ضلع شمالی کینرا کی 6نشستوں کا انتخابی انجام بالیگا کالج کے اسٹرانگ روم میں مقید !

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th May 2018, 8:11 PM | ساحلی خبریں |

کمٹہ 13؍مئی (ایس اونیوز) ریاستی اسمبلی انتخابات میں پولنگ کا مرحلہ ختم ہونے کے بعد امیدوار بڑھتی ہوئی دل کی دھڑکنوں کے ساتھ نتائج کے انتظار میں بے قرار بیٹھے ہیں۔ 

ضلع شمالی کینرا کی 6نشستوں پر انتخاب لڑنے والے امیدواروں کے نتائج کو اپنے اندر چھپائے رکھنے والی ووٹنگ مشینوں کو کمٹہ کے ڈاکٹر اے وی بالیگا کالج کے اسٹرانگ روم میں قید کردیا گیا ہے اور باہر سے پولیس کا سخت پہرہ لگادیا گیا ہے۔کمپاؤنڈ کی دیواروں پر باڑھ لگادی گئی ہے اور مین گیٹ سے بغیر خصوصی اجازت کے کسی کو بھی اندر جانے کی اجازت نہیں ہے۔کالج کے اطراف میں نگرانی کے لئے پولیس کے علاوہ نیم فوجی دستوں کو بھی تعینات کیا گیا ہے۔ تمام امیدوار 15مئی کا سورج نکلنے اور ووٹنگ مشین کے اندر چھپے ہوئے ووٹوں کا کرشمہ دیکھنے کے لئے بے چین ہیں۔یوں کہیں تو بے جا نہ ہوگا کہ ان ووٹنگ مشینوں میں امیدواروں کا مستقبل بندہے جس سے ان کی نیندیں حرام ہوگئی ہیں۔کیونکہ اس بار یہاں پر جو الیکشن ہوا ہے اس میں امیدواروں کے درمیان زبردست مقابلہ دیکھنے کو ملا ہے۔ اس لئے جیتنے اور ہارنے والے امیدواروں کے بیچ ووٹوں کا فرق بہت زیادہ ہونے کی امید کم ہی ہے۔یہی وجہ کے عوام بھی یہ دیکھنے کے لئے بے قرار ہیں کہ کس کے گلے میں جیت کی وجہ سے پھولوں کی مالا پڑے گی اور کسے ہار کی وجہ سے شرمسار ہوناپڑے گا۔

سب سے اہم بات یہ ہے کہ یہاں کی تقریباً تمام نشستوں پر بی جے پی اور کانگریس کے درمیان ہی راست مقابلہ دیکھنے کو ملا ہے۔ دونوں پارٹیوں کے امیدوار اقلیتوں کے ووٹوں کی وجہ سے اپنے نتائج متاثر ہونے کا حساب و کتاب جوڑ رہے ہیں۔ اقلیتی علاقوں میں پولنگ کی شرح کو سامنے رکھتے ہوئے بی جے پی کی طرف سے اپنی جیت اور ہار کے بارے میں اندازہ لگایا جارہا ہے۔ جیسے بھٹکل کے شہری علاقے میں 49حلقے ایسے ہیں جہاں اقلیتوں کے ووٹ بہت زیادہ ہیں ، اسے سامنے رکھ کر بی جے پی والے اندازہ لگارہے ہیں کہ ان پولنگ اسٹیشنوں میں اقلیتوں کی طرف سے 50فیصد سے اگر کم پولنگ ہوتی ہے تو ا س کا بالواسطہ فائدہ بی جے پی کو ہوگا۔ اورکانگریس کی طرف سے یہ حساب لگایا جارہا ہے کہ اگر یہ شرح 50فیصد سے آگے نکلتی ہے تو پھراس کے لئے جیت کی راہ آسان ہوجائے گی۔اس طرح ہر علاقے میں سیاسی پنڈت اپنے اپنے طور پر حساب لگانے اور نتائج کی پیش گوئی کرنے میں مصروف ہیں ، جبکہ بالیگا کالج کے کمرے میں قید الیکٹرانک ووٹنگ مشینیں تمام راز اپنے اندر چھپائے بیٹھی ہیں کہ 15مئی کی صبح ہوتو پھر سب کا کچا چٹھا کھول کر رکھ دیں گی۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل کے مرڈیشور میں جانوروں سے بھری دو لاریوں پر نام نہاد گئو رکھشکوں کا حملہ ؛ لاری ڈرائیور اور کلینر کی بری طرح پیٹائی

یہاں مرڈیشور نیشنل ہائی وے پر جانوروں سے بھری دو لاریوں کو روک کر  لاری ڈرائیور اور کلینر کی بری طرح پیٹائی کرتے ہوئے دونوں لاریوں میں زبردست  توڑ پھوڑ کرنے کی واردات پیش آئی ہے، جس کے بعد لاریوں پر موجود  جانوروں کو راستے پر ہی آزاد چھوڑ کر  اُنہیں بھگائے جانے کی بھی اطلاع ...

بی جے پی نے جھوٹ اور غلط بیانی سے ہم کو شکست دی ہے: پرمود مادھو راج

غیر متوقع طور پر اپنے ہم جماعت اور بی جے پی امیدوار رگھو پتی بھٹ سے شکست کھانے کے بعد سابق کانگریسی ایم ایل اے پرمود مادھو راج نے کانگریسی کارکنان سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی نے منصوبہ بند طریقے سے جھوٹ اور غلط بیانی کے سہارے انہیں شکست دی ہے۔

بنٹوال میں ٹپر ٹرک کی ٹکر سے موٹر بائک سوار ہلاک۔ دوسراشدید زخمی

نیشنل ہائی وے 75پر ٹول ناکے کے قریب پیش آنے والے حادثے میں ایک ٹپر ٹرک نے موٹر بائک کو ٹکر ماردی جس کے نتیجے میں بائک سوار موقع پر ہی ہلاک ہوگیا جبکہ بائک کی پچھلی سیٹ پر سوار شخص شدیدزخمی ہوگیا اور اس کی حالت بہت ہی نازک بتائی جارہی ہے۔

موڈبیدری میں شراب کے نشے میں دھت ڈرائیور کی وجہ سے سیریل ایکسیڈنٹ۔تین زخمی 

گاندھی نگر میں ایک شراب کے نشے میں دھت ڈرائیور نے دو مقامات پر گاڑیوں کو ٹکر ماری جس کی وجہ سے تین افراد زخمی ہوگئے ۔ موصولہ رپورٹ کے مطابق کیرالہ کا رہنے والا ساجو کمارنشے کی حالت میں جیپ ڈرائیو کرتے ہوئے منگلورو سے موڈبیدری کی طر ف آرہا تھا۔