پی یو سی سال دوم کے امتحانی پرچے افشاء کرنے پر 5سال جیل اور5لاکھ روپے جرمانے کی سزا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th February 2018, 8:39 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو 10؍فروری (ایس او نیوز) ڈپارٹمنٹ آف پری یونیورسٹی ایجوکیشن سے جاری سرکیولر کے مطابق کرناٹکا ایجوکیشن ایکٹ 1983میں ترمیم کے بعد پری یونیورسٹی سال دوم کے پرچے افشاء (لِیک) کرنے والوں کے لئے اب 5سال تک کی جیل اور5لاکھ روپے جرمانے کی سزاتجویز کی گئی ہے۔

پی یو کالجس کے نام جاری سرکیولر میں کالج کے ذمہ داران کو ہدایت دی گئی ہے کہ اس نئی ترمیم اور سز ا کے بارے میں طلباء کے والدین کو آگاہ کریں اور بتائیں کہ طلباء سمیت جو کوئی بھی سال دوم کا امتحانی پرچہ لِیک کرنے کا مجرم پایا جائے گا اسے مذکورہ بالاسزا بھگتنی پڑے گی۔نئے قانون کے مطابق افشاء کیا گیا پرچہ خریدنے والابھی اسی سزاکا مستحق ہوگا۔

ڈپارٹمنٹ آف پی یو ایجوکیشن کی ڈائریکٹرسی شیکھانے کہا کہ:’’اس سے قبل پرچہ افشاء ہونے سے متعلق جو تشریح تھی وہ کچھ زیادہ واضح نہیں تھی۔ اب اس نئی ترمیم کے بعد اس کا دائرہ وسیع ہوگیا ہے ۔ اور پرچے کے سوالات کو امتحان سے قبل سوشیل میڈیا پر پھیلانا بھی پیپر لیک کرنے کے زمرے میں شامل کردیا گیا ہے۔ اب محکمہ اس قانون کو سختی کے نافذ کرے گا اور ایسے لوگوں کے خلاف کٹھن کارروائیاں کی جائیں گی۔‘‘

خیال رہے کہ سال 2016میں کیمسٹری کے پرچے ایک سے زائد بار افشاء کیے گئے تھے۔ اس طرح پیپر لیک ہونے سے تقریباً2لاکھ طلباء متاثر ہوئے تھے۔ اسی پس منظر میں 1983ایکٹ میں ترمیم کی گئی اور سزا کا دائرہ بڑھایا گیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

ہمیں اپنی چھٹیوں سے لطف اندوزہونے دیجئے : جسٹس سیکری

کرناٹک میں اقتدار کو لے کر تنازعہ پر سماعت مکمل کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے آج کہا کہ اب ہمیں اپنی چھٹیوں سے لطف اندوز ہونے دیجئے۔ عدالت عظمیٰ میں تین ججوں کے ایک بنچ کی صدارت کر رہے جسٹس اے کے سیکری نے جب عجیب انداز میں یہ تبصرہ کیا اس وقت عدالتی کمرہ قہقہوں سے گونج اٹھا۔

کرناٹک سیاسی بحران: یہ آئین اور دستور کی جیت ہے :ملی کونسل

کرناٹک میں جاری سیاسی ہنگامہ آرائی پر آج پہلی مرتبہ ملک کی معروف تنظیم آل انڈیا ملی کونسل کے جنرل سکریٹری ڈاکٹر محمد منظور عالم نے اپنے ردعمل کا اظہا رکرتے ہوئے کہاکہ مرکز میں برسر اقتدار بی جے پی حکومت نے وہاں دستور کی دھجیاں اڑانے کی کوشش کی تھی

کرناٹک کے عوام نے تینوں پارٹیوں کو خوش کردیا

تمام ہنگامی حالات کا سامنا کرنے کے بعد کرناٹک کی سیاست ایک اطمینان بخش مرحلہ تک پہنچ گئی ہے ۔ ایڈی یورپا نے استعفیٰ دے دیا ، جے ڈی ایس اور کانگریس کی مخلوط حکومت کا بننا تقریباًطے ہے۔

بی جے پی کی حکومت گرنے کے بعد اب کمارا سوامی ہوں گے نئے وزیراعلیٰ، چہارشنبہ کو لیں گے حلف

بی جے پی رہنما بی ایس ایڈی یورپا کے استعفیٰ کے ساتھ ہی جے ڈی ایس کے ریاستی سربراہ ایچ ڈی کمارسوامی کی قیادت میں کرناٹک میں تین دن پرانی بی ایس ایڈی یورپا حکومت بلاخر آج ختم ہوگئی جب چیف منسٹر ایڈی یورپا نے اعلان کیا کہ وہ ایوان میں اکثریت کے امتحان میں سامنا نہیں کرگے بلکہ اس سے ...

ہندوستانی سیاست کے لئے تاریخی دن: سدارمیا، چندرابابو نائیڈو، ممتابنرجی اوردیگر لیڈروں نے جمہوریت کی جیت قرار دیا

کرناٹک اسمبلی میں اکثریت ثابت کرنے سے پہلے بی جے پی لیڈر یدی یورپا نے وزیراعلیٰ عہدہ سے استعفیٰ دے دیا۔ یدی یورپا کے استعفیٰ پر تمام لیڈروں نے ردعمل ظاہر کیا۔