ضلع شمالی کینرا کی 6نشستوں کا انتخابی انجام بالیگا کالج کے اسٹرانگ روم میں مقید !

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th May 2018, 8:11 PM | ساحلی خبریں |

کمٹہ 13؍مئی (ایس اونیوز) ریاستی اسمبلی انتخابات میں پولنگ کا مرحلہ ختم ہونے کے بعد امیدوار بڑھتی ہوئی دل کی دھڑکنوں کے ساتھ نتائج کے انتظار میں بے قرار بیٹھے ہیں۔ 

ضلع شمالی کینرا کی 6نشستوں پر انتخاب لڑنے والے امیدواروں کے نتائج کو اپنے اندر چھپائے رکھنے والی ووٹنگ مشینوں کو کمٹہ کے ڈاکٹر اے وی بالیگا کالج کے اسٹرانگ روم میں قید کردیا گیا ہے اور باہر سے پولیس کا سخت پہرہ لگادیا گیا ہے۔کمپاؤنڈ کی دیواروں پر باڑھ لگادی گئی ہے اور مین گیٹ سے بغیر خصوصی اجازت کے کسی کو بھی اندر جانے کی اجازت نہیں ہے۔کالج کے اطراف میں نگرانی کے لئے پولیس کے علاوہ نیم فوجی دستوں کو بھی تعینات کیا گیا ہے۔ تمام امیدوار 15مئی کا سورج نکلنے اور ووٹنگ مشین کے اندر چھپے ہوئے ووٹوں کا کرشمہ دیکھنے کے لئے بے چین ہیں۔یوں کہیں تو بے جا نہ ہوگا کہ ان ووٹنگ مشینوں میں امیدواروں کا مستقبل بندہے جس سے ان کی نیندیں حرام ہوگئی ہیں۔کیونکہ اس بار یہاں پر جو الیکشن ہوا ہے اس میں امیدواروں کے درمیان زبردست مقابلہ دیکھنے کو ملا ہے۔ اس لئے جیتنے اور ہارنے والے امیدواروں کے بیچ ووٹوں کا فرق بہت زیادہ ہونے کی امید کم ہی ہے۔یہی وجہ کے عوام بھی یہ دیکھنے کے لئے بے قرار ہیں کہ کس کے گلے میں جیت کی وجہ سے پھولوں کی مالا پڑے گی اور کسے ہار کی وجہ سے شرمسار ہوناپڑے گا۔

سب سے اہم بات یہ ہے کہ یہاں کی تقریباً تمام نشستوں پر بی جے پی اور کانگریس کے درمیان ہی راست مقابلہ دیکھنے کو ملا ہے۔ دونوں پارٹیوں کے امیدوار اقلیتوں کے ووٹوں کی وجہ سے اپنے نتائج متاثر ہونے کا حساب و کتاب جوڑ رہے ہیں۔ اقلیتی علاقوں میں پولنگ کی شرح کو سامنے رکھتے ہوئے بی جے پی کی طرف سے اپنی جیت اور ہار کے بارے میں اندازہ لگایا جارہا ہے۔ جیسے بھٹکل کے شہری علاقے میں 49حلقے ایسے ہیں جہاں اقلیتوں کے ووٹ بہت زیادہ ہیں ، اسے سامنے رکھ کر بی جے پی والے اندازہ لگارہے ہیں کہ ان پولنگ اسٹیشنوں میں اقلیتوں کی طرف سے 50فیصد سے اگر کم پولنگ ہوتی ہے تو ا س کا بالواسطہ فائدہ بی جے پی کو ہوگا۔ اورکانگریس کی طرف سے یہ حساب لگایا جارہا ہے کہ اگر یہ شرح 50فیصد سے آگے نکلتی ہے تو پھراس کے لئے جیت کی راہ آسان ہوجائے گی۔اس طرح ہر علاقے میں سیاسی پنڈت اپنے اپنے طور پر حساب لگانے اور نتائج کی پیش گوئی کرنے میں مصروف ہیں ، جبکہ بالیگا کالج کے کمرے میں قید الیکٹرانک ووٹنگ مشینیں تمام راز اپنے اندر چھپائے بیٹھی ہیں کہ 15مئی کی صبح ہوتو پھر سب کا کچا چٹھا کھول کر رکھ دیں گی۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل :میڈیکل اور ڈینٹل کورسس کی فیس میں تین گنااضافہ :اے سی کے توسط سے وزیربرائے طبی تعلیم کو میمورنڈم

سال 2018-2019کے میڈیکل اور ڈینٹل کورسس کے لئے فیس میں تین گنا اضافہ کئے جانے سے غریب طلباکو  میڈیکل میدان سے محروم کئے جانے کا حکومت پر الزام عائد کرتے ہوئے اے بی وی پی بھٹکل شاخ  کے ممبران نے بھٹکل اسسٹنٹ کمشنر کی معرفت ریاستی وزیر برائے میڈیکل تعلیم کو میمورنڈم سونپا۔

بھٹکل بس اسٹائنڈ کی بوسیدہ عمارت منہدم : کوئی جانی یا مالی نقصان نہیں

بھٹکل کے لئے  ہائی ٹیک بس اسٹانڈ کی تعمیر جاری رہتے پیر کی دوپہر بھٹکل بس اسٹانڈ کی عمارت  منہدم ہوکر تاریخ کا حصہ بن گئی ۔ بارش کی وجہ سے عمارت کی دیواریں اور پتھر ایک ایک کرکے گرنے لگے  تھے پیر کی دوپہر عمارت پوری طرح منہدم ہوگئی ۔ پیشگی طورپر خستہ حال عمارت کی بوسیدگی دیکھتے ...

ساحل آن لائن کے مینجنگ ایڈیٹر کو صحافتی خدمات کے اعتراف میں ضلعی ایوارڈ : ایوارڈ یافتہ بھٹکل کے پہلے اور ضلع کے پہلے مسلم صحافی

ملک عزیز میں اپنی شناخت رکھنے والے ریاست کرناٹک ، بھٹکل کے  معروف آن لائن نیوز پورٹل ساحل آن لائن کے مینجنگ ایڈیٹر عنایت اللہ گوائی کو ضلعی سطح کے" جی ایس ہیگڈے اجّیبل ایوارڈ" سےاتوار 15 جولائی کو ضلع اُترکنڑا کے معروف سیاحتی مقامی گوکرن میں  اُترکنڑا  ورکنگ جرنلسٹ اسوسی ایشن ...