پی یو سی سال دوم کے امتحانی پرچے افشاء کرنے پر 5سال جیل اور5لاکھ روپے جرمانے کی سزا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th February 2018, 8:39 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو 10؍فروری (ایس او نیوز) ڈپارٹمنٹ آف پری یونیورسٹی ایجوکیشن سے جاری سرکیولر کے مطابق کرناٹکا ایجوکیشن ایکٹ 1983میں ترمیم کے بعد پری یونیورسٹی سال دوم کے پرچے افشاء (لِیک) کرنے والوں کے لئے اب 5سال تک کی جیل اور5لاکھ روپے جرمانے کی سزاتجویز کی گئی ہے۔

پی یو کالجس کے نام جاری سرکیولر میں کالج کے ذمہ داران کو ہدایت دی گئی ہے کہ اس نئی ترمیم اور سز ا کے بارے میں طلباء کے والدین کو آگاہ کریں اور بتائیں کہ طلباء سمیت جو کوئی بھی سال دوم کا امتحانی پرچہ لِیک کرنے کا مجرم پایا جائے گا اسے مذکورہ بالاسزا بھگتنی پڑے گی۔نئے قانون کے مطابق افشاء کیا گیا پرچہ خریدنے والابھی اسی سزاکا مستحق ہوگا۔

ڈپارٹمنٹ آف پی یو ایجوکیشن کی ڈائریکٹرسی شیکھانے کہا کہ:’’اس سے قبل پرچہ افشاء ہونے سے متعلق جو تشریح تھی وہ کچھ زیادہ واضح نہیں تھی۔ اب اس نئی ترمیم کے بعد اس کا دائرہ وسیع ہوگیا ہے ۔ اور پرچے کے سوالات کو امتحان سے قبل سوشیل میڈیا پر پھیلانا بھی پیپر لیک کرنے کے زمرے میں شامل کردیا گیا ہے۔ اب محکمہ اس قانون کو سختی کے نافذ کرے گا اور ایسے لوگوں کے خلاف کٹھن کارروائیاں کی جائیں گی۔‘‘

خیال رہے کہ سال 2016میں کیمسٹری کے پرچے ایک سے زائد بار افشاء کیے گئے تھے۔ اس طرح پیپر لیک ہونے سے تقریباً2لاکھ طلباء متاثر ہوئے تھے۔ اسی پس منظر میں 1983ایکٹ میں ترمیم کی گئی اور سزا کا دائرہ بڑھایا گیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

پانچ حلقوں کے لئے آج نامزدگیوں کی جانچ ہوگی

ریاست کے تین لوک سبھا اور دو اسمبلی حلقوں کے لئے ضمنی انتخابات کے لئے آج نامزدگیو ں کے داخلوں کی تکمیل کے ساتھ ہی تینوں اہم سیاسی جماعتوں کے امیدوار آمنے سامنے آگئے ہیں۔

حکومت گر جانے کے متعلق یڈیورپا کے بیان پر سدر امیا کا طنز، اقتدار کی حوس میں سابق وزیراعلیٰ اپنا دماغی توازن کھو بیٹھے ہیں: سدرامیا

سابق وزیراعلیٰ اور ریاستی بی جے پی صدر بی ایس یڈیورپا کا یہ دعویٰ کہ آج دوپہر تین بجے تک ریاست کی سیاست میں بہت بڑی تبدیلی ہونے والی ہے ایک بار پھر جھوٹا ثابت ہوا۔