرانی دشمنی بھلا کر مین پوری کی ریلی میں ایک ہی مشترکہ اسٹیج پر آئے تو ان کی تصاویر خوب وائرل ہوئیں دیکھی گئیں۔ دشمنی بھلا کر دونوں رہنماؤں نے اب اتر پردیش میں بی جے پی کو روکنے کی کوشش کرنے کی ایک طرح سے ...

نریندر مودی کی سیکورٹی کے پیش نظر وارانسی سیٹ پر بدلی گئی امیدواروں کی نامزدگی کی جگہ

وزیر اعظم نریندر مودی کی سیکوریٹی کے پیش نظر وارانسی پارلیمانی سیٹ کے انتخابات کیلئے نامزدگی مقام میں تبدیلی کی گئی ہے۔پہلے ضلع انتظامیہ نے ایڈمرل کورٹ میں نامزدگی کا اہتمام کیا تھا، لیکن اتوار کو نامزدگی مقام بدل کر کلکٹریٹ واقع رائفل کر دیا گیا۔انتظامیہ کے فیصلے کے بعد اب ...

ایس پی ۔ بی ایس پی کے پاس کانگریس کے ساتھ اتحاد کے علاوہ کوئی چارہ نہیں:سلمان خورشید

کانگریس کے سینئر لیڈر سلمان خورشید نے لوک سبھا انتخابات کے بعد اپنی پارٹی کے ایس پی۔بی ایس پی۔آر ایل ڈی کے ساتھ اتحاد ہونے کو ناگزیر قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ انتخابی نتائج آنے کے بعد اتر پردیش کے اس اتحاد کے پاس کوئی اور چارہ نہیں ہوگا۔اتر پردیش کی کانگریس یونٹ کے دو بار چیف رہ ...

آئی این ایل ڈی کے سابق ممبر اسمبلی راؤ بہادر نے تھاما کانگریس کا دامن، دپیندر ہڈا کی نامزدگی میں ہوں گے شامل

جنوبی ہریانہ کے قدآور لیڈر اور انیلو کے سابق ممبر اسمبلی راؤ بہادر سنگھ نے اتوار کو کانگریس پارٹی کا دامن تھام لیا۔راؤ بہادر سنگھ نے آج بتایا کہ 22 اپریل کو روہتک میں ایم پی دپیندر ہڈا کی نامزدگی کے موقع پر وہ اپنے 5000 حامیوں کے ساتھ موجود رہیں گے۔کانگریس صدر راہل گاندھی اور ...